Monday, 31 August 2009

India is progressing

0 comments

اک ماں

0 comments
اک ماں

اپنے لال کی آس میں

جانے بیٹا کب گھر آئے

راتیں یونہی ڈھل جاتی ہیں

بوڑھی آنکھیں جل جاتی ہیں

بھید نہیں کھلتا ہے ‘آخر

بیٹے دیر سے کیوں آتے ہیں

مائیں جاگتی کیوں رہتی ہیں

ان کی آنکھیں کیوں بہتی ہیں؟

ماں کی عظمت

0 comments
ماں کی عظمت

میری ماں کی عظمت مِرے روبرو ہے
اسی کی محبت فقط جستجو ہے
اگر کوئی رشتہ ہے چاہت کے قابل
فقط میری ماں ہے یہی آرزو ہے
زمیں پر بھی تو ہے فلک پر بھی تو ہے
میرے دل کے محمل میں تو کُو بکُو ہے
تیری ہر خوشی پر میں صد بار صدقے
تو ہی تو ہے محفل تو ہی گفتگو ہے
تیرا ساتھ ہر دم رہے ہر قدم پر
یہی آرزو ہے یہی آرزو ہے

اےماں۔۔۔!!

0 comments

بڑا محروم موسم ہےتمہاری یاد کا اے ماں
نجانےکس نگر کو چھوڑ کر چل دی ہو مجھ کو ماں!
شفق چہروں میں اکثر ڈھونڈتی رہتی ہوں ، میں تم کو
کسی کا ہاتھ سر پہ ہو ،تو لگتا ہےتم آئی ہو
کوئی تو ہو ، جو پوچھے،کیوں ترےاندر اداسی ہے
مرےدل کےگھروندےکی صراحی کتنی پیاسی ہے
مجھےجادوئی لگتی ہیں تمہاری، قربتیں اب تو
مری یادوں میں رہتی ہیں تمہاری شفقتیں اب تو
کبھی لگتا ہے،خوشبو کی طرح مجھ سےلپٹتی ہو
کبھی لگتا ہےیوں، ماتھے پہ بوسےثبت کر تی ہو
کوئی لہجہ، ترےجیسا، مرےمن میں اتر جائے
کوئی آواز، میری تشنگی کی گود ،بھر جائے
کوئی ایسےدعائیں دےکہ جیسےتان لہرائے
کسی کی آنکھ میں ، آنسو لرزتےہوں ، مری خاطر
مجھےپردیس بھی بھیجے، لڑے بھی وہ مری خاطر
مگر جب لوٹتی ہوں ساری یادیں لےکےآنچل میں
تو سایہ تک نہیں ملتا کسی گنجان بادل میں
کوئی لوری نہیں سنتی ہوں میں اب دل کی ہلچل میں
تمہاری فرقتوں کا درد بھرلیتی ہوں کاجل میں
کہیں سےبھی دعاؤں کی نہیں آتی مجھےخوشبو
مری خاطر کسی کی آنکھ میں، اترےنہیں آنسو
محبت پاش نظروں سےمجھےتم بھی تکا کرتیں
مدرز ڈے پر کسی تحفےکی مجھ سےآرزو کرتیں
سجاکر طشت میں چاندی کےتم کو ناشتہ دیتی
بہت سےپھول گلدا نوں میں،لا کر میں سجادیتی
کوئی موہوم سا بھی سلسلہ، باقی کہاں باہم
کہ اب برسیں مرےنیناں تمہاری دید کو چھم چھم
دلاؤں ایک ٹوٹےدل سےچاہت کا یقیں کیسے
مری ماں آسمانوں سےتجھےلاؤں یہاں کیسے
نجانےکون سی دنیا میں جا کےبس گئی ہو ماں
بڑا محروم موسم ہےتمہاری یاد کا،
اےماں۔۔۔!!

