Monday, 30 July 2012

Sayyida Zaahira Tayyiba Taahira Fatimah az-Zahra Radi Allahu Ta'ala Anha

0 comments


https://fbcdn-sphotos-a.akamaihd.net/hphotos-ak-ash4/184103_10150252240560334_672380333_8125933_8058127_n.jpg

Blessed be that symbol of honor; Pious Batool, our Prophet’s daughter
Blessed be the veils of graces; Which from sun and moon hid their faces
Blessed be our Prophet’s beloved daughter; Pious, pure and women’s leader


Sayyidah Fatimah az-Zahra Radi Allahu Ta'ala Anha was the fourth daughter of the Holy Prophet SallAllahu Alaihi wa Sallam and Sayyidah Khadija Radi Allahu Ta'ala Anha. "Zahra" (having gleaming and luminous face), "Batool" (aloof from the worldly pleasures) and "Tahira" (chaste and modest) are among her exalted titles.

She was an unusually sensitive child of her age.
When she was five, she heard that her father had announced his Prophethood. Her mother Sayyidah Khadija Radi Allahu Ta'ala Anha explained to her what the responsibilities of a Prophet are. Sayyidah Fatimah Radi Allahu Ta'ala Anha became more closely attached to her father and felt a deep and abiding love for him. She used to accompany him through the narrow streets of Makkatul Mukarrama, visiting the Ka’bah or attending the secret meetings of the early Muslims who had embraced Islam and pledged allegiance to her father.

Once, she accompanied her father to the Masjid al-Haraam. Sayyiduna Rasoolullah SallAllahu Alaihi wa Sallam began to pray in front of the Ka’bah. A group of Quraysh chiefs gathered around the Holy Prophet SallAllahu Alaihi wa Sallam. Uqbah bin Abi Mu’ayt brought the entrails of a slaughtered animal and threw it on the shoulders of the Beloved Habeeb SallAllahu Alaihi wa Sallam. Sayyidah Fatimah Radi Allahu Ta'ala Anha, a ten year old girl, went up to her father and removed the filth. Then, in a firm and angry voice she lashed out against Abu Jahl and his colleagues. They could not utter a single word.

https://fbcdn-sphotos-a.akamaihd.net/hphotos-ak-snc6/285040_10150252241685334_672380333_8125940_6122415_n.jpg

After the demise of her mother, Sayyidah Khadija Radi Allahu Ta'ala Anha, she felt that she had to give even greater support to her father. She devoted herself to looking after his needs. She was so engrossed in her father’s service that people started calling her “Umm Abiha”, the mother of her father. The Holy Prophet SallAllahu Alaihi wa Sallam had a special love for Sayyidah Fatimah Radi Allahu Ta'ala Anha.

Sayyiduna Miswar bin Makhramah Radi Allahu Ta'ala Anha reported that the Holy Prophet SallAllahu Alaihi wa Sallam said:

فاطمة بضعة منى ، فمن أغضبها أغضبنى
“My daughter is part of me. He who disturbs her in fact disturbs me and he who offends her offends me.” [Sahih al-Bukhari, Hadith 3767]


The Holy Prophet SallAllahu Alaihi wa Sallam also said:

حسبك من نساء العالمين أربع مريم بنت عمران و آسية امرأة فرعون و خديجة بنت خويلد و فاطمة بنت محمد
“The best women in the entire world are four: The Virgin Mariyam Radi Allahu Ta'ala Anha daughter of Imran and Aasiya Radi Allahu Ta'ala Anha the wife of Pharaoh and Khadija Radi Allahu Ta'ala Anha Mother of the Believers and Fatimah Radi Allahu Ta'ala Anha, daughter of Muhammad SallAllahu Alaihi wa Sallam.”
[Mustadrak al-Hakim, Vol. 4, Page 262, Hadith 4745]
 
Sayyidah Fatimah Radi Allahu Ta'ala Anha thus acquired a place of love and esteem in the Beloved Nabi’s SallAllahu Alaihi wa Sallam heart that was only occupied by his wife Sayyidah Khadija Radi Allahu Ta'ala Anha.  She was given the title of “Zahra” which means “The Resplendent One”. That was because of her beaming face, which seemed to radiate light.  She was also called “Batool” because of her purity and asceticism. She spent most of her time in the recitation of the Holy Quraan, performing Salaah and doing other acts of Ibadah.

https://fbcdn-sphotos-a.akamaihd.net/hphotos-ak-snc6/253264_10150252240490334_672380333_8125932_5348387_n.jpg

Sayyidah Ayesha Radi Allahu Ta'ala Anha said:

