Tuesday, 1 September 2009

Library Of Congress

0 comments
دنیا کی سب سے بڑی لائبریری "لائبریری آف کانگریس
(Library Of Congress)
ہے ، جو امریکہ ک دار الحکومتواشنگٹن ۔ڈی۔سی (Washington.D.C) میں واقع ہے ۔ یہ لائبریری سن 1800 عیسوی میں تقریبا 5000 ڈالرز کی لاگت سے قائم کی گئی۔ پھر جب 1814ء میں برطانوی فوجوں نے امریکہ پر حملے کے دوران اس علاقے میں آک لگا کر بڑی تباہی مچائی تو یہ پوری لائبریری جل گئی اور اس میں موجود کم و بیش 3000 کتابیں بھی ضائع ہو گئیں ۔ چند ماہ بعد امریکہ کے ایک سبق صدر تھامس جیفرسن نے حکومت کو پیشکش کی کہ وہ اپنی ایک ذاتی لائبریری کو اس کے متبادل کے طور پر وقف کرنے کو تیار ہیں ، جیفرسن کے پاس 6487 کتابیں تھیں جو اس نے 50 سال کے طویل عرصے میں جمع کی تھیں ، اس نے لائبریری کی جگہ کے ساتھ اس لائبریری میں موجود قومی مسودات اور ہر قسم کی سائنسی فیلڈ میں معاون و مددگار مواد بھی وقف کرنے کی پیشکش کی ۔ جیفسن کی لائبریری کا شمار امریکہ کی بڑے درجے کی لائبریریوں میں ہوتا تھا ۔
سن 1815 میں امریکی کانگریس نے جیفرسن کی پیشکش قبول کرلی ، اور 23950 ڈالرز کے عوض اسے خرید لیا ۔ اور اس فاونڈیشن کو امریکہ کی سب سے بڑی لائبریری کا درجہ دے دیا۔
جیفرسن کا خیال تھا کہ لائبریری کیلئیے دنیا کی ہر فیلڈ سے متعلق مواد ہونا چاہئیے ۔
Ainsworth
نامی شخص نے جیفرسن کے اس خیال کو حقیقت میں بدلنے کیلئیے بڑے پیمانے پر کوششیں کیں ۔ اور اس کی کوششوں کی بدولت یہ لائبریری ایک نیشنل انسٹیٹیوٹ بن گیا ۔
سپوفورڈ نامی ایک شخص جملہ حقوق پر مامور رہا ۔
اور ان دونوں کی کوششوں کی بدولت لائبریری نے بے شمار شہرت حاصل کی یہاں تک کہ جگہ کی کمی کا سامنا کرنا پڑا ۔
سپوفورڈ نے کانگریس کو لائبریری کیلئیے نئی عمارت پر رضامند کرلیا اور 1873 میں کانگریس نے نئی عمارت کے ڈیزائن کیلئیے مقابلہ کروایا ۔
سن 1886 میں بہت سی تجاویز اور کافی بحث و مباحثے کے بعد کانگریس نے لائبریری کیلئیے نئی عمارت تعمیر کرنے کا حکم جاری کردیا ۔ اور اس میں John L. Smithmeyer and Paul J. Pelz. کا بنایا ہوا ڈیزائن استعمال کرنے کو کہا گیا ۔
کانگریس کے اس حکم کی تعمیل میں کئی لوگوں نے سر توڑ محنت کی اور نومبر 1897ء کو اس نئی بلڈنگ کا افتتاح کیا گیا، جس میں اب یہ دنیا کی سب سے قیمتی ، بڑی ، مہنگی اور سب سے محفوظ لائبریری کی حیثیت سے سامنے آئی ۔ اور اس کا نام لائبریری آف کانگریس رکھا گیا ۔
اس لائبریری میں ایک سو تیس ملین کتابیں ، پرانے مسودات ، نقشے ، رسائل اور فوٹو وغیرہ ہیں ، اس کے علاوہ یہاں پر فلمز ، سانڈ شیٹس اور آڈیو وغیرہ کا ایک بڑا ذخیرہ موجود ہے ۔
لائبریری کی ساری چیزیں رکھنے کیلئیے الماریوں کی لمبائی 530 میل ہے ، بلڈنگ میں چار منزلیں ہیں اور اسکے ساتھ تہـ خانہ بھی ہے ۔ یہاں پر 460 زبانوں کی کتابیں موجود ہیں ( جن میں اردو بھی ہے ) ۔ اس کا رابطہ دنیا کی تمام مشہور و معروف لائبریریوں سے ہے ۔
لائبریری آف کانگریس میں بہت سی نایاب کتب اور قدیم نسخے ہیں ۔ اس میں پندرہویں صدی میں امریکہ میں چھپنے والی سب سے پرانی کتاب "دی بے پاسلم" بھی موجود ہے ۔ یہاں کی سب سے چھوٹی کتاب "اولڈ کنگ کول" (Old King Cole) ہے ۔ جس کا سائز 1/25 ٭1/25 انچ ہے ، اس کے صفحات کو کسی باریک چیز جیسے سوئی وغیرہ سے کھولا جاتا ہے ۔ یہاں پر سب سے بڑی کتاب Birds Of America ہے جو تقریبا ایک میٹر اونچی ہے ۔ سب سے پرانی تحریر Cunci Form Tavlets پر ہے جو 2024 قبل مسیح میں لکھا گیا۔ لائبریری میں موجود سب سے پرانے اخبار Mercurius Publicas کی ایک کاپی بھی ہے جو 29 دسمبر 1659 میں چھپی تھی ۔

دنیا کی سب سے بڑی لائبریری (تصاویر میں)




























0 comments:

آپ بھی اپنا تبصرہ تحریر کریں

اہم اطلاع :- غیر متعلق,غیر اخلاقی اور ذاتیات پر مبنی تبصرہ سے پرہیز کیجئے, مصنف ایسا تبصرہ حذف کرنے کا حق رکھتا ہے نیز مصنف کا مبصر کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

اگر آپ کے کمپوٹر میں اردو کی بورڈ انسٹال نہیں ہے تو اردو میں تبصرہ کرنے کے لیے ذیل کے اردو ایڈیٹر میں تبصرہ لکھ کر اسے تبصروں کے خانے میں کاپی پیسٹ کرکے شائع کردیں۔