ماں کے لیے

0 comments
آنکھ سے اوجھل جو تیری ذات ہو گئی
اک غمِ پیہم سے ملاقات ہو گئی

لمس تیرے ہاتھ کا سر پر مرے تو ہے
تو نظر آتی نہیں کیا بات ہو گئی

تیری نظر جو پیار سے اُٹھتی مری طرف
یوں لگتا جیسے کوئی مناجات ہو گئی

کوئی اس دنیا میں مجھ سے یہ نہیں کہتا
اب لوٹ آئو گھر کو بہت رات ہو گئی

دامن جو تیرا ہاتھ سے چھُوٹا تو یوں لگا
خالی سی جیسے ساری کائنات ہو گئی

لکھا تو کچھ نہ جا سکا ماں کے لیے حَفِی
نوکِ قلم سے اشکوں کی برسات ہو گئی

مری ماں

0 comments
جنت نظیر ہے مری ماں

رحمت کی تصویر ہے مری ماں
میں ایک خواب ہوں زندگی کا

جس کی تعبیر ہے مری ماں

زندگی کے خطرناک راستوں میں

مشعلِ راہ ہے مری ماں

میرے ہر غم ، ہر درد میں

ایک نیا جوش ، ولولہ ہے مری ماں

میری ہر ناکامی وابستہ مجھ سے ہے

میری جیت میری کامیابی کا راز ہے مری ماں
چھپا لیتی ہے زخم کو وہ مرہم کی طرح

میرے ہر درد ہر غم کی دوا ہے مری ماں

دنیا میں نہیں کوئی نعم البدل اس کا

ممتا میں ہے مکمل فقط مری ماں

ماں

0 comments
موت کی آغوش میں جب تھک کے سو جاتی ہے ماں

تب کہیں جا کر تھوڑا سکوں پاتی ہے ماں

روح کے رشتوں کی یہ گہرائیاں تو دیکھئے

چوٹ لگتی ہے ہمارے اور چلاتی ہے ماں

پیار کہتے ہیں کسے اور مامتا کیا چیز ہے؟

کوئی ان بچوں سے پوچھے جن کی مر جاتی ہے ماں

زندگانی کے سفر میں گردشوں کی دھوپ میں

جب کوئی سایہ نہیں ملتا تو یاد آتی ہے ماں

کب ضرورت ہو مری بچے کو، اتنا سوچ کر

جاگتی رہتی ہیں آنکھیں اور سو جاتی ہے ماں

بھوک سے مجبور ہو کر مہماں کے سامنے

مانگتے ہیں بچے جب روٹی تو شرماتی ہے ماں
جب کھلونے کو مچلتا ہے کوئی غربت کا پھول

آنسوؤں کے ساز پر بچے کو بہلاتی ہے ماں

لوٹ کر واپس سفر سے جب بھی گھر آتے ہیں ہم

ڈال کر بانہیں گلے میں سر کو سہلاتی ہے ماں

ایسا لگتا ہے جیسے آگئے فردوس میں

کھینچ کر بانہوں میں جب سینے سے لپٹاتی ہے ماں

دیر ہو جاتی ہے گھر آنے میں اکثر جب کبھی

ریت پر مچھلی ہو جیسے ایسے گھبراتی ہے ماں

شکر ہو ہی نہیں سکتا کبھی اس کا ادا مرتے مرتے بھی دعا جینے کی دئے جاتی ہے ماں

حروفِ ابجد

0 comments
حروف تہجی سے مراد وہ علامتیں ہیں جنہیں لکھنے کے لیے استعمال کیا جاتا ہے۔ اکثر زبانوں میں یہ مختلف آوازوں کی علامات ہیں مگر کچھ زبانوں میں یہ مختلف تصاویر کی صورت میں بھی استعمال کیے جاتے ہیں۔ بعض ماہرینِ لسانیات کے خیال میں سب سے پہلے سامی النسل یا فنیقی لوگوں نے انہیں استعمال کیا۔ بعض ماہرین ان کی ابتداء کو قدیم مصر سے جوڑتے ہیں۔ اردو میں جو حروف استعمال ہوتے ہیں وہ عربی سے لیے گئے ہیں۔ جنہیں حروف ابجد بھی کہا جاتا ہے۔ ان کی پرانی عربی ترتیب کچھ یوں ہے۔ ابجد ھوز حطی کلمن سعفص قرشت ثخذ ضظغ۔ انہیں حروفِ ابجد بھی کہتے ہیں۔


علمِ جفر میں ان کے ساتھ کچھ اعداد کو بھی منسلک کیا جاتا ہے۔ جو کچھ یوں ہیں۔

ا = 1
ب = 2
ج = 3
د = 4
ھ = 5
و = 6
ز = 7
ح = 8
ط = 9
ی = 10
ک = 20
ل = 30
م = 40
ن = 50
س = 60
ع = 70
ف = 80
ص = 90
ق = 100
ر = 200
ش = 300
ت = 400
ث = 500
خ = 600
ذ = 700
ض=800
ظ =900
غ=1000

اس طریقہ سے اگر بسم اللہ الرحمٰن الرحیم کے اعداد شمار کیے جائیں تو786 بنتے ہیں۔ بعض اھلِ علم ء کو بھی ایک الگ حرف مانتے ہیں۔


کون کہتا ہے کہ عورت بےوقوف ہوتی ہیں??

0 comments

Falls Incident

0 comments

تخلیق انسان

0 comments
نظریہ اِرتقاء:



ماحول کے مطابق حیاتی اجسام میں مسلسل تبدیلی اپنی بقاءکے لیے۔

ڈارون نے اپنے نظریے میں انسان کی بات نہیں کی تھی مگر بہرحال اُس کا نظریہ ہر جاندار شئے پہ لاگو ہوتا ہے بشمول بنی نوع انسان ک
ڈارون کے نزدیک تمام جاندار اپنی ہیت کو تبدیل کرتے رہتے ہیں اپنے اطراف کے ماحول میں زندہ رہنے کے لیے۔ مثال کے طور پر کہا جاتا ہے کہ بعض پانی کے جانور کروڑوں سال پہلے چرندے تھے مگر کسی وجہ سے اُن کو اپنی زندگی طویل عرصہ تک پانی میں گزارنی پڑی تو ان کے پاﺅں غائب ہو گئے اور وہ مچھلی کی طرح کی شکل اختیار کر گئے۔ اسی طرح مچھلیوں کو جب زمین پر زندگی گزارنی پڑی تو ان کے پاؤں نکل آئے اور ان کی شکل پہلے مگرمچھ اور پھر بعد میں دیگر جانداروں کی سی ہو گئی۔
1859ء میں چارلس ڈارون نامی ایک شخص نے ایک انتہائی خطرناک نظریہ پیش کیا جسے 'نظریہ ارتقاء' کہا جاتا ہے۔ اگراس کے نظریہ ارتقاء کو ایک جملے میں لکھا جائے تو ہم کہیں گے:
Name:  1.jpg Views: 16 Size:  32.9 کیلو بائٹس

