Sunday, 30 October 2011

| HAJJ | – THE GREATER PILGRIMAGE

0 comments

https://fbcdn-sphotos-a.akamaihd.net/hphotos-ak-snc7/s720x720/314469_10150337849765334_672380333_8741684_733352580_n.jpg
Hadrat ‘Abdullah ibn ‘Abbas Radi Allahu Ta'ala Anhuma reported that the Messenger of Allah SallAllaho Alaihi wa Aalihi wa Sallam has stated,


يا أيها الناس كتب عليكم الحج فقام الأقرع بن حابس فقال : أفي كل عام يا رسول الله؟ فقال : لو قلتها لوجبت ، ولو وجبت لم تعملوا بها ولم تستطيعوا أن تعملوا بها ، الحج مرة فمن زاد فهو تطوع
“‘O People! Allah has made Hajj incumbent upon you.’ Hadrat Aqra’ ibn Habis stood up and inquired, ‘O Messenger of Allah! Is it incumbent each year?’ The Messenger of Allah said, ‘If I say ‘yes’ then it would be made obligatory and incumbent upon you each year, and if it was to be made incumbent each year you would not be able to fulfill this religious duty. Thus, Hajj is only once in the lifetime and those who exceed this (do more than once) then the (extra) is nafl (optional).’” [Mishkat, Kitab al-Manasik, Page 221]

From this we understand that the Holy Prophet has full power, control and authority on Shari’ah and Sacred Islamic Laws. If the Messenger of Allah desired, he could have made Hajj obligatory and incumbent each year. For a detailed treatise on this topic please read: Muniyyat al-Labib Anna al-Tashri’a biyad al-Habib (1311AH ) by Imam Ahmed Rida Khan.

Hadrat ‘Abdullah ibn ‘Abbas
Radi Allahu Ta'ala Anhuma reported that the Messenger of Allah SallAllaho Alaihi wa Aalihi wa Sallam said,


من أراد الحج فليعجل
“He who intends to perform hajj should hasten to do so.” [Sunan Darimi, Vol. 2, Page 27]

Hadrat ‘Abdullah ibn Mas’ud Radi Allahu Ta'ala Anhu reported that the Messenger of Allah
SallAllaho Alaihi wa Aalihi wa Sallam said,


تابعوا بين الحج والعمرة فإنهما ينفيان الفقر والذنوب كما ينفي ‏ ‏الكير ‏ ‏خبث الحديد ‏ ‏والذهب والفضة وليس للحجة المبرورة ثواب إلا الجنة
“Make the Hajj and the Umrah follow each other closely, (wear the Ihram for Qiran, in which the intention of Hajj and ‘Umrah is done or perform both the Hajj and ‘Umrah consecutively) for they remove poverty and sins as a furnace removes impurities from iron, gold and silver; and Hajj which is accepted, its reward is Paradise.” [Sunan Tirmidhi, Abwab al-Hajj, Vol. 1, Page 167]

Hadrat Abu Hurairah
Radi Allahu Ta'ala Anhu reported that the Messenger of Allah SallAllaho Alaihi wa Aalihi wa Sallam said,


من خرج حاجا أو معتمرا أو غازيا ثم مات في طريقه كتب الله له أجر الغازي والحاج والمعتمر
“Anyone who went out (of his house) with the intention of performing Hajj, ‘Umrah or fighting in the Path of Allah, and then passed away as he was on his way, then Allah the Most Exalted shall forever write for him the reward of a Haji, one who performs ‘Umrah and a mujahid.” [Mishkaat, Kitab al-Manasik, Page 223]

Hadrat ibn ‘Abbas
Radi Allahu Ta'ala Anhuma reported that the Messenger of Allah SallAllaho Alaihi wa Aalihi wa Sallam has stated,


أن العمرة في رمضان تعدل حجة
“Performing ‘Umrah in the month of Ramadan equals (in reward) a Hajj.” [Baihaqi, Bab al-Umrah fi Ramadan, Vol. 4, Page 565]

https://fbcdn-sphotos-a.akamaihd.net/hphotos-ak-snc7/316367_10150337849930334_672380333_8741686_348599398_n.jpg
Hadrat Abu Razin al-‘Uqayli Radi Allahu Ta'ala Anhu came to the Messenger of Allah SallAllaho Alaihi wa Aalihi wa Sallam and asked,


يا رسول الله إن أبي شيخ كبير لا يستطيع الحج والعمرة ولا الظعن قال : حج عن أبيك واعتمر
“My father is very old, he cannot perform Hajj and Umrah himself; nor can he ride on any conveyance. He said, “Perform Hajj and Umrah on behalf of your father.” [Sunan Abi Dawood, Baab al-Rajul Yahujju 'an Ghayrih, Vol. 1, Page 252]

Hadrat ibn ‘Abbas
Radi Allahu Ta'ala Anhuma reported that: A man came to the Holy Prophet SallAllaho Alaihi wa Aalihi wa Sallam and said,


إن أختي نذرت أن تحج وأنها ماتت . فقال النبي صلى الله عليه وسلم : لو كان عليها دين أكنت قاضيه؟ قال: نعم، قال : فاقض دين الله فهو أحق بالقضاء
“My sister vowed to perform the Hajj, but she died (before fulfilling it).” The Holy Prophet said, “Would you not have paid her debts if she had any?” The man said, “Yes.” So, the Holy Prophet said, “So pay Allah's Rights, as He is more entitled that His rights be fulfilled.” [Sahih Bukhari, Kitab an-Nudhur, Vol. 2, Page 991]

Hadrat ibn ‘Abbas
Radi Allahu Ta'ala Anhuma reported that the Messenger of Allah SallAllaho Alaihi wa Aalihi wa Sallam said,


لا تسافرن امرأة إلا ومعها محرم
“Never should any woman travel (even if it be for Hajj) without her mahram (to which she cannot marry i.e. marrying to him is Haram) [Sahih Muslim, Baab Safar al-Mar'ah Ma'a Mahram, Vol. 1, Page 434]

Hadrat ‘Ali
Radi Allahu Ta'ala Anhu reported that the Messenger of Allah SallAllaho Alaihi wa Aalihi wa Sallam said,


‏من ملك ‏ ‏زادا ‏ ‏وراحلة تبلغه إلى بيت الله ولم يحج فلا عليه أن يموت يهوديا أو نصرانيا وذلك أن الله يقول في كتابه: ‏‏ولله على الناس حج ‏ ‏البيت ‏ ‏من استطاع إليه سبيلا
“If anyone possesses enough provision and an animal to mount on (or any other conveyance) to take him to the House of Allah and (despite this) does not perform the pilgrimage, there is no difference whether he dies as a Jew or a Christian. This is because Allah the Most Exalted has stated, ‘Pilgrimage to the House is a duty men owe to Allah, those who can afford the journey’.” [Sunan Tirmidhi, Baab Ma Ja'a minat Taghleedh, Vol. 1, Page 167]

https://fbcdn-sphotos-a.akamaihd.net/hphotos-ak-snc7/s720x720/313134_10150337848080334_672380333_8741671_1334621367_n.jpg

IMPORTANT NOTES:

1. To perform Hajj to “show off” to others or pretence or to perform Hajj from wealth which is Haram (such that it was gained from Haram means) then it is Haram to go to perform Hajj. [al-Durr al-Mukhtar, Radd al-Muhtar, Bahar-e-Shari’at Vol. 6 Page 719]

2. If Makkah al-Mukarramah is situated at a distance of three days or more (normal walking distance which equals to approximately 57 ½ miles or 92 kilometres) from the place of residence of a woman who intends to perform Hajj then she must, (irrespective of being young or old,) accompany her husband or a “Mahram” (those relatives to whom it is Haram for the woman to marry; whether this prohitibiton is because of a blood-relation such as the son, brother, father or because of a foster relation or the in-laws, such as the father-in-law, or the son of his husband from his previous wife) [Bahar-e-Shari’at]

3. The husband or the “mahram” with whom the woman can go to perform Hajj has to be sane, mature and not a fasiq (transgressor). One cannot perform Hajj with an insane, immature or a fasiq. [‘Alamgiri, al-Durr al-Mukhtar, Bahar-e-Shari’at]

4. It is haram for a woman to go to perform Hajj without her husband or any “mahram”. If she does so, then she has accomplished the religious duty. However, a sin shall be written on every step she takes (to and fro). [Fatawa-e-Razawiyyah, Vol. 4, Page 691]

5. Some women go to perform Hajj with her spiritual guide (Peer) or a very old man (who are ghayr mahram for them). This is also unlawful and Haraam.


https://fbcdn-sphotos-a.akamaihd.net/hphotos-ak-snc7/s720x720/300000_10150337848180334_672380333_8741672_1119430075_n.jpg

6. If there is no husband or “mahram” to accompany the woman, then it is not wajib for the woman to perform nikah (in order for a valid person such as her husband to accompany her to go to perform Hajj). [Bahar-e-Shari’at]

7. If one has an amount of money sufficient for him/her to perform Hajj, but not enough to bring gifts and souvenirs for friends and relatives on return, then to perform Hajj is still incumbent (obligatory) upon him/her. Not to perform Hajj because of the insufficient amount of money to bring gifts and toys is Haram. [Bahar-e-Shari’at]

8. The table below shows the rulings of each aspect of Hajj for a Mutammati’; which is Fard (obligatory), Wajib (necessary), Sunnah, or Nafl (optional):


https://fbcdn-sphotos-a.akamaihd.net/hphotos-ak-ash4/312530_10150340089200334_672380333_8754861_940162528_n.jpg

