Wednesday, 2 September 2009

اگر پٹرول کی قیمتیں اسی طرح چڑھتی رہیں تو ؟

0 comments
فائل فوٹو

پاکستان میں ڈیزل کی قیمت کا تعین سرکار کے بجائے تیل فراہم کرنے والے نجی کمپنیاں کرتی ہیں

عالمی منڈی میں تیل کی قیمتوں میں ایک ماہ میں سات ڈالر فی بیرل اضافے کے بعد پاکستان میں حکومت نے پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اوسطاً آٹھ فیصد اضافہ کیا ہے۔

وزارت پٹرولیم کے ایک افسر کے مطابق خلیجی تیل مارکیٹ میں جولائی میں خام تیل کی فی بیرل قیمت تریسٹھ ڈالر تھی جبکہ اگست کے دوران یہ نرخ ستر ڈالر فی بیرل رہے۔

اسی تناسب سے پاکستان میں اسی خام تیل سے بننے والی مصنوعات کی قیمتوں میں رد و بدل کرتے ہوئے پیٹرول کی قیمت میں چار روپے اسی پیسے، مٹی کے تیل میں دو روپے انہتر پیسے اور ڈیزل کی قیمت میں چار روپے انسٹھ پیسے اضافہ کیا گیا۔

واضح رہے کہ ڈیزل کی قیمت کا تعین سرکار کے بجائے تیل فراہم کرنے والے نجی کمپنیاں کرتی ہیں۔ہوائی جہاز میں استعمال ہونے والے پیٹرول کی قیمت میں تین روپے چوہتر پیسے اضافہ کیا گیا ہے۔

تبدیلی کے بعدپیٹرول 65.26 روپے، ہائی اوکٹین 80.39 روپے، گاڑیوں میں استعال ہونے والا ڈیزل 66.00 روپے، ٹیوب ویلز میں استعمل ہونے والا ڈیزل 56.96 روپے اور ہوائی جہازوں میں استعمال ہونے والا پیٹرول 48.12 روپے ہے۔














0 comments:

آپ بھی اپنا تبصرہ تحریر کریں

اہم اطلاع :- غیر متعلق,غیر اخلاقی اور ذاتیات پر مبنی تبصرہ سے پرہیز کیجئے, مصنف ایسا تبصرہ حذف کرنے کا حق رکھتا ہے نیز مصنف کا مبصر کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

اگر آپ کے کمپوٹر میں اردو کی بورڈ انسٹال نہیں ہے تو اردو میں تبصرہ کرنے کے لیے ذیل کے اردو ایڈیٹر میں تبصرہ لکھ کر اسے تبصروں کے خانے میں کاپی پیسٹ کرکے شائع کردیں۔