Name:  2.jpg Views: 17 Size:  81.2 کیلو بائٹس

نظریہ ارتقاء کی ایک تصویر

یعنی اپنی بقاء کے لیے قدرت ﴿اللہ تعالیٰ نے نہیں) نے انکی جون تبدیل کر دی۔ اسی طرح انسان کے بارے میں نظریہ ارتقاء کے حامی کہتے ہیں کہ انسان بن مانس کی نسل سے تھا جو اپنے ماحول کی وجہ سے تبدیل ہو کر ویسا ہو گیا جیسا کہ آج ہے۔ چمپینزی جیسے چو پائے سے دو پیروں پر انسان اس لیے کھڑاہو گیا کہ وہ اُس زمانے میں اور اُس وقت کے ماحول کے مطابق اُس کی بقاء کے لیے ضروری تھا۔ سننے میں تو یہ نظریہ بڑا دلچسپ ہے اور اسی لیے اس پر سینکڑوں کہانیاں اور کتابیں لکھی جچا چکی ہیں اور متعدد فلمیں بن چکی ہیں۔ مگر حقیقت اس کے قطعی برعکس ہے۔

Click image for larger version  Name: 3.jpg Views: 3 Size: 116.2 کیلو بائٹس ID: 67

نظریہ ارتقاء کی ایک اور تصویر

ہمارا ایمان ہے کہ اللہ تعلٰی نے انسان کو بلکل اسی حلیےء میں بنایا ہے جس میں وہ آج موجود ہے۔ دہریوں کہ نظریے اور ایمان کے بیچ سائنس حائل ہے جو اپنے نت نئے انکشافات سے ایمان کی تائید کرتی ہے۔ نظریہ ارتقاء کے حامی ابھی بھی اس بات کا جواب نہیں دے سکتے کے حیات کی ابتداء کیسے ہوئی؟ جب بگ بینگ سے کائنات وجود میں آئی تو اُس میں جاندار مادّہ تو کوئی تھا نہیں۔ تو پھر زندگی کی ابتداء کیونکر ہوئی؟

کچھ کہتے ہیں کہ کسی کیمیائی عمل سے ایسا ہوا۔ تو اگر کیمیا گری سے زندگی وجود میں آ سکتی تو سائنس اتنی ترقی کرنے کا بعد علم کیمیا سے کو ئی معمولی نوعیت کا جاندار یا کیڑا پیدا کر کے کیوں نہیں دکھا دیتی؟ بہرحال بات ڈارون کے مشہور زمانہ اور ساتھ ہی انتہائی متنازع نظریہ ارتقاء کی ہو رہی ہے۔ جو صرف وہاں سے شروع ہوتا ہے جہاں زندگی پہلے سے ہی موجود تھی۔ تفصیلی بحث میں جائے بغیر ہم انسانوں کے ارتقاء کی طرف آتے ہیں۔ یعنی بن مانس سے مانس بننے کا سفر۔
Name:  4.jpg Views: 16 Size:  17.8 کیلو بائٹس
نظریہ ارتقاء کی ایک خیالی تصویر


موجودہ دور کے انسان کو سائنس ہوموسیپینز (Homo Sapeins) کہتی ہے۔ اس سے پہلے کی نسل کو ہومو ایریکٹس (Homo Erectus) کہتے ہیں۔ علم الانسان یا بشریات کے ماہر یعنی اینتھروپولوجسٹ (Anthropologists) اپنی تما م تر کوشش کے بعد بھی ہوموسیپینزاور ہومو ایریکٹس کے درمیان کوئی جوڑ پیدا کرنے میں ناکام رہے ہیں۔ آج تک دنیا بھر میں زمین کی کھدائی سے کوئی ایک بھی ہڈی ایسی نہیں ملی جو ہوموسیپینزاور ہومو ایرکٹس کے درمیان کے دور کو ثابت کرتی ہو۔

اس بات کو ہم مسِنگ لنکِ (Missing Link) کا نام دیتے ہیں۔ اِرتقاءکے مطابق ایک نوع کو دوسری نوع میں تبدیل ہونے کے لیے ضروری ہے کہ کوئی ایسا لمحہ آجائے جس میں اُن کی باہمی نسل اگے نہ بڑھ سکے۔ اگر بندر سے انسان کو الگ ہونا تھا توتاریخ میں کوئی ایسا وقت ضرور آیا ہوگا جب انسان نے اپنے جد امجد کو الوداع کہا ہوگا۔ وہ وقت کب آیا؟ کتنی خاموشی سے آیا؟ کسی کو آج تک خبر بھی نہ ہوئی؟ گمان ہے کہ بن مانس سے انسان کے الگ ہونے کا وقت آج سے 50 یا 70 لاکھ سال پہلے آیاہوگا۔ اس دور سے لے کر 15 لاکھ سال پہلے تک کئی قسم کے ادوار انسانی ارتقاء کی کہانی سناتے ہیں اور پھر ہومو ایریکٹس (Homo Erectus) کا دور آیا جو 2 سے 3 لاکھ سال پہلے بڑے پرُاسرار انداز میں غائب ہوگیا۔ اور پھراچانک ہی 1.5 لاکھ سال پہلے کہیں سے ہوموسیپینز(Homo Sapeins) کا وجود آگیا۔