9. The 5 days of Hajj (in brief):


https://fbcdn-sphotos-a.akamaihd.net/hphotos-ak-snc7/312767_10150340089395334_672380333_8754863_1089681213_n.jpg

10. A woman who is in her menstrual cycle (haiz) cannot perform Tawaf-e-Ziyarat (Tawaf-e-Ifada) on the 10th of Dhul Hijjah. If she cannot perform this Tawaf on this date due to her menstrual cycle, then if she becomes ‘clean’ after this date until the sunset on the 12th of Dhul Hijjah, it is obligatory on her to perform this tawaf. If even after these dates, the woman has not become ‘clean’, but has become clean after these dates, then it is obligatory for her to perform this Tawaf.

a. If a woman who is in her periods (menstrual cycle) can take tablets to terminate the menstrual cycle, then she can do so. However, doing this shall cause harm to one’s health. Therefore, it is advisable not to do it. [Fatawa-e-Markazi Dar-ul-Ifta – 11th Year – 2006 - Page 35]

b. If a female can change her return date back to her country, in order for her to become ‘clean’ and thereafter perform this Fard Tawaf, then she should do so. Otherwise, if she returned back to her place of residence, not having performed this Fard Tawaf, then her Hajj is incomplete. She shall have to retrun in the “Months of Hajj” which are Shawwal, Dhul Qa’dah, first 10 days of Dhul Hijjah; and then perform the Fard Tawaf (Tawaf-e-Ziyarat). She shall also have to sacrifice an animal in the haram boundaries, as atonement for reutnring to her destination without having performed this obligatory Tawaf. [Fatawa-e-Faqih-e-Millat – Vol. 1 Page 349]


https://fbcdn-sphotos-a.akamaihd.net/hphotos-ak-ash4/s720x720/299268_10150337848710334_672380333_8741675_964176357_n.jpg

11. Those who have been blessed with performing Hajj and visiting the August Presence of the Holy Prophet SallAllaho Alaihi wa Aalihi wa Sallam should (on return to their places) draw people closer towards religion; by giving them gifts which helps them to do so. Such gifts include giving books of the Ahl al-sunnah wa al-Jama’ah, Islamic lectures, Islamic CDs and so on. Unfortunately, however, most Hajis bring with them radios for their friends and relatives by which they, most of the time, listen to music; gaining sins upon sins upon sins, not only in their Book of Deeds but also in the Book of Deeds of the one who initially gave it to them. This same ruling applies to those people who bring gold rings and/or chains or any other jewellery item for men to wear. This is because it is unlawful (Haram) for males to wear any kind of jewellery (whether it comes from the two Holy Sanctuaries or any other place) made out of any metal whatsoever, except for one silver ring which has to have one stone, and which does not weight more than 4.23 grams.

Allah Most High states:


وتعاونوا على البر والتقوى ولا تعاونوا على الاثم والعدوان
“and help one another in (matters of) virtue and piety and do not mutually cooperatw in what is sinful and wicked…” [Surah al-Ma’idah, Verse 2]
 
12. A person who performed Hajj with pure Halal money (which was gained from Halal means), had a sincere intention (to perform Hajj solely for seeking the pleasure of Allah and His Beloved Messenger), did not fight, quarrel or argue in it, protected himself from all disobedincies and sins, and thereafter passed away (after having performed Hajj), but did not have the time to fulfil all of the Rights of Allah (Huququllah) or the Rights of His slaves (Huququl Ibaad), then in the situation of his/her Hajj being accepted, there is a high hope that Allah Ta’ala forgives all of His rights and through His mercy He shall forgive the rights of His slaves. There is also hope that on the Day of Resurrection Allah shall please all those whose right was upon the shoulders of this person, and protect this slave of His from contention as regards to the rights being unfulfilled. [A’jab al-Imdad fi mukaffirati Huquq al-‘Ibad – Imam Ahmed Raza Khan Rehmatullahi ‘Alayh – Fatawa-e-Razawiyyah – Vol. 24, Pages  459-476]

13. If a person stayed alive after having performed Hajj, and then as much as his/her capability, tried to fulfil the rights of Allah and the rights of His slaves; such as paying the Zakat which he/she did not pay for years that preceded; or performed the Qaza of prayers that were missed; or the fasts that had not been kept; or fulfilled the rights of those who owned that right by repaying the owner of the right or his/her next of kin, asked for forgiveness from the person to whom he/she had caused problems or had troubled; those who passed away before their rights were fulfilled, then he/she gave charity on behalf of them ; if anything remained unfulfilled from the rights of Allah and His slaves, then he did a wasiyyah (leave by will) near the time of death that the rights be fulfilled by taking that share from his/her own wealth and then giving it to the owner of the right. Conclusively, he/she tried their best to fulfil all the rights that were left unaccomplished, then there is even a greater hope for the forgiveness of such people. [A’jab al-Imdad]


https://fbcdn-sphotos-a.akamaihd.net/hphotos-ak-ash4/s720x720/309067_10150337847565334_672380333_8741668_1464651546_n.jpg

14. Yes however, if one was neglectful in fulfilling these rights after having performed Hajj, and hence, he/she did not fulfill these rights then all these sins shall start to be written in his/her Book of Deeds.  This is because prior to performing Hajj, the rights of Allah and His slaves still remained on his/her responsibility to fulfill, but they delayed in fulfilling these rights and on top of this, they neglected these rights even after performing Hajj. Thus, the Hajj performed will not be sufficient to eliminate these rights that have remained on his/her responsibility. This is because, yes, Hajj does remove the sins of not performing salaah and keeping fasts in their prescribed times. However, Hajj deos not eliminate the obligation of performing the qaza of the prayers that have been missed; or keeping fasts that have been missed.

15. A sign of a person’s Hajj being accepted is that the Haji becomes more ‘religious’ after Hajj than was before. [A’jab al-Imdad]

16. Nowadays, many people have become heedless of fulfilling the rights of Allah and His slaves for many years; such as they have not performed the Qaza for their missed prayers; or not kept the fasts that they had broken or not kept; or not payed the Zakat for their previous years. This is why we see them killing one another; seizing each others property; stealing other peoples wealth; causing problems and giving distress to others. it is great misunderstanding for such people to think that after having performed Hajj all of their sins have been eradicated. If the Rights of Allah and the Rights of His slaves have been left unfulfilled, even after having performed Hajj, then they have to be accomplished as soon as possible.

We ask Almighty Allah that He gives us the tawfiq and guidance to fulfil His rights and those of His slaves... Aameen!!


https://fbcdn-sphotos-a.akamaihd.net/hphotos-ak-ash4/s720x720/303165_10150337845865334_672380333_8741654_1757491629_n.jpg
 
--

Friday, 28 October 2011

اسلامی سال کا بارہواں مہینہ ۔۔۔ ذو الحجہ شریف

0 comments


https://fbcdn-sphotos-a.akamaihd.net/hphotos-ak-snc7/295863_10150337842045334_672380333_8741621_2050387006_n.jpg

اسلامی سال کا بارہواں مہینہ ذوالحجہ ہے اس کی وجہ تسمیہ ظاہر ہے کہ اس ماہ میں لوگ حج کرتے ہیں اور اس کے پہلے عشرے کا نام قرآن مجید میں ''ایام معلومات'' رکھا گیا ہے یہ دن اللہ کریم کو بہت پیارے ہیں۔ اس کی پہلی تاریخ کو سیدہ عالم حضرت خاتونِ جنت فاطمہ زہراء رضی اللہ تعالیٰ عنہا کا نکاح سیدنا حضرت شیر خدا علی مرتضیٰ کرم اللہ تعالیٰ وجہہ الکریم کے ساتھ ہوا۔

اس ماہ کی آٹھویں تاریخ کو یومِ ترویہ کہتے ہیں ۔ کیوں کہ حجاج اس دن اپنے اونٹوں کو پانی سے خوب سیراب کرتے تھے۔ تاکہ عرفہ کے روز تک ان کو پیاس نہ لگے ۔ یا اس لئے اس کو یوم ترویہ (سوچ بچار) کہتے ہیں کہ سیدنا حضرت ابراہیم خلیل اللہ علیٰ نبینا و علیہ الصلوٰۃ والسلام نے آٹھویں ذی الحجہ کو رات کے وقت خواب میں دیکھا تھا کہ کوئی کہنے والا کہہ رہا ہے کہ اللہ تعالیٰ تجھے حکم دیتا ہے کہ اپنے بیٹے کو ذبح کر۔ تو آپ نے صبح کے وقت سوچا اور غور کیا کہ آیا یہ اللہ تعالیٰ کی طرف سے ہے یا شیطان کی طرف سے ۔ اس لئے اس کو یومِ ترویہ کہتے ہیں ۔

اور اس کی نویں تاریخ کو عرفہ کہتے ہیں۔ کیوں کہ سیدنا حضرت ابراہیم علیہ الصلوٰۃ والسلام نے جب نویں تاریخ کی رات کو وہی خواب دیکھا تو پہچان لیا کہ یہ خواب اللہ تعالیٰ کی طرف سے ہے ۔ اسی دن حج کا فریضہ سر انجام دیا جاتا ہے ۔

