Monday, 24 August 2009

ازبک سائنس دانوں نے سرطان کے سیلوں کی شناخت کا نیا طریقہ دریافت کیا ہے

0 comments
ازبک ریپبلک سینٹر برائے تشریحی امراضیات کے سائنس دان

تاشقند — فروری میں ازبک ریپبلک سینٹر برائے تشریحی امراضیات کے سائنس دانوں نے کینسر کی تشخیص کے لیے اپنے نئے دریافت کردہ طریقے کے لیے پیٹنٹ حاصل کیا ہے۔ الیکٹرانکس سائنسی تحقیقاتی انسٹی ٹیوٹ کے دو ملازمین وکٹر کراخمالیو اور ادخم پایزاییو، ایسے مادوں پر تحقیق کر رہے تھے جن سے خوردبینی اجسام کو زیادہ واضح بنایا جا سکتا ہے۔ ان کی تحقیق کے نتیجہ میں خوردبین کی ایک سلائیڈ بنائی گئی ہے جو ایسے مادے سے ڈھکی ہوئی ہے جس کے باعث اس پر رکھے گئے کینسر کے سیل چمکنا شروع ہو جاتے ہیں۔

اس چمک کی اصلیت کی وضاحت ہونا ابھی باقی ہے مگر یہ بات ابھی سے واضح ہو گئی ہے کہ اس مادے کی تخلیق کینسر کے سیلوں کی تشخیص کے لیے ایک بہترین بصری ذریعہ ہے۔ اس منصوبے کے سربراہ مالک عبداللہخداجیو کے مطابق اب یہ بات ممکن ہو سکے گی کہ کینسر کے سیلوں کو رسولی بننے سے پہلے ہی شناخت کر لیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ کینسر کے خلاف جنگ میں وقت کے خلاف جنگ جیتنا سب سے زیادہ اہم ہے۔ دوسرے تشخیصی طریقوں کے برعکس اس نئے طریقے کے لیے چند منٹ ہی درکار ہوں گے۔

اس نئے طریقے کی اثر پزیری کو پہلے ہی کئی مہمات میں خواتین کے گروہوں کے عمومی طبی معاینے کے نتائج سے پرکھ لیا گیا ہے۔

مہلک بیماریوں کی تشخیص اور علاج کے سلسلہ میں ازبکستان کی سائنسی کامیابی کے ایک اور واقعہ میں، ریپبلک آنکالوجی ریسرچ سینٹر میں ایک مرہم بنایا گیا ہے جو کہ پہلے اور دوسرے درجے کے کینسر کا کامیابی سے علاج کرتا ہے۔ سینٹر میں تحقیق کرنے والے دلنوزا اگزمخودجیو کے مطابق اس طرح کے مرہم ادویات میں پہلے سے موجود ہیں مگر چونکہ وہ بہت زیادہ زہریلے ہوتے ہیں اس لیے انہں علاج کے طور پر استعمال نہیں کیا جا سکتا تھا۔ تاہم یہ نیا مرہم جسے ازبکستان کے پہاڑوں میں موجود جڑی بوٹیوں سے بنایا گیا ہے، سینٹر میں مریضوں کے علاج کے لیے استعمال ہو رہا ہے اور ہو سکتا ہے کہ وہ اس بیماری کے علاج جیسے کیموتھراپی اور ریڈیوتھراپی کی جگہ حاصل کرلے۔

0 comments:

آپ بھی اپنا تبصرہ تحریر کریں

اہم اطلاع :- غیر متعلق,غیر اخلاقی اور ذاتیات پر مبنی تبصرہ سے پرہیز کیجئے, مصنف ایسا تبصرہ حذف کرنے کا حق رکھتا ہے نیز مصنف کا مبصر کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

اگر آپ کے کمپوٹر میں اردو کی بورڈ انسٹال نہیں ہے تو اردو میں تبصرہ کرنے کے لیے ذیل کے اردو ایڈیٹر میں تبصرہ لکھ کر اسے تبصروں کے خانے میں کاپی پیسٹ کرکے شائع کردیں۔