Name:  5.jpg Views: 14 Size:  72.0 کیلو بائٹس


ہومو ایریکٹس کے بارے میں قیاس ہے کے وہ تقریباً انسان تھے



ہومو ایریکٹس اور ہوموسیپینز کے درمیان صرف 50 ہزار سال کا وقفہ ہے لیکن دونو ں کا خاص اَختلاف یہ ہے کے دونوں کے دماغ کے حجم میں بہت بڑا فرق ہے (تقریباً ڈیڑھ گنا) ۔اس کے علاوہ دونوں بلکے جتنے بھی اعلیٰ حیوان (Primates) موجود ہیں ان کے تولیدی عمل میں بھی بہت ہی خاص اور نما یاں فرق پایا جاتاہے جو کہ صرف اور صر ف انسانو ں کا خاصہ ہے۔ پھر ہوموسیپینز یا انسان کے جسم کے بالوں کو کیا ہوا؟ کہاں گئے؟ کیسے جھڑگئے؟ صرف دو وجہ ہو سکتی ہیں جسم کے بال گر جانے کی ۔

انسان کی ارتقاءکافی زمانے تک پانی میں ہوئی یا پھر

وہ عرصہ دراز تک کسی بہت ہی گرم جگہ رہتا رہا۔



Name:  6.jpg Views: 15 Size:  61.5 کیلو بائٹس

ڈارونزم کے ماننے والوں کے والد بزرگوار

لمبے عرصے تک پانی میں رہنے کی تو وجہ کچھ کچھ سمجھ آتی ہے کیونکہ انسان کا بچہ پیدائشی طور پر پانی میں سانس روک لینے اور کسی حد تک تیرنے کی قدرتی صلاحیت رکھتا ہے۔ لیکن یہ شکم مادر میں پروان چڑھنے کانتیجہ بھی ہو سکتا ہے۔

مگر اس کے علاوہ:

انسانی کھال کے نیچے چربی کی تہہ کا ہونا۔

بال کا نہ ہونا۔

نرخرے اور زبان کی بناوٹ۔

نمکین پسینے کے غدود

جلد کا نرم ہونا

اس بات کی غمازی کرتے ہیں کے انسان کا پانی سے کوئی رشتہ کبھی ضرور رہا ہے۔ لیکن کب اور کہاں یہ دور گزرا اس کے بارے میں مکمل سکوت ہے۔ کیا اسی لئے ہومو ایریکٹس اور ہوموسیپینز کے درمیان کا جوڑ غائب ہے کیونکہ وہ کہیں پانی میں دبا ہوا ہے۔ (واللہ عالم)
ڈارون کے نزدیک تمام جاندار اپنی ہیت کو تبدیل کرتے رہتے ہیں اپنے اطراف کے ماحول میں زندہ رہنے کے لیے۔ مثال کے طور پر کہا جاتا ہے کہ بعض پانی کے جانور کروڑوں سال پہلے چرندے تھے مگر کسی وجہ سے اُن کو اپنی زندگی طویل عرصہ تک پانی میں گزارنی پڑی تو ان کے پاﺅں غائب ہو گئے اور وہ مچھلی کی طرح کی شکل اختیار کر گئے۔ اسی طرح مچھلیوں کو جب زمین پر زندگی گزارنی پڑی تو ان کے پاؤں نکل آئے اور ان کی شکل پہلے مگرمچھ اور پھر بعد میں دیگر جانداروں کی سی ہو گئی۔
Name:  7.jpg Views: 15 Size:  82.3 کیلو بائٹس

Name:  8.jpg Views: 15 Size:  51.7 کیلو بائٹس


بہت سے جانور زمانہ قدیم سے اوزار استعمال کرتے چلے آرہے ہیں جیسا کہ مصری گدھ کا پتھر پھینک کہ شترمرغ کے انڈے توڑنا۔ بحر اوقےانوس کا اوُد بلاﺅ بھی ایسا ہی کر تاہے۔ بعض ہدہد کانٹوں سے درختوں میں موجود کیڑوں کو کرید کرید کر کھاتے ہیں۔ کنگاروُ کا اتنا ہنر مند ہونا بھی سب کے علم میں ہے مگر وہ پھر بھی اوزاراستعمال نہیں کرتا۔ ایسی دیگر کئی مثالیں موجود ہیں بہت سے جانورں کے متعلق مگر انہوں نے اوزار کے استعمال سے کچھ بھی نہیں سیکھا۔ لاکھوں سال سے ایک ہی طرح اپنے اپنے اوزار استعمال کر رہے ہیں اور بس۔