دسویں تاریخ کو یوم نحر کہتے ہیں ۔ کیوں کہ اسی روز سیدنا حضرت اسماعیل علیہ الصلوٰۃ والسلام کی قربانی کی صورت پیدا ہوئی ۔ اور اسی دن عام مسلمان قربانیاں ادا کرتے ہیں۔

اس ماہ کی گیارہ تاریخ کو " یوم القر" اوربارہویں، تیرہویں کو " یوم النفر" کہتے ہیں اور اس ماہ کی بارہویں تاریخ کو حضور سراپا نور شافع یوم النشور صلی اللہ علیہ وسلم نے سیدنا حضرت علی رضی اللہ تعالی عنہ سے بھائی چارہ قائم فرمایا تھا۔ (فضائل الایام والشہور صفحہ ٤٥٩۔٤٦٠)


ماہِ ذو الحجہ کی فضیلت:

ذوالحجہ کا مہینہ چار برکت اور حرمت والے مہینوں میں سے ایک ہے ۔ اس مبارک مہینہ میں کثرتِ نوافل، روزے، تلاوت قرآن، تسبیح و تہلیل، تکبیر و تقدیس اور صدقات و خیرات وغیرہ اعمال کا بہت بڑا ثواب ہے ۔ اور بالخصوص اس کے پہلے دس دنوں کی اتنی فضیلت ہے کہ اللہ تعالیٰ نے اس عشرہ کی دس راتوں کی قسم یاد فرمائی ہے ۔ چنانچہ ارشاد باری تعالیٰ ہے:

وَالْفَجْرِ o وَلَیَالٍ عَشْرٍ o وَالشَّفْعِ وَالْوَتْرِ o وَالَّیْلِ اِذَا یَسْرِ o
قسم ہے مجھے فجر کی عیدِ قربان کی اور دس راتوں کی جو ذوالحجہ کی پہلی دس راتیں ہیں ۔ اور قسم ہے جفت اور طاق کی جو رمضان مبارک کی آخری راتیں ہیں، اور قسم ہے اپنے حبیب صلی اللہ علیہ وسلم کے معراج کی رات کی۔

اس قسم سے پتہ چلتا ہے کہ عشرہ ذی الحجہ کی بہت بڑی فضیلت ہے۔ (فضائل الایام والشہور صفحہ ٤٦٣)

https://fbcdn-sphotos-a.akamaihd.net/hphotos-ak-snc7/s720x720/315549_10150337846220334_672380333_8741660_474712528_n.jpg
 

Tuesday, 25 October 2011

The Qualities and Excellence of the Noble Prophets [Alaihim as-Salam]

0 comments
Each and every Prophet and Messenger of Allah was blessed with a perfect disposition. They were handsome and their lineage noble. Their character was good as was their behavior. This is because they all possess the attributes of perfection. They guided to the completed the code of human spiritual behavior which was to be completed by Prophet Muhammad Peace and Blessings of Allah be Upon Him and practiced virtuous deeds on account of their rank being of the most noble and their degree being of the highest.


The Seal of the Prophethood – Sayyiduna wa Mawlana
MuHammad ar-RasoolAllah SallAllaho Alaihi wa Aalihi wa Sallam


Allah tells us that He preferred some of the Prophets and Messengers over others with His words,


تلك الرسل فضلنا بعضهم على بعض منهم من كلم اللـه ورفع بعضهم درجات وآتينا عيسى ابن مريم البينات وأيدناه بروح القدس
"These are the Noble Messengers, to whom We gave excellence over each other; of them are some with whom Allah spoke, and some whom He exalted high above all others; and We gave Eisa (Jesus), the son of Maryam, clear signs and We aided him with the Holy Spirit" [Surah al-Baqarah : 253]

He also tells us,


ولقد اخترناهم على علم على العالمين
"And We knowingly chose them, among all others of their time" [Surah al-Dukhan : 32]

Prophet Muhammad Peace and Blessings of Allah be Upon Him said,


إن أول زمرة يدخلون الجنة على صورة القمر ليلة البدر... على خلق رجل واحد ، على صورة ، أبيهم آدم ، طوله ستون ذراعاً في السماء
"The first group to enter the Garden of Paradise will be like the full moon… every man will be in the height of their father Adam who was sixty cubits (90 feet) tall." [Sahih Bukhari, Volume 4, Page 93 – Sahih Muslim, Volume 4, Page 2179]


Sayyiduna Moosa Kalimullah (Moses) Alaihis Salam - Palestine

The description of several of the prophets has been made known to us by Prophet Muhammad Peace and Blessings of Allah be Upon Him who tells us,


رأيت موسى فإذا هو رجل ضرب ، رجل ، أقنى كأنه من رجال شنوءة و رأيت عيسى فإذا هو رجل ربعة ، كثير خيلان الوجه ، أحمر كأنما خرج من ديماس
"I saw Moosa (Moses), he was tall with curly hair. He resembled the men of Shanu'a. I saw Eisa (Jesus), he was of medium height with a reddish face just as if he had come out after having taken a hot bath."


He further described him as being slender, like a sword. He gave additional information about Moosa saying,


مبطن مثل السيف
"He is like the best men you have ever seen with a dark complexion."


Of himself he said,


و أنا أشبه ولد إبراهيم به
"Among the descendants of Ibrahim, I am the one who most resembles him." [Sahih Bukhari, Volume 4, Page 122 – Sahih Muslim, Volume 1, Page 153]

Sayyiduna Abu Hurayrah Radi Allahu Ta'ala Anhu tells us,


ما بعث الله تعالى من بعد لوط نبياً إلا في ذروة من قومه
"After Prophet Lot, Allah did not send a prophet who was not from the noblest class of his people." In addition to this is that they were among the wealthy and powerful. [Mustadrak, Volume 2, Page 561]

Sayyiduna Anas ibn Maalik Radi Allahu Ta'ala Anhu tells us that


ما بعث الله نبياً حسن الوجه ، حسن الصوت ، و كان نبيكم أحسنهم وجهاً ، و أحسنهم صوتاً
Allah did not send a prophet without making his face and voice beautiful, and that Prophet Muhammad, may Allah praise and venerate him and grant him peace, had the most handsome face of all of them and also the best voice. [Shama'il al-Tirmidhi, Page 254]

During the cross-examination of Sayyiduna Abu Sufyan Radi Allahu Ta'ala Anho by Heraclius, Emperor of Rome, Heraclius said,


و سألتك عن نسبه ، فذكرت أنه فيكم ذو نسب ، و كذلك الرسل تبعث في أنساب قومها
"I questioned you about his lineage and you said that he was of good lineage among you, and that is how all the Messengers have bee sent, from the noble families of their people." [Sahih Bukhari, Volume 4, Page 125]


Sayyiduna Yusha' bin Noon Alaihis Salam - Iraq

Prophets and Messengers preferred by Almighty Allah
There are many references to the Prophets and Messengers who were preferred by Allah mentioned in the Holy Qur'an, some of which are mentioned below:

Of Prophet Ayyub Alaihis Salam, Allah says,


إنا وجدناه صابرا نعم العبد إنه أواب
"We indeed found him patiently enduring; what an excellent bondman! He is indeed most inclined." [Surah al-Saad : 44]

Of Prophet Yahya Alaihis Salam, Allah says,


يا يحيى خذ الكتاب بقوة وآتيناه الحكم صبيا۔ وحنانا من لدنا وزكاة وكان تقيا۔ وبرا بوالديه ولم يكن جبارا عصيا۔ وسلام عليه يوم ولد ويوم يموت ويوم يبعث حيا
"O Yahya - hold the Book firmly"; and We gave him Prophethood in his infancy. And compassion from Ourselves, and chastity; and he was extremely pious. And was good to his parents and not forceful, nor disobedient. And peace is upon him the day he was born, and the day he will taste death, and the day he will be raised alive." [Surah al-Maryam : 12-15]


Sayyiduna Zakariya Alaihis Salam - Alleppo, Syria

He also tells us of the time Prophet Zakariyah Alaihis Salam was given the good news of a son,


أن اللـه يبشرك بيحيى مصدقا بكلمة من اللـه وسيدا وحصورا ونبيا من الصالحين
"Indeed Allah gives you glad tidings of Yahya (John), who will confirm a Word (or sign) from Allah, - a leader, always refraining from women, a Prophet from one of Our devoted ones." [Surah Aal-e-Imran : 39]

He tells us,


إن اللـه اصطفى آدم ونوحا وآل إبراهيم وآل عمران على العالمين
"Indeed Allah chose Adam, and Nooh, and the Family of Ibrahim, and the Family of Imran over the creation." [Surah Aal-e-Imran : 33]

Of Prophet Nuh He says,


إنه كان عبدا شكورا
"He was indeed a grateful bondman." [Surah al-Isra : 3]


Sayyiduna Jarjees Alaihis Salam - Mousul, Iraq

Of Prophet Eisa Alaihis Salam He says,


إذ قالت الملائكة يا مريم إن اللـه يبشرك بكلمة منه اسمه المسيح عيسى ابن مريم وجيها في الدنيا والآخرة ومن المقربين
"And remember when the angels said, “O Maryam! Allah gives you glad tidings of a Word from Him, whose name is the Messiah, Eisa the son of Maryam - he will be honourable in this world and in the Hereafter, and among the close ones (to Allah)." [Surah Aal-e-Imran : 45]