ارتقاء پسند خود یہ کہتے ہیں کے ارتقاء کا عمل انتہائی سست رفتار ہوتا ہے کیونکہ قدرت جو جاندار کے لیے بہتر ہوتا ہے وہ بڑے آہستہ انداز میں پسند کرتی ہے اور پھر اُس تبدیلی کو نسل در نسل آگے بڑاہتی ہے۔ ایک لاکھ سال میں کچھ نیا بن جانا ایسا ہی ہے جیسے کوئی شےء اچانک ہی ہو گئی ہو۔ تو پھر ہومو سیپینزاور ہومو ایریکٹس کے درمیان کے ایک لاکھ سے بھی کم عرصے میں انسان کا دماغ بن جانا، بال گر جانا، تولید کا عمل بدل جانا، انسان کا بولنا شروع کردینا (جبکہ وہ انتہائی خطرناک ہوتا ہے کھاتے وقت) اورکھانا چبا کے کھانا شروع کر دینا کیسے ہو گیا؟

اس کے علاوہ ارتقاء پسند یہ بھی مانتے ہیں کے قدرت وہی کچھ دیتی ہے جسکی اُس ماحول میں ضرورت ہو تو پھر ہم کو قدرت نے (اللہ نے نہیں) اِتنا اعلیٰ دماغ کیوں دیا جو آج اتنی ترقی کے بعد بھی ہمارے استعمال سے کہیں زیادہ کارکردگی کا حامل ہے۔ اتنا زبردست دماغ بغیر کسی ضرورت کے دے دیا؟ دنیا کی ہر شےءمیں ایک تناسب ہے۔ ہرن اور چیتے کی مثال لے لیں۔ چیتے کو خاص طور پر ہرن کے شکار کے لئے بنایا گیا ہے اور ساتھ ہی ہرن کو چیتے سے بچنے کی بھرپور صلاحیت دی گئی ہے۔ موت وزیست کا کھیل یہ دونوں ازل سے کھیلتے چلے آرہے ہیں مگرپھربھی دونوں کی نسلیں پروان چڑھتی رہی۔ ہرن کو اگرچہ مرنا ہوتا ہے مگر اس کی پیدائش کا تناسب چیتے سے کہیں زیادہ ہے۔

Name:  10.jpg Views: 14 Size:  12.2 کیلو بائٹس

سب سے بڑااور اہم سوال دہریوں کے لیے:

انسان کے بچے کی پیدائش کے وقت اس کا دماغ ایک بالغ دماغ کا چوتھائی ہوتا ہے۔ لیکن بڑے دماغ کی جگہ کے لئے بچے کی کھو پڑی تنا سب کے لحاظ سے اُس کے حجم سے کہیں زیادہ بڑی ہوتی ہے۔ اور یہ تناسب انسان میں سب پرائیمیٹس سے زیادہ ہے۔ تو جب قدرت نے (اللہ نےنہیں) ماحول کے مطابق یہ کھوُپڑی اتنی بڑی بنائی تو بقایا انسانی اعضاء اسی تناسب سے کیوں نہیں بنائے؟ اور بقایا جسمانی حصوں کا تناسب اگر کم رکھا تو دماغ کے حجم کو اتنا بڑا کیوں بنایا۔ آخر اس کی ضرورت کیا تھی؟ اس کھوپڑی کے حجم ہی کی وجہ سے کتنی مائیں لاکھوں سالوں سے اپنی جانوں پر کھیلتی چلی آ رہی ہیں۔

پتھر کے زمانے کے اوزار
تو کیا واقعی قدرتی انتخاب نے نظریہ ضرورت کے تحت دع لاکھ سال پہلے انسان کو کروڑوں سال اگے کی چیز دے دی؟ قدرتی انتخاب سے اتنی بڑی اور خوبصورت غلطی کیسے ہو سکتی ہے؟

جواب بڑاسادہ سا ہے: اللہ تعلیٰ نے انسان کا دماغ بہت ہی اعلیٰ معیار کا بنایا ہے اور اُس نے جس طرح چاہا ویساہی بنایا ہے۔ اور اسکی ہر تخلیق کے پیچھے حکمت ہے۔ اُس کی دانائی ہماری ادنیٰ عقل سے ما ورا ہے۔

"تمہارا آقا اللہ ہے، جس نے آسمانوں اور زمین کو 6 دنوں میں بنایا پھر تخت پر بیٹھ گیا، وہ دن کو رات سے ڈھانپتا ہے جو اس کے پیچھے لپکی چلی آتی ہے، اور سورج اور چاند اور ستارے اس کے حکم میں بندھے ہیں۔ سنو! بنانا اور حکم دینا اُسی کا کام ہے۔ کیا برکت والا ہے اللہ سارے جہاں کا آقا!" (اعراف: 45)


تخلیق آدم:

"اور جب تیرے رب نے فرشتوں سے کہاکہ "میں زمین میں ایک فرمانروا بنانے والا ہوں" تو انہوں نے کہا "کیا تو وہاں اسے بنائے گا جو اس میں فساد پھیلائے گا اور خون بہائے گا جبکہ ہم تیری تعریف میں لگے ہیں اور تیری پاکیزگی کو عیاں کرتے ہیں؟" اس نے کہا " میں جانتا ہوں جو تم نہیں جانتے" (30) اور اس نے آدم کو سب (چیزوں کے) نام سکھا دیئے پھر انہیں فرشتوں کے سامنے پیش کیا اور کہا "مجھے ان کے نام بتاﺅ اگر تم سچے ہو" (31) وہ کہہ اٹھے " توُ پاک ہے! ہمیں کوئی علم نہیں سوائے اس کے جو تو نے ہمیں دیا ہے۔ توُ ہی علم والا ، حکمت والا ہے"۔ (32) اس نے کہا " اے آدم! انہیں ان کے نام بتا " ۔ پھر جب اس نے انہیں ان کے نام بتا دیئے تو اللہ نے کہا " کیا میں نے تم سے نہیں کہا تھا کہ میں آسمانوں اور زمین کی چھپی باتیں جانتا ہوں، اور جانتا ہوں جو تم ظاہر کرتے ہو اور جو تم چھپاتے تھے" (بقرہ: 33)

سورة بقرہ کی ان آیات سے یہ ثابت ہے کہ اللہ تعالیٰ نے حضرت آدم علیہ اسلام کو پیدا کیا اور جو کچھ اللہ کے علم میں ہے وہ کسی اور کے نہیں ماسوائے اُس کے جس کو اُس نے بتا دیا۔ بے شک انسان کی تخلیق اللہ کے بے شمار معجزوں میں سے ایک معجزہ ہے۔

آدم عربی زبان میں انسان کے معنی رکھتا ہے۔ عبرانی میں' ا ' کے اضافہ سے یہ آدام ہے جس کے معنی مٹی کے ہیں۔ صحیح بخاری میں حدیث سے روایت ہے کہ حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے فرما یا "اللہ نے آدم علیہ اسلام کو مٹھی بھر مٹّی سے بنایا جو مختلف زمینوں سے لی گئی تھی، اور آدم علیہ اسلام کی اولاد اسی لئے مٹّی کی ترکیب کے مطابق ہے۔ اسی لیے ابنِ آدم سفید ، سرخ، سیاہ اور زرد ہے۔"

تخلیق اِنسان سے بہت پہلے اللہ تعالیٰ نے فرشتوں اور جنّات کو تخلیق فرمایا۔ آدم علیہ اسلام کی تخلیق کے بعد جب اللہ نے ان دونوں کو اشرف المخلوقات یعنی آدم علیہ اسلام کے سامنے سجدہ ریز ہونے کو کہا تو فرشتے تو حکم بجا لائے مگر جن نے یہ کہہ کر انکار کر دیا کہ وہ مٹی سے بنی اس مخلوق کو سجدہ نہیں کر سکتا۔ جن حالانکہ اپنے سے برتر مخلوق یعنی فرشتوں کو آدم کے سامنے سجدہ ریز دیکھ چکا تھا مگر وہ نہیں جانتا تھا وہ کچھ جو اُسکا رب جانتا تھا۔ جن یہ سمجھا کہ آگ مٹی سے برتر ہے۔ مگر جن اللہ کی طرف سے انسان کو ودیعت کی گئی اعلیٰ صفات سے کُلّی طور پر بے بہرہ تھا۔ لیکن اس نے اپنی کم علمی کی وجہ سے اپنے آپ کو برتر سمجھا اور اپنا ابدی نقصان کر بیٹھا۔ اس بات کا صاف مطلب ہے کہ علم ہی وہ شےء ہے جو بنی آدم کو تمام مخلوق پر فوقیت دیتی ہے اور یقیناً جہالت بہت ہی بری شےء ہے۔

یہاں اس بات کا بھی بلخصوص تذکرہ کرنا چاہوں گا کہ جو علم اللہ نے آدم علیہ اسلام کو دیا وہ کائنات اور دنیا کا علم تھا۔ اور اس علم کی اتنی فضیلت تھی کہ فرشتوں کو بھی اقرار کرنا پڑا کے انسان ہی صحیح معنیٰ میں دنیا میں اللہ کا نائب ہے۔ اب آج ہم اگر اس بات کو سمجھ نہیں پا رہے تو اس میں کس کا قصور ہے؟ ہمارے علماء دینی تعلیم کو ہی اصل علم قرار دیتے ہیں جو کہ قطعی غلط نہیں مگر دنیا اور کائنات کا علم بھی اتنا ہی ضروری ہے۔ علم طاقت ہے اور طاقت انسانی نسل اور بقاء کی ضامن۔ علم و ترقی کی دوڑ میں پیچھے رہ جانے والی اقوام اپنے دفاع کا سمجھوتہ طاقت اور علم والی اقوام سے کرتی ہیں اور پھر لادینئت کے شکنجہ میں کچھ یوں جکڑ جاتی ہیں کہ انہیں اپنے مذہب کو بھی گروی رکھنا پڑجاتاہے۔ پس یہ ثابت ہے کے علمِ دین اور دنیا اپس میں لازم و ملزوم ہیں۔ کسی ایک کو یکسر چھوڑ دینا تباہی کے سوا کچھ نہیں۔