Allah quotes Prophet Eisa Alaihis Salam who said,


إني عبد اللـه آتاني الكتاب وجعلني نبيا۔ وجعلني مباركا أين ما كنت وأوصاني بالصلاة والزكاة ما دمت حيا
"I am Allah’s bondman; He has given me the Book and made me a Herald of the Hidden (a Prophet). And He has made me blessed wherever I be; and ordained upon me prayer and charity, as long as I live." [Suran al-Maryam : 30-31]


Sayyiduna YaHya Alaihis Salam - Damascus, Syria

and Almighty Allah warns,


يا أيها الذين آمنوا لا تكونوا كالذين آذوا موسى
"O People who Believe! Do not be like the people who troubled Moosa" [Surah al-Ahzab : 69]

Prophet Muhammad Peace and Blessings of Allah be Upon Him tells us that Prophet Moosa Alaihis Salam was a modest man who covered himself. No part of his body was seen on account of his modesty. [Ash-Shifa, Volume 1, Page 136]

Allah quotes Prophet Moosa Alaihis Salam as saying,


فوهب لي ربي حكما وجعلني من المرسلين
"so my Lord commanded me and appointed me as one of the Noble Messengers." [Surah al-Shu'ara : 21]


Sayyiduna Hud and Sayyiduna Sualeh Alaihim as-Salam - Iraq

Several Prophets mentioned by Almighty Allah
Several of the prophets are mentioned by Almight Allah in the Holy Qur'an as saying to their people,


إني لكم رسول أمين
"I am indeed a trustworthy Noble Messenger of Allah to you." [Surah al-Shu'ara : 107]

In reference to Prophet Ibrahim Alahis Salam, Almighty Allah says,


ووهبنا له إسحاق ويعقوب كلا هدينا ونوحا هدينا من قبل ومن ذريته داوود وسليمان وأيوب ويوسف وموسى وهارون وكذلك نجزي المحسنين۔ وزكريا ويحيى وعيسى وإلياس كل من الصالحين۔ وإسماعيل واليسع ويونس ولوطا وكلا فضلنا على العالمين۔ ومن آبائهم وذرياتهم وإخوانهم واجتبيناهم وهديناهم إلى صراط مستقيم۔ ذلك هدى اللـه يهدي به من يشاء من عباده ولو أشركوا لحبط عنهم ما كانوا يعملون۔ أولئك الذين آتيناهم الكتاب والحكم والنبوة فإن يكفر بها هؤلاء فقد وكلنا بها قوما ليسوا بها بكافرين۔ أولئك الذين هدى اللـه فبهداهم اقتده قل لا أسألكم عليه أجرا إن هو إلا ذكرى للعالمين
"And We bestowed upon him Ishaq (Isaac) and Yaqub (Jacob); We guided all of them; and We guided Nooh before them and of his descendants, Dawud and Sulaiman and Ayyub and Yusuf and Moosa and Haroon; and this is the way We reward the virtuous. And (We guided) Zakaria and Yahya (John) and Eisa and Ilyas; all these are worthy of Our proximity. And Ismael (Ishmael) and Yasa’a (Elisha) and Yunus (Jonah) and Lut (Lot); and to each one during their times, We gave excellence over all others. And some of their ancestors and their descendants and their brothers; and We chose them and guided them to the Straight Path. This is the guidance of Allah, which He may give to whomever He wills among His bondmen; and had they ascribed partners (to Allah), their deeds would have been wasted. These are the ones whom We gave the Book and the wisdom and the Prophethood; so if these people do not believe in it, We have then kept ready for it a nation who do not reject (the truth). These are the ones whom Allah guided, so follow their guidance; say (O dear Prophet Mohammed - peace and blessings be upon him), “I do not ask from you any fee for the Qur’an; it is nothing but an advice to the entire world." [Surah al-An'aam : 84-90]


Sayyiduna Younus Alaihis Salam - Mousul, Iraq
 
Prophets and Messengers as Possessors of Admirable Qualities
In the following Qur'anic quotations Allah describes the prophets and messengers as possessors of many fine and admirable qualities; right action, chosen, judgment and prophecy.

Concerning Ishaq Alahis Salam, Allah tells us that the angels said to Ibrahim Alahis Salam,


لا تخف وبشروه بغلام عليم
"“Do not fear!”; and they gave him the glad tidings of a knowledgeable son." [Surah adh-Dhariyat : 28]

And of Ismail Alaihis Salam Allah says,


فبشرناه بغلام حليم
"We therefore gave him the glad tidings of an intelligent son" [Surah as-Saaffat : 101]

Almight Allah says,


ولقد فتنا قبلهم قوم فرعون وجاءهم رسول كريم۔ أن أدوا إلي عباد اللـه إني لكم رسول أمين
"And before them We indeed tried the people of Fir'aun, and an Honourable Noble Messenger came to them. Who said, “Give the bondmen of Allah into my custody; I am indeed a trustworthy Noble Messenger for you.”" [Surah al-Dukhan : 17-18]


https://fbcdn-sphotos-a.akamaihd.net/hphotos-ak-snc6/165231_478410490333_672380333_6451742_1271381_n.jpg
Sayyiduna Sheeth Alaihis Salam - Iraq

At the time when Prophet Ibrahim Alaihis Salam was about to fulfill his sacrificial vision of his son, Ismail Alaihis Salam told him,


يا أبت افعل ما تؤمر ستجدني إن شاء اللـه من الصابرين
"O my father! Do what you are commanded! Allah willing, you will soon find me patiently enduring!" [Surah as-Saaffat : 102]

Of Ismail Alaihis Salam, Almighty Allah says,


واذكر في الكتاب إسماعيل إنه كان صادق الوعد وكان رسولا نبيا
"And remember Ismail in the Book; he was indeed true to his promise and was a Noble Messenger, a Prophet." [Surah al-Maryam : 54]

Allah speaks of the devotion of Moosa Alaihis Salam saying,


إنه كان مخلصا وكان رسولا نبيا
"He was indeed a chosen one, and he was a Noble Messenger, a Herald of the Hidden." [Surah al-Maryam : 51]

Also,


قال ستجدني إن شاء اللـه صابرا ولا أعصي لك أمرا
"Said Moosa, 'Allah willing, you will soon find me patient and I will not do anything against your instructions.'" [Surah al-Kahf : 69]


Sayyiduna Ibrahim Khalilullah Alaihis Salam - Palestine

Allah tells us that Sulayman Alaihis Salam was,


نعم العبد إنه أواب
"what an excellent bondman! He is indeed most inclined." [Surah al-Saad : 30]

Allah calls upon us to remember,


واذكر عبادنا إبراهيم وإسحاق ويعقوب أولي الأيدي والأبصار۔ إنا أخلصناهم بخالصة ذكرى الدار۔ وإنهم عندنا لمن المصطفين الأخيار
"And remember Our bondmen Ibrahim, and Ishaq, and Yaqub – the men of power and knowledge. We indeed gave them distinction with a genuine affair – the remembrance of the (everlasting) abode. And in Our sight, they are indeed the chosen ones, the beloved." [Surah al-Saad : 45-47]

Of Prophet Dawud Alaihis Salam, He says,


عبدنا داوود ذا الأيد إنه أواب
"Our bondman Dawud, the one blessed with favours; he is indeed most inclined (towards His Lord)."  [Surah al-Saad : 17]

and,


وشددنا ملكه وآتيناه الحكمة وفصل الخطاب
"And We strengthened his kingdom and gave him wisdom and just speech." [Surah al-Saad : 20]


Sayyiduna Ishaaq Alaihis Salam - Palestine

Of Prophet Yousuf Alaihis Salam, Almighty Allah says,


قال اجعلني على خزائن الأرض إني حفيظ عليم
"Said Yusuf, 'Appoint me over the treasures of the earth; indeed I am a protector, knowledgeable.'" [Surah al-Yousuf : 55]

Allah mentions the saying of Prophet Shu'aib Alaihis Salam,


ستجدني إن شاء اللـه من الصالحين
"Allah willing, you will probably find me of the righteous." [Surah al-Qasas : 27]

And,


ما أريد أن أخالفكم إلى ما أنهاكم عنه إن أريد إلا الإصلاح ما استطعت وما توفيقي إلا باللـه عليه توكلت وإليه أنيب
"I do not wish that I myself act against it; I only intend to make improvements as far possible; my guidance is only from Allah; I rely only upon Him and towards Him only do I incline." [Surah al-Hud : 88]


Sayyiduna Sho'aib Alaihis Salam

Of Prophet Loot Alaihis Salam, Allah tells us,


ولوطا آتيناه حكما وعلما
"And We gave Lut the kingdom and knowledge" [Surah al-Anbiya : 74]

Of Zakariyah and Yahya Alaihim as-Salam, Allah tells us,


إنهم كانوا يسارعون في الخيرات ويدعوننا رغبا ورهبا وكانوا لنا خاشعين
"indeed they used to hasten to perform good deeds, and pray to Us with hope and fear; and used to weep before Us." [Surah al-Anbiya : 90]

Sayyiduna Sufyan Ath-Thawri Alaihir raHma draws our attention to another aspect of the characteristics and qualities found in the prophets, which is their continuous sorrow, this is an indication of their perfection and there are many prophetic quotations that endorse this fact.