آدم علیہ اسلام کے قصہ کی سمت واپس پلٹتے ہیں جس میں یہ بات بھی قابل غور ہے کہ فرشتوں کو اللہ نے اپنی مرضی سے کام کرنے کی صلاحیت نہیں دی ہے۔ فرشتے صرف اللہ کے احکامات کی بجااوری کرتے ہیں۔ اپنی مرضی اور منشاء سے کام کرنے کی صلاحیت صرف جن اور انسان کو حاصل ہے۔ جن نے اپنی اس صلاحیت کا ناجائز فائدہ اُٹھاتے ہوئے اور اپنے آگ سے بنے ہونے کہ غرور میں آکر اللہ کا حکم ماننے سے انکار کر دیا۔ اِسی حکم عدولی کی پاداش میں وہ راندہ درگاہ ٹھرا اور قیامت تک کے لئے ابلیس قرار پایا۔ اگر اللہ چاہتا تو جن کو اپنی مرضی سے جھکا سکتا تھا، بلکہ صفحہ ہستی سے مٹا سکتا تھا مگر اللہ نے ایسا نہیں کیا۔ اس کے بر عکس شیطان کو اس بات کی بھی اجازت دے دی کے وہ بنی آدم کو گمراہ کرنے کی سعی کرتا رہے۔ اس سے یہ بات ثابت ہے کہ اللہ نے اپنی بعض مخلوقات کو اپنی منشاء سے کام کرنے کی آزادی دی ہے اور روز قیامت اُن سے اُن کی اِسی آزادی کی باز پرس ہوگی اور بل آخر جزا اور سزا دی جائے گی۔

آدم علیہ اسلام کو اللہ تعالی ٰ نے زمین پر اپنا نائب یعنی خلیفہ بنایا۔ سب سے پہلے فرشتوں نے آدم علیہ اسلام کا السلام وعلیکم کہہ کر خیر مقدم کیاتو اللہ تعالیٰ نے حضرت آدم علیہ اسلام سے کہا کہ اب سے یہی تم اور تمہاری اولاد کاسلام ہوگا۔ اللہ تعالیٰ نے پھر حضرت آدم علیہ اسلام کی زندگی کے خلاءکو ختم کرنے کے لیے ان کی پسلی کی ہڈی سے اُن کی ساتھی یعنی بی بی حوا کو پیدا کیا۔ پھر اس جوڑے کو جنت میں رہنے دیا۔ یہاں انہیں ہر کام کی آزادی دی ما سوا ئے ایک درخت کا پھل کھانے کے۔ شیطان نے یہیں سے اپنے کام کی ابتداءکی اور اس جوڑے کو بہکا دیا۔ اس جوڑے نے بھی انسان کی اولین بشری کمزوری یعنی بھول جانے کا عمل جسے نیساں کہتے ہیں اس کا اظہار کیا اور اللہ کا حکم بھلا دیا اور اس درخت کا پھل کھا لیا۔ گو کہ ان دونوں نے بعد میں اللہ سے اپنے کیے کی معافی مانگ لی مگر اپنی اس لغزش کی پاداش میں ان دونوں کوہی جنت چھوڑنا پڑی۔ اس جنت کے بارے میں مختلف قسم کے نظریات پائے جاتے ہیں کہ آیا یہ جنت زمین کی اونچائی پہ کسی پر فضاءمقام پر تھی اور بعد میں اللہ تعالیٰ نے اسے ختم کر دیا یا پھر یہ وہ جنت ہے جس کا قرآن میں مومنوں سے وعدہ کیا گیا ہے یا پھر یہ جنت کوئی تیسری جنت تھی۔ میرے خیال میں یہ ایک بے معنی بحث ہے جس کا اس واقعہ کی روح سے قطعی کوئی تعلق نہیں۔

جنت چھوڑنے سے پہلے آدم علیہ اسلام اور حوّا کو اپنے برہنہ ہونے کا احساس نہ تھا مگرخلد بدری کے ساتھ ہی انہےں اپنے برہنہ ہونے کا احساس ہوا اور انہوں نے فوراً ہی پتّوں سے ستر پوشی کی۔ےہاں مےں اس بات کا بھی تذکرہ کرتا چلوں کہ اسرائیلےات مےں ان دونوں کے گناہ کی سزا اللہ تعالیٰ نے اس طرح دی کے تا ابد مرد کو روزگار کی مشقت اور عورت کو بچہ جننے کی صعوبت برداشت کرنی پڑے گی۔ ہمارے مذہب کی روشنی مےں ےہ بات قطعی غلط ہے۔

حضرت آدم علیہ اسلام کے بعد کی دنیا:

حضرت آدم علیہ اسلام کے بعد ان کی اولاد سے دنیا آباد ہونی شروع ہوئی اور اللہ نے انسانوں کی نسل پروان چڑھائی جو دنیا میں چہار سوُ پھےل گئی۔ حضرت آدم علیہ اسلام کے بیٹے ہابیل کو ان کے دوسرے بیٹے قابیل نے قتل کر دیا تھا ( یہاں یہ بات قابل غور ہے کہ قران میں یہ دونوں نام یعنی ہابیل یا قابیل درج نہیں ہیں۔ قران میں صرف آدم کا بیٹا کہا گیا ہے)۔ مزے کی بات یہ ہے کہ دنیا کا پہلا قتل "زن " کی بدولت یعنی شادی کے جھگڑے کی بنا پر ہوا۔ یہ بھی کہا جاتا ہے کہ مرُدے کو زمین میں دفن کرنا قابیل نے ایک کوّے سے سیکھا۔ یہ سب بھی توراة سے اخز کردہ معلومات ہے اس لیے مفصل لکھنا بے مقصد ہے۔


ایک صحیح حدیث کے مطابق اُس وقت سے دنیا میں جتنے بھی قتل ہوۓ ہیں ان کے گناہ کا ایک حصہ حضرت آدم کی پہلی اولا د کے کھاتے میں بھی جا تا ہے۔ اسی لیے کہتے ہیں کے انسان کو اپنی زندگی میں گناہوں سے تو بچنا چاہیے مگر خاص طور پر ایسا کوئی کام نہیں کرنا چاہیے جو ایجاد کے زمرے میں آتا ہو اور اُسکا گناہ جاریہ بن جائے اور روز قیامت اپنے گناہوں کے بار کے علاوہ ایسے شخص کو دوسروں کا کیا بھی بھگتنا پڑے۔ کہا جا تا ہے کہ قتل کا یہ واقع دمشق میں ہوا تھا مگر اس کی صحت کے بارے میں کوئی تاریخی یا اسلامی ثبوت نہیں ملتا۔

اللہ تعالیٰ نے آدم علیہ اسلام کی اولاد کو دنیا میں ہر سمت پھیلا دیا اور انکو قبیلوں اور گروہوں میں بانٹ دیا۔ اللہ تعالیٰ نے شروع سے ہی انسان کو زندگی گزارنے کا طریقہ بتا دیا اور جتا دیا کہ کائنات میں اللہ ہی کی ذات وہ ہستی ہے جو عبادت کے لائق ہے۔ اس کی خدائی میں کوئی شریک نہیں۔ اللہ کے احسانوں کے مقابلے میں اتنی معمولی سی بات بھی انسان یا نہ رکھ سکا۔ تاریخ شاہد ہے کہ بنی آدم کو اللہ کی یہ بات کبھی بھی زیادہ عرصہ یاد نہیں رہی۔ انسان نے ہمیشہ ہی سے شیطان کے بہکاوے میں آ کر یا تو غیر اللہ کو پوجنا شروع کر دیا، یا پھر اللہ کی پاک ذات سے کسی نہ کسی کا کوئی رشتہ جوڑ دیا۔ شرک اللہ کے نزدیک سب سے بڑا گناہ ہے جس کی معافی اس کے حضور عنقا ہے۔ مشرک کو ہر حال میں ابد تک دوزخ کی آگ کا ایندھن بننا ہے۔





Agar Hai Jazba e Tameer Zinda To Phir KIS Baat KI Hum Main Kami hai‏

0 comments

Very Rare Photos of old Dubai‏

0 comments

Join Here

Vegetable market Dubai 1976

Join Here

Bur Dubai waterside 1977

Join Here

Charcoal market Dubai 1979

Join Here

Little office in the souk of Bur Dubai 1976

Join Here

Pearl and coffeepotshop, old Sharjah souk 1977

Join Here

Dubai skyline from Deira 1978

Join Here

Proud shop owner in the Dubai souk 1978

Join Here

Charcoal market Dubai 1979

Join Here

Near the old slaughterhouse Bur Dubai 1978

Join Here

Daily life in Dubai Deira Souk 1977

Join Here

Dubai Deira old souk 1976

Join Here

Building on Dubai drydock , WTC in the back 1979

Join Here

Rowing abra on the Creek from Bur Dubai 1978

Join Here

Abra activity on the Creek in Dubai 1979

Join Here

Age-old trade at the Creek Deira Dubai 1979

Join Here

Mother and son waiting....Jumeirah Dubai 1976

Join Here

Camel caravan from Al Ain to Dubai 1975

Join Here

Orchestra at a Jumeirah wedding Dubai 1978

Join Here

One barrel of Caltex oil in Jumeirah Dubai 1975

Join Here

Barrel of ****l Oil in Jumeirah 1975

Join Here

Arab man's world, falconers near Dubai 1978

Join Here

Little girl in her wooden village, Dubai 1976

Join Here

Arab man walking out of the Hatta fort 1978

Deira Dubai Creek skyline back in 1978

Join Here

Dubai creek looking towards the newly built shereton hotel, 1978

Join Here

Dubai creek 1978, in the far back ground you can see the world trade center underconstruction at the time

Join Here

Again trade center view from the creek 1978

Join Here

Lots of construction around the shereton 1978

Join Here

1970's cars parked near shereton, 1978

Join Here

Shereton 1978

Join Here

Al Gharoud bridge 1982

Join Here

Deira and Burdubai from air 1982

Join Here

Jumeira back in 1982

Join Here

Dubai creek 1982

Join Here

This was Dubai's main skyline back in 1989 Deira

Join Here