Sayyiduna Imran Alaihis Salam - Salalah, Oman

Prophet Muhammad, may Allah praise and venerate him and grant him perfect peace, described for himself,


إنما الكريم ابن ا لكريم ابن الكريم ابن الكريم يوسف بن يعقوب بن إسحاق بن إبراهيم ،نبي ابن نبي ابن نبي ابن نبي
"Verily! without a doubt, I am Generous, son of the Generous, son of the Generous. The noble son of a noble son, of a noble son of a noble man, Yousuf, son of Ya'qub, son of Ishaq, son of Ibrahim the prophet, son of a prophet, son of a prophet, son of a prophet." [Sahih Bukhari, Volume 4, Page 119 – Mustadrak, Volume 2, Page 571 Ash-Shifa, Volume 1, Page 139]

He also said,


و كذلك الأنبياء تنام أعينهم و لا تنام قلوبهم
"The eyes of the prophets slept, but their hearts did not sleep." [Sahih Bukhari, Volume 4, Page 152]

Prophet Sulayman Alaihis Salam who was given a great kingdom, never raised his eyes to the heavens because he was humble and feared Allah. As for his diet, he would eat coarse bread made from barley but would serve others with fine food. [Az-Zuhud wa Imam Ahmad Ibn Hanbal, Page 91]

It was revealed to him, "O leader of worshipers and goal of the abstinent." The story has reached us of how one day when he was riding on the wind with his armies, an elderly woman complained to him, whereupon he commanded the wind to stop so he might attend to her need before he continued on his way. [Ash-Shifa, Volume 1, Page 140]


Sayyiduna Haroon Alaihis Salam - Mount Ohud, Madina Munawwarah

When Prophet Yousuf Alaihis Salam was asked, "Why are you hungry when you are in charge of the treasures of the earth?" He replied, "I am fearful that I might become full and thereby forget those who are hungry." [Ash-Shifa, Volume 1, Page 140]

Abu Hurayrah heard the Prophet Peace and Blessings of Allah be Upon Him say,


خفف على داود القرآن ، فكان يأمر بدوابه ، فتسرج ، فيقرأ القرآن قبل أن تسرج ، و لا يأكل إلا من عمل يده
"Recitation was made easy for Dawud. He would order his mount and turn it loose, and would finish his recitation before his mount wandered off." [Ash-Shifa, Volume 1, Page 140]

Prophet Dawud Alaihis Salam ate only from the labor of his own hands and would ask Allah to provide for him from the work of his own labor so that he would not need to take anything from the treasury. Almighty Allah tells us,


ألنا له الحديد ۔ أن اعمل سابغات وقدر في السرد
"and We made iron soft for him. 'Make large coats of armour and keep proper measure while making;'" [Surah Saba : 10-11]


Sayyiduna Dhul-Kifl Alaihis Salam - Iraq

Prophet Muhammad Peace and Blessings of Allah be Upon Him told his Companions,


أحب الصلاة إلى الله صلاة داود ، وأحب الصيام إلى الله صيام داود : كان ينام نصف الليل ، و يقوم ثلثه ، و ينام سدسه ، و يصوم يوماً و يفطر يوماً و كان يلبس الصوف ، و يفترش الشعر ، و يأكل خبز الشعير بالملح والرماد ، و يمزج شرابه بالدموع ، و لم ير ضاحكاً بعد الخطيئة ، ولا شاخصاً ببصره إلى السماء ، حياء من ربه ، و لم يزل باكياً حياته كلها . و قيل : بكى حتى نبت العشب نت دموعه ، و حتى اتخذت الدموع في خذه أخدوداً . و قيل : كان يخرج متنكراً يتعرف سيرته ، فيستمع الثناء عليه ، فيزداد تواضعاً
"The prayer Allah loves most is that of Dawud, and the fast He loves most is that of Dawud. He would sleep for half of the night, stand up for a third and sleep for a sixth. He would fast alternate days. He wore wool and slept on hair. He ate barley bread mixed with salt and ashes. His drink was mixed with tears after his error of inaccurate judgment in which he had passed judgment before hearing from the second party. He was never seen to laugh nor look upwards to the sky because of his shyness before his Lord and he wept continuously until he died. It is said that he wept until plants sprang up from his tears and until the tears formed a crease on his cheeks, and that when he went out he would disguise himself to learn what people thought of his justice, and upon hearing people praise him, he became more humble." [Sahih Bukhari, Volume 4, Page 128 – Sahih Muslim, Volume 2, Page 816 – Kitab az-Zuhud, Page 71 – Ash-Shifa, Volume 1, Page 140]

Eisa Alaihis Salam was asked, "Why don't you ride a donkey?" He replied,


أنا أكرم على الله من أن يشغلني بحمار
"I exalt Allah so much to be occupied with tending to a donkey." [Musannaf Abi Shayba as stated in Manabil as-Safa of Imam Suyooti, Page 87]

His clothing was made from hair and he ate from the trees. He did not have a house and would sleep wherever sleep overtook him. The name he most liked to be called by was "the very poor". [Kitab az-Zuhud]


Sayyiduna Danial Alaihis Salam - Mousul, Iraq

Prophet Muhammad Peace and Blessings of Allah be Upon Him spoke of the trials of previous prophets saying,


لقد كان الأنبياء قبلي يبتلي أحدهم بالفقر و القمل ، و كان ذلك أحب إليهم من العطاء إليكم
"Some of the prophets before me were tested with poverty and lice. They preferred those trials to gifts." [Mustadrak, Volume 4, Page 307]

Mujahid tells us that Prophet Yahya's food was that of herbs and he wept so much on account of his fear of Allah that puffed-up folds formed on his cheeks. To avoid people he would eat in the company of wild animals. [al-Bidaya wa an-Nihaya, Volume 1, Page 149]

Tibri narrated from Wahb Ibn Munabbih that Moosa sought shelter in a hut. He ate and sipped from a stone with a hollow in it. In humility he sipped in a way similar to that of an animal because of the honor Allah had shown him by speaking to him. [Ash-Shifa, Volume 1, Page 141]  



Sayyiduna Ayyub Alaihis Salam - Between Babil and Kufa, Iraq

These reports have all been recorded and the perfect attributes of the prophets and messengers together with their good character, handsome features and qualities are well known so we will not linger any more on them. Should you read contrary to these reports in other books, know that the historian or commentator is among the ill-informed.





--

Monday, 24 October 2011

♥ فضائل شب معراج شریف ♥

0 comments

♥ فضائل شب معراج شریف ♥
یوم بعثت نبوی صلی اللہ علیہ وسلم


http://a5.sphotos.ak.fbcdn.net/hphotos-ak-ash4/263125_10150212659455334_672380333_7776762_3555355_n.jpg

بیہقی شعب الایمان اور دیلمی نے مسند الفردوس میں سلمان فارسی رضی اﷲ تعالیٰ عنہ سے مرفوعاً روایت كی:
فی رجب یوم ولیلة من صام ذٰلك الیوم وقام تلك اللیلة كان كمن صام من الدهر مائة سنة وقام مائة سنة وھو  لثلث بقین من رجب وفیه بعث اﷲ تعالٰی محمدا صلی اﷲ تعالٰی علیه وسلّم۔
رجب میں ایک دن اور رات ہے جو اس دن كا روزہ ركھے اور وُہ رات نوافل میں گزارے سَو برس كے روزوں اور سَو برس كے شب بیداری كے برابر ہو، اور وہ ۲۷رجب ہے اسی تاریخ اﷲ عزوجل نے محمد صلی اﷲ تعالیٰ علیہ وسلم كو مبعوث فرمایا۔

الفردوس بمأثور الخطاب حدیث ٤
۳۸۱ دارالكتب العلمیہ بیروت ۳ /۱٤۲
شعب الایمان حدیث
۳۸۱۱ دارالكتب العلمیہ بیروت ۳ /۳۷٤

نیز اسی میں بطریق ابان بن عیاش حضرت انس رضی اﷲ تعالیٰ عنہ سے مرفوعاً مروی:
فی رجب لیلة یكتب للعامل فیھا حسنات مائة سنة، وذٰلك لثلٰث بقین من رجب فمن صلی فیه اثنتی عشرة ركعة یقرأ فی كل ركعة فاتحة الكتاب وسورة من القرأن، ویتشھد فی كل ركعة ویسلم فی اٰخرهن، ثم یقول، سبحٰن اﷲ والحمدﷲ ولاالٰہ الااﷲ واﷲ اكبر مائة مرة ویستغفر اﷲ مائة مرة ویصلی عن النّبی صلی اﷲتعالٰی علیہ وسلم مائة مرة ویدعو لنفسہ ماشاء من امر دنیاه واٰخرته ویصبح صائما فان اﷲ یستجیب دعاء كلہ الاان یدعوفي معصیة۔
رجب میں ایک رات ہے كہ اس میں عمل نیك كرنے والے كو سَو برس كی نیكیوں كا ثواب ہے اور وہ رجب كی ستائیسویں شب ہے جو اس میں بارہ ركعت پڑھے ہرركعت میں سورہ فاتحہ اور ایك سورت، اور ہر دوركعت پر التحیات اور آخر میں بعد سلام سبحن اﷲ والحمد ﷲ ولاالٰہ الا اﷲ واﷲ اكبرسو بار، استغفار سَو بار، درود سو بار، اور اپنی دنیا وآخرت سے جس چیز كی چاہے دعا مانگے اور صبح كو رزہ ركھے تو اﷲ تعالیٰ اس كی سب دعائیں قبول فرمائے سوائے اس دُعا كے جو گناہ كے لیے ہو۔ (شعب الایمان حدیث ۳۸۱۲۱ دارالكتب العلمیہ بیروت ۳ /۳۷٤)

فوائد ہناد میں انس رضی اﷲ تعالٰی عنہ سے مروی:
بعث نبیا فی السابع والعشرین رجب فمن صام ذٰلك الیوم ودعا عند افطارہ كان لہ كفارة عشر سنتین۔
۲۷ رجب كو مجھے نبوت عطا ہُوئی جو اس دن كا روزہ ركھے اور افطار كے وقت دُعا كرے دس برس كے گناہوں كا كفارہ ہو۔ (تنزیه الشریعة بحوالہ فوائد ہناد كتاب الصوم حدیث ٤۱ دارالكتب العلمیة بیروت ۳ /۱٦۱)

جزء ابی معاذ مروزی میں بطریق شہر ابن حوشب ابوھریرہ رضی اﷲ تعالیٰ عنہ سے موقوفاً مروی:
من صام یوم سبع وعشرین من رجب كتب اﷲ له صیام ستین شھرا وھو الیوم الذی هبط فیه جبریل علی محمد صلی اﷲ تعالٰی علیه وسلم بالرسالة۔
جو رجب كی ستائیسویں كا روزہ ركھے تو اﷲ تعالیٰ اس كے لیے ساٹھ مہینوں كے روزوں كا ثواب لكھے، اور وُہ وُہ دن ہے جس میں جبریل علیہ الصلٰوة والسلام محمد صلّی اﷲ تعالیٰ علیہ و سلم كے لیے پیغمبری لے كر نازل ہُوئے۔ (تنزیه الشریعة بحوالہ جزء ابی معاذ كتاب الصوم حدیث ٤۱ دارا لكتب العلمیه بیروت ۳ /۱٦۱)

تنزیه الشریعة سے ماثبت من السّنة میں ہے:
وھذا أمثل ما ورد فی ھذا المعنی۔
یہ اُن سب حدیثوں سے بہتر ہے جو اس باب میں آئیں۔ بالجملہ اس كے لیے اصل ہے اور فضائلِ اعمال میں حدیثِ ضعیف باجماعِ ائمہ مقبول ہے واﷲتعالٰی اعلم۔

تنزیه الشریعة بحوالہ جزء ابی معاذ كتاب الصوم حدیث ٤
۱ دارا لكتب العلمیہ بیروت ۳ /۱٦۱
ما ثبت بالسنة مع اردو ترجمہ ذكرماہِ رجب ارادہ نعیمیہ رضویہ لال كھوہ موچی گیٹ لاہور ص
۲۳٤

http://a1.sphotos.ak.fbcdn.net/hphotos-ak-snc6/270877_10150212659070334_672380333_7776757_2123253_n.jpg


Saturday, 22 October 2011

شب براٗت :مغفرت و رحمت کی رات

0 comments



https://fbcdn-sphotos-a.akamaihd.net/hphotos-ak-ash4/282679_10150235577920334_672380333_7952943_1640316_n.jpg
ماہِ شعبان کی پندرہویں رات کو شبِ برأت کہا جاتا ہے شب کے معنی ہیں رات اور برأت کے معنی بری ہونے اور قطع تعلق کرنے کے ہیں ۔ چونکہ اس رات مسلمان توبہ کرکے گناہوں سے قطع تعلق کرتے ہیں اور اللہ تعالیٰ کی رحمت سے بے شمار مسلمان جہنم سے نجات پاتے ہیں اس لیے اس رات کو شبِ برأت کہتے ہیں ۔ اس رات کو لیلۃ المبارکۃ یعنی برکتوں والی رات، لیلۃ الصک یعنی تقسیم امور کی رات اور لیلۃ الرحمۃ یعنی رحمت نازل ہونے کی رات بھی کہا جاتا ہے۔

جلیل القدر تابعی حضرت عطاء بن یسار رضی اللہ تعالیٰ عنہ، فرماتے ہیں ، ''لیلۃ القدر کے بعد شعبان کی پندرھویں شب سے افضل کوئی رات نہیں ''۔ (لطائف المعارف ص ١٤٥)

جس طرح مسلمانوں کے لیے زمین میں دو عیدیں ہیں اس یطرح فرشتوں کے آسمان میں دو عیدیں ہیں ایک شبِ برأت اور دوسری شبِ قدر جس طرح مومنوں کی عیدیں عید الفطر اور عید الاضحٰی ہین فرشتوں کی عیدیں رات کو اس لیے ہیں کہ وہ رات کو سوتے نہیں جب کہ آدمی رات کو سوتے ہیں اس لیے ان کی عیدیں دن کو ہیں ۔ (غنیۃ الطالبین ص ٤٤٩)
https://fbcdn-sphotos-a.akamaihd.net/hphotos-ak-snc6/262264_10150235552745334_672380333_7952886_7222619_n.jpg

تقسیمِ امور کی رات

ارشاد باری تعالیٰ ہوا، ''قسم ہے اس روشن کتاب کی بے شک ہم نے اسے برکت والی رات میں اتارا، بے شک ہم ڈر سنانے والے ہیں اس میں بانٹ دیا جاتا ہے ہر حکمت والا کام''۔ (الدخان ٢ تا ٤ ، کنزالایمان)
''اس رات سے مراد شبِ قدر ہے یا شبِ برأت'' (خزائن العرفان) ان آیات کی تفسیر میں حضرتِ عکرمہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ، اور بعض دیگر مفسرین نے بیان کیا ہے کہ ''لیلۃ مبارکۃ'' سے پندرہ شعبان کی رات مراد ہے ۔ اس رات میں زندہ رہنے والے ، فوت ہونے والے اور حج کرنے والے سب کے ناموں کی فہرست تیار کی جاتی ہے اور جس کی تعمیل میں ذرا بھی کمی بیشہ نہیں ہوتی ۔ اس روایت کو ابن جریر، ابن منذر اور ابنِ ابی حاتم نے بھی لکھا ہے۔ اکثر علماء کی رائے یہ ہے کہ مذکورہ فہرست کی تیاری کا کام لیلۃ القدر مین مکمل ہوتا ہے۔ اگرچہ اس کی ابتداء پندرہویں شعبان کی شب سے ہوتی ہے۔ (ماثبت من السنہ ص ١٩٤)

علامہ قرطبی مالکی رحمتہ اللہ علیہ فرماتے ہیں
ایک قول یہ ہے کہ ان امور کے لوحِ محفوظ سے نقل کرنے کا آغاز شبِ برأت سے ہوتا ہے اور اختتام لیلۃ القدر میں ہوتا ہے۔ (الجامع الاحکام القرآن ج ١٦ ص ١٢٨)

یہاں ایک شبہ یہ پیدا ہوتا ہے کہ یہ امور تو پہلے ہی سے لوح محفوظ میں تحریر ہیں پھر اس شب میں ان کے لکھے جانے کا کیا مطلب ہے؟ جواب یہ ہے کہ یہ امور بلاشبہ لوح محفوظ مین تحریر ہیں لیکن اس شب میں مذکورہ امور کی فہرست لوح محفوظ سے نقل کرکے ان فرشتوں کے سپرد کی جاتی ہے جن کے ذمہ یہ امور ہیں ۔

حضرتِ عائشہ صدیقہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا فرماتی ہیں
رسول کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا کیا تم جانتی ہو کہ شعبان کی پندرہویں شب میں کیا ہوتا ہے؟ میں نے عرض کی یا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم آپ فرمائیے۔ ارشاد ہوا آئندہ سال مین جتنے بھی پیدا ہونے والے ہوتے ہیں وہ سب اس شب میں لکھ دئیے جاتے ہیں اور جتنے لوگ آئندہ سال مرنے والے ہوتے ہیں وہ بھی اس رات مین لکھ دئیے جاتے ہیں اور اس رات میں لوگوں کا مقررہ رزق اتارا جاتاہے۔ (مشکوٰۃ جلد ١ ص ٢٧٧)

حضرت عطاء بن یسار رضی اللہ تعالیٰ عنہ، فرماتے ہیں،
''شعبان کی پندرہویں رات میں اللہ تعالیٰ ملک الموت کو ایک فہرست دے کر حکم فرماتا ہے کہ جن جن لوگوں کے نام اس میں لکھے ہیں ان کی روحوں کو آئندہ سال مقررہ وقتوں پر قبض کرنا۔ تو اس شب میں لوگوں کے حالات یہ ہوتے ہیں کہ کوئی باغوں میں درخت لگانے کی فکر میں ہوتا ہے کوئی شادی کی تیاریوں میں مصروف ہوتا ہے۔ کوئی کوٹھی بنگلہ بنوا رہا ہوتا ہے حالانکہ ان کے نام مُردوں کی فہرست میں لکھے جاچکے ہوتے ہیں ۔ (مصنف عبد الرزاق جلد ٤ ص ٣١٧ ، ماثبت من السنہ ص ١٩٣)

حضرت عثمان بن محمد رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے مروی ہے کہ
سرکار مدینہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا ایک شعبان سے دوسرے شعبان تک لوگوں کی زندگی منقطع کرنے کا وقت اس رات میں لکھا جاتا ہے یہاں تک کہ انسان شادی بیاہ کرتا ہے اور اس کے بچے پیدا ہوتے ہیں حالانکہ اس کا نام مُردوں کی فہرست میں لکھا جاچکا ہوتا ہے۔ (الجامع الاحکام القرآن ج ١٦ ص ١٢٦، شعب الایمان للبیہقی ج ٣ ص ٣٨٦)

چونکہ یہ رات گذشتہ سال کے تمام اعمال بارگاہِ الہٰی میں پیش ہونے اور آئندہ سال ملنے والی زندگی اور رزق وغیرہ کے حساب کتاب کی رات ہے اس لیے اس رات میں عبادت الہٰی میں مشغول رہنا رب کریم کی رحمتوں کے مستحق ہونے کا باعث ہے اور سرکار دو عالم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی یہی تعلیم ہے۔
https://fbcdn-sphotos-a.akamaihd.net/hphotos-ak-ash4/262194_10150235552470334_672380333_7952882_6008877_n.jpg

مغفرت کی رات

شبِ برأت کی ایک بڑی خصوصیت یہ ہے کہ اس شب میں اللہ تعالیٰ اپنے فضل و کرم سے بے شمار لوگوں کی بخشش فرما دیتا ہے اسی حوالے سے چند احادیث مبارکہ ملاحظہ فرمائیں ۔

(١) حضرت عائشہ صدیقہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا فرماتی ہیں،
ایک رات میں نے حضور اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو اپنے پاس نہ پایا تو میں آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی تلاش میں نکلی میں نے دیکھا کہ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم جنت البقیع میں تشریف فرما ہیں آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا کیا تمہیں یہ خوف ہے کہ اللہ تعالیٰ اور اس کے رسول صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم تمہارے ساتھ زیادتی کریں گے۔ میں نے عرض کی یا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم مجھے یہ خیال ہوا کہ شاید آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کسی دوسری اہلیہ کے پاس تشریف لے گئے ہیں آقا و مولیٰ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا بیشک اللہ تعالیٰ شعبان کی پندرہویں شب آسمانِ دنیا پر (اپنی شان کے مطابق) جلوہ گر ہوتا ہے اور قبیلہ بنو کلب کی بکریوں کے بالوں سے زیادہ لوگوں کی مغفرت فرماتا ہے۔ (ترمذی جلد ١ ص ١٥٦، ابن ماجہ ص ١٠٠، مسند احمد جلد ٦ ص ٢٣٨، مشکوٰۃ جلد ١ ص ٢٧٧، مصنف ابنِ ابی شعبہ ج ١ ص ٣٣٧، شعب الایمان للبیہقی جلد ٣ ص ٣٧٩)

شارحین فرماتے ہیں کہ یہ حدیث پاک اتنی زیادہ اسناد سے مروی ہے کہ درجہ صحت کو پہنچ گئی۔

(٢) حضرتِ ابو بکر صدیق رضی اللہ تعالیٰ عنہ، سے روایت ہے کہ آقا و مولیٰ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا،
''شعبان کی پندرہویں شب میں اللہ تعالیٰ آسمانِ دنیا پر (اپنی شان کے مطابق) جلوہ گر ہوتا ہے اور اس شب میں ہر کسی کی مغفرت فرما دیتا ہے سوائے مشرک اور بغض رکھنے والے کے''۔ (شعب الایمان للبیہقی جلد ٣ ص ٣٨٠)

(٣) حضرت ابو موسیٰ اشعری رضی اللہ تعالیٰ عنہ، سے مروی ہے کہ
نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا ارشاد ہے اللہ تعالیٰ شعبان کی پندرہویں شب مین اپنے رحم و کرم سے تمام مخلوق کو بخش دیتا ہے سوائے مشرک اور کینہ رکھنے والے کے''۔ (ابنِ ماجہ ص ١٠١، شعب الایمان ج ٣ ص ٣٨٢، مشکوٰۃ جلد ١ ص ٢٧٧)

(٤) حضرت ابوہریرہ ، حضرت معاذ بن جبل، حضرت ابو ثعلیۃ اور حضرت عوف بن مالک رضی اللہ تعالیٰ عنہم سے بھی ایسا ہی مضمون مروی ہے۔ (مجمع الزوائد ج ٨ ص ٦٥)

(٥) حضرت عبد اللہ بن عمرو بن عاص رضی اللہ تعالیٰ عنہما سے روایت ہے کہ
آقا و مولیٰ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا، ''شعبان کی پندرہویں رات میں اللہ تعالیٰ اپنی رحمت سے دو شخصوں کے سوا سب مسلمانوں کی مغفرت فرمادیتا ہے ایک کینہ پرور اور دوسرا کسی کو ناحق قتل کرنے والا''۔ (مسند احمد ج ٢ ص ١٧٦، مشکوٰۃ جلد ١ ص ٢٧٨)

(٦) امام بیہقی نے شعب الایمان (ج ٣ ص ٣٨٤) میں حضرت عائشہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا کی ایک طویل روایت بیان کی ہے جس میں مغفرت سے محروم رہنے والوں میں ان لوگوں کا بھی ذکر رشتے ناتے توڑنے والا، بطور تکبر ازار ٹخنوں سے نیچے رکھنے والا، ماں باپ کا نافرمان، شراب نوشی کرنے والے۔

(٧) غنیۃ الطالبین ص ٤٤٩ پر حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ، سے مروی طویل حدیچ میں مزید ان لوگوں کا بھی ذکر ہے جادوگر، کاہن، سود خور اور بد کار، یہ وہ لوگ ہیں کہ اپنے اپنے گناہوں سے توبہ کیے بغیر ان کی مغفرت نہیں ہوتی۔ پس ایسے لوگوں کو چاہیے کہ اپنے اپنے گناہوں سے جلد از جلد سچی توبہ کرلیں تاکہ یہ بھی شب برأت کی رحمتوں اور بخشش و مغفرت کے حقدار ہوجائیں۔

ارشاد باری تعالیٰ ہوا ''اے ایمان والو اللہ کی طرف ایسی توبہ کرو جو آگے نصیحت ہوجائے''۔ (التحریم ٨ ، کنزالایمان)

یعنی توبہ ایسی ہونی چاہیے جس کا اثر توبہ کرنے والے کے اعمال میں ظاہر ہو اور اس کی زندگی گناہوں سے پاک اور عبادتوں سے معمور ہوجائے۔
حضرت معاذ بن جبل رضی اللہ تعالیٰ عنہ، نے بارگاہ رسالت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم میں عرض کی۔ یارسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم توبۃ النصوح کسے کہتے ہیں اشاد ہوا بندہ اپنے گناہ پر سخت نادم اور شرمدسار ہو۔ پھر بارگاہ الہٰی میں گڑگڑا کر مغفرت مانگے۔ اور گناہوں سے بچنے کا پختہ عزم کرے تو جس طرح دودھ دوبارہ تھنوں میں داخل نہیں ہوسکتا اسی طرح اس بندے سے یہ گناہ کبھی سرزد نہ ہوگا۔
https://fbcdn-sphotos-a.akamaihd.net/hphotos-ak-ash4/281445_10150235552535334_672380333_7952883_6760174_n.jpg

رحمت کی رات

شبِ برأت فرشتوں کو بعض امور دئیے جانے اور مسلمانوں کی مغفرت کی رات ہے اس کی ایک او ر خصوصیت یہ ہے کہ یہ رب کریم کی رحمتوں کے نزول کی اور دعاؤں کے قبول ہونے کی رات ہے۔

١۔ حضرت عثمان بن ابی العاص رضی اللہ تعالیٰ عنہ، سے روایت ہے کہ
حضور اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا ارشاد ہے۔ ''جب شعبان کی پندرہویں شب آتی ہے تو اللہ تعالیٰ کی طرف سے اعلان ہوتا ہے، ہے کوئی مغفرت کا طالب کہ اس کے گناہ بخش دوں ، ہے کوئی مجھ سے مانگنے والا کہ اسے عطا کروں ۔ اس وقت اللہ تعالیٰ سے جو مانگا جائے وہ ملتا ہے۔ وہ سب کی دعا قبول فرماتا ہے سوائے بدکار عورت اور مشرک کے''۔ (شعب الایمان للبیہقی ج٣ ص ٣٨٣)

٢۔ حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہ، سے روایت ہے کہ غیب بتانے والے آقا و مولیٰ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا
جب شعبان کی پندرھویں شب ہو تورات کو قیام کرو اور دن کو روزہ رکھو کیونکہ غروب آفتاب کے وقت سے ہی اللہ تعالیٰ کی رحمت آسمان دنیا پر نازل ہوجاتی ہے اور اللہ تعالیٰ ارشاد فرماتا ہے، ہے کوئی مغفرت کا طلب کرنے والا کہ میں اسے بخش دوں ۔ ہے کوئی رزق مانگنے والا کہ میں اس کو رزق دوں ہے کوئی مصیبت زدہ کہ میں اسے مصیبت سے نجات دوں ، یہ اعلان طلوع فجر تک ہوتا رہتا ہے۔ (ابنِ ماجہ ص ١٠٠، شعب الایمان للبیہقی ج ٣ ص ٣٧٨، مشکوٰۃ ج ١ ص ٢٧٨)

اس حدیث پاک میں اللہ تعالیٰ کی طرف سے مغفرت و رحمت کی ندا کا ذکر ہے اگرچہ یہ ندا ہر رات میں ہوتی ہے لیکن رات کے آخری حصے میں جیسا کہ کتاب کے آغاز میں شبِ بیداری کی فضیلت کو عنوان کے تحت حدیث پاک تحریر کی گئی شبِ برأت ی خاص بات یہ ہے کہ اس میں یہ ندا غروب آفتاب ہی سے شروع ہوجاتی ہے گویا صالحین اور شبِ بیدار مومنوں کے لیے تو ہر رات شبِ برأت ہے مگر یہ رات خطاکاروں کے لیے رحمت و عطا اور بخشش و مغفرت کی رات ہے اس لیے ہمیں شاہیے کہ اس رات میں اپنے گناہوں پر ندامت کے آنسو بہائیں اور ربِ کریم سے دنیا و آخرت کی بھلائی مانگیں ۔ اس شب رحمتِ خداوندی ہر پیاسے کو سیراب کردینا چاہتی ہے اور ہر منگتے کی جھولی گوہرِ مراد سے بھر دینے پر مائل ہوتی ہے۔ بقول اقبال، رحمت الہٰی یہ ندا کرتی ہے
ہم تو مائل بہ کرم ہیں کوئی سائل ہی نہیں ۔۔۔ راہ دکھلائیں کسے راہرو منزل ہی نہیں

https://fbcdn-sphotos-a.akamaihd.net/hphotos-ak-snc6/268215_10150235552570334_672380333_7952884_3990070_n.jpg

شبِ بیداری کا اہتمام

شبِ برأت میں سرکار دو عالم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے خود بھی شبِ بیداری کی اور دوسروں کو بھی شبِ بیداری کی تلقین فرمائی آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا فرمان عالیشان اوپر مذکور ہوا کہ "جب شعبان کی پندرہویں رات ہو تو شبِ بیداری کرو اور دن کو روزہ رکھو'' اس فرمان جلیل کی تعمیل میں اکابر علمائے اہلسسنت اور عوام اہلسنت کا ہمیشہ سے یہ معمول رہا ہے کہ رات میں شبِ بیداری کا اہتمام کرتے چلے آئے ہیں۔

شیخ عبد الحق محدث دہلوی رحمتہ اللہ علیہ فرماتے ہیں،
''تابعین میں سے جلیل القدر حضرات مثلاً حضرت خالد بن معدان، حضرت مکحول، حضرت لقمان بن عامر اور حضرت اسحٰق بن راہویہ رضی اللہ تعالیٰ عنہم مسجد میں جمع ہو کر شعبان کی پندرہویں شب میں شبِ بیداری کرتے تھے اور رات بھر مسجد میں عبادات میں مصروف رہتے تھے''۔ (ما ثبت من السنہ ٢٠٢، لطائف المعارف ص ١٤٤)

علامہ ابنِ الحاج مانکی رحمتہ اللہ علیہ شبِ برأت کے متعلق رقم طراز ہیں
''اور کوئی شک نہیں کہ یہ رات بڑی بابرکت اور اللہ تعالیٰ کے نزدیک بڑی عظمت والی ہے۔ ہمارے اسلاف رضی اللہ تعالیٰ عنہیم اس کی بہت تعظیم کرتے اور اس کے آنے سے قبل اس کے لیے تیاری کرتے تھے۔ پھر جب یہ رات آتی تو وہ جوش و جذبہ سے اس کا استقبال کرتے اور مستعدی کے ساتھ اس رات میں عبادت کیا کرتے تھے کیونکہ یہ بات ثابت ہوچکی ہے کہ ہمارے اسلاف شعائر اللہ کا بہت احترام کیا کرتے تھے۔" (المدخل ج ١ ص ٣٩٢)

مذکورہ بالا حوالوں سے یہ بات ثابت ہوئی کہ اس مقد رات مین مسجد مین جمع ہوکر عبادات میں مشغول رہانا اور اس رات شبِ بیداری کا اہتمام کرنا تابعین کرام کا طریقہ رہا ہے۔

شیخ عبد الحق محدث دہلوی قدس سرہ فرماتے ہیں،
''اب جو شخص شعبان کی پندرہویں رات مین شبِ بیداری کرے تو یہ فعل احادیث کی مطابقت میں بالکل مستحب ہے۔ رسول کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا یہ عمل بھی احادیث سے ثابت ہے کہ شبِ برأت میں آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم مسلمانوں کی دعائے مغفرت کے لیے قبرستان تشریف لے گئے تھے۔" (ماثبت من السنہ ص ٢٠٥)

آقا و مولیٰ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے زیارت قبور کی ایک بڑی حکمت یہ بیان فرمائی ہے کہ اس رات موت یاد آتی ہے۔ اور آخرت کی فکر پیدا ہوتی ہے۔ شبِ برأت میں زیارتِ قبور کا واضح مقصد یہی ہے کہ اس مبارک شب میں ہم اپنی موت کو یاد کریں تاکہ گناہوں سے سچی توبہ کرنے میں آسانی ہو۔ یہی شبِ بیداری کا اصل مقصد ہے۔

اس سلسلے میں حضرت حسن بصری رضی اللہ تعالیٰ عنہ، کا ایمان افروز واقعہ بھی ملاحظہ فرمائیں منقول ہے کہ
جب آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ، شبِ برأت میں گھر سے باہر تشریف لائے تو آپ کا چہرہ یوں دکھائی دیتا تھا جس طرح کسی کوقبر میں دفن کرنے کے بعد باہر نکالا گیا ہو۔ آپ سے اس کا سبب پوچھا گیا تو آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ، نے فرمایا خدا کی قسم میری مثال ایسی ہے جیسے کسی کی کشتی سمند میں ٹوٹ چکی ہو اور وہ ڈوب رہا ہو اور بچنے کی کوئی امید نہہو۔ پوچھا گیا آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ، کی ایسی حالت کیوں ہے؟ فرمایا میرے گناہ یقینی ہیں ۔ لیکن اپنی نیکیوں کے متعلق میں نہیں جانتا کہ وہ مجھ سے قبول کی جائیں گی یا پھر رد کردی جائیں گی۔ (غنیۃ الطالبین ص ٢٥٠)

اللہ اکبر نیک و متقی لوگوں کا یہ حال ہے جو ہر رات شبِ بیداری کرتے ہیں اور تمام دن اطاعتِ الہٰی میں گزارتے ہیں جب کہ اس کے برعکس کچھ لوگ ایسے کم نصیب ہیں جو اس مقدس رات میں فکر آخرت اور عبادت و دعا میں مشغول ہونے کی بجائے مزید لہو و لعب میں مبتلا ہوجاتے ہیں آتش بازی پٹاخے اور دیگر ناجائز امور میں مبتلا ہوکر وی اس مبارک رات کا تقد س پامال کرتے ہیں ۔ حالانکہ آتش بازی اور پٹاخے نہ صرف ان لوگوں اور ان کے بچوں کی جان کے لیے خطرہ ہیں بلکہ ارد گرد کے لوگوں کی جان کے لیے بھی خطرتے کا باعث بنتے ہیں ۔ ایسے لوگ ''مال برباد اور گناہ لازم'' کا مصداق ہیں ۔

ہمیں چاہیے کہ ایسے گناہ کے کاموں سے خود بھی بچیں اور دوسروں کو بھی بچائیں اور بچوں کو سمجھائیں کہ ایسے لغو کاموں سے اللہ تعالیٰ اور اس کے پیارے حبیب صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ناراض ہوتے ہیں ۔ مجدد برحق اعلیٰ ھضرت امام احمد رضا محدث بریلوی رحمتہ اللہ علیہ فرماتے ہیں ۔ آتش بازی جس طرح شادیوں اور شب برأت میں رائج ہے بے شک حرام اور پورا جرم ہے کہ اس میں مال کا ضیاع ہے۔ قرآن مجید میں ایسے لوگوں کو شیطان کے بھائی فرمایا گیا۔ ارشاد ہوا،
''اور فضول نہ اڑا بے شک (مال) اڑانے والے شیطانوں کے بھائی ہیں ''۔ (بنی اسرائیل)

شعبان کے روزے

نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا ارشادِ گرامی ہے،
''جن لوگوں کی روحیں قبض کرنی ہوتی ہیں ان کے ناموں کی فہرست ماہِ شعبان مٰں ملک الموت کو دی جاتی ہے اس لیے مجھے یہ بات پسند ہے کہ میرا نام اس وقت فہرست میں لکھا جائے جب کہ میں روزے کی حالت میں ہوں''۔

یہ حدیث پہلے مذکورہ ہو چکی کہ مرنے والوں کے ناموں کی فہرست پندرہویں شعبان کی رات کو تیار کی جاتی ہے۔ حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے اس ارشاد سے معلوم ہوا کہ اگرچہ رات کے وقت روزہ نہیں ہوتا اس کے باوجود روزہ دار لکھے جانے کا مطلب یہ ہے کہ بوقت کتاب (شب) اللہ تعالیٰ روزی کی برکت کو جاری رکھتا ہے۔ (ماثبت من السنہ ١٩٢)

حضرت عائشہ صدیقہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا فرماتی ہیں کہ،
''میں نے آقا و مولیٰ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو ماہِ رمضان کے علاوہ ماہِ شعبان سے زیادہ کسی مہینے میں روزے رکھتے نہیں دیکھا''۔ (بخاری، مسلم، مشکوٰۃ جلد ١ ص ٤٤١)

ایک اور روایت میں فرمایا،
''نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم چند دن چھوڑ کر پورے ماہِ شعبان کے روزے رکھتے تھے''۔ (ایضاً)

https://fbcdn-sphotos-a.akamaihd.net/hphotos-ak-snc6/261202_10150235552435334_672380333_7952881_4740075_n.jpg

--
کتاب: مبارک راتیں
تحریر: علامہ سید شاہ تراب الحق قادری