 أقبلت فاطمة تمشي كأن مشيتها مشي النبي صلى الله عليه وسلم، فقال: "مرحباً بابنتي". ثم أجلسها عن يمينه، أو عن شماله
“I have not seen any one of Allah’s SubHanuhu wa Ta'ala creation resemble the Messenger of Allah SallAllahu Alaihi wa Sallam more in speech, conversation and manner of sitting than Fatimah Radi Allahu Ta'ala Anha. When the Holy Prophet SallAllahu Alaihi wa Sallam saw her approaching, he would welcome her, stand up and kiss her, take her by the hand and sit her down in the place where he was sitting.” [al-Adab al-Mufrad, Page 406, Hadith 421]


Sayyidah Fatimah Radi Allahu Ta'ala Anha learnt from her father the manners and gentle speech. She was kind to the poor. She often gave her food to the needy preferring herself to remain hungry. She had no inclination towards the materialistic world. She had no craving for the ornaments of this world or the luxuries and comforts of life.

Sayyidah Fatimah Radi Allahu Ta'ala Anha was married to Sayyiduna Ali Radi Allahu Ta'ala Anha at the beginning of the second year after the Hijra. She was nineteen-year-old and Sayyiduna Ali Radi Allahu Ta'ala Anha was about twenty-one. The Holy Prophet SallAllahu Alaihi wa Sallam himself performed the Nikah. On her marriage, Sayyiduna Rasoolullah SallAllahu Alaihi wa Sallam is said to have presented Sayyidah Fatimah Radi Allahu Ta'ala Anha and Sayyiduna Ali Radi Allahu Ta'ala Anha with a wooden bed intertwined with palm leaves, a velvet coverlet, a leather cushion filled with the leaves of a plant, a sheepskin, a pot, a water-skin and a quern (A primitive hand-operated mill for grinding grain) for grinding grain.

One day Sayyiduna Ali Radi Allahu Ta'ala Anha asked her to go to her father and ask for a servant. Sayyidah Fatimah Radi Allahu Ta'ala Anha came to the Holy Prophet SallAllahu Alaihi wa Sallam. The Holy Prophet SallAllahu Alaihi wa Sallam said:

ألا أخبرك ما هو خير لك منه ، تسبحين الله عند منامك ثلاثا وثلاثين ، وتحمدين الله ثلاثا وثلاثين ، وتكبرين الله أربعا وثلاثين
“Shall I not tell you of something better than that which you asked of me? I am telling you the words, which Jibra’eel Alaihis Salam has told me. You should say Subhan-Allah (Glory be to Allah SubHanuhu wa Ta'ala) 33 times, Al-HamduLillah (Praise be to Allah SubHanuhu wa Ta'ala) 33 times and Allahu Akbar (Allah SubHanuhu wa Ta'ala is Great) 34 times.”
[Sahih al-Bukhari, Hadith 5362]

This is called “Tasbeeh-e-Fatimah” and brings blessings upon the person who regularly recites it.

https://fbcdn-sphotos-a.akamaihd.net/hphotos-ak-snc6/262595_10150252241035334_672380333_8125938_7422339_n.jpg

Before proceeding on to his Farewell Pilgrimage in Ramadaan, 10 A.H., the Holy Prophet SallAllahu Alaihi wa Sallam said to Sayyidah Fatimah Radi Allahu Ta'ala Anha:

إن جبريل كان يعارضني القرآن كل سنة مرة وإنه عارضني العام مرتين ولا أراه إلا حضر أجلي
“The Archangel Jibra’eel Alaihis Salam recited the Qur'an to me and I to him once every year, but this year he has recited it with me twice. I cannot but think that my time has come”.
[Sahih al-Bukhari, Hadith 3426]

On his return from the Farewell Pilgrimage, the Holy Prophet SallAllahu Alaihi wa Sallam became seriously ill.  He was confined to the apartment of his beloved wife Sayyidah Ayesha Radi Allahu Ta'ala Anha. When Sayyidah Fatimah Radi Allahu Ta'ala Anha visited her ailing father, Sayyidah Ayesha Radi Allahu Ta'ala Anha would leave father and the daughter together.

Sayyidah Ayesha Radi Allahu Ta'ala Anha reported:

كن أزواج النبى -صلى الله عليه وسلم- عنده لم يغادر منهن واحدة فأقبلت فاطمة تمشى ما تخطئ مشيتها من مشية رسول الله -صلى الله عليه وسلم- شيئا فلما رآها رحب بها فقال « مرحبا بابنتى ». ثم أجلسها عن يمينه أو عن شماله ثم سارها فبكت بكاء شديدا فلما رأى جزعها سارها الثانية فضحكت. فقلت لها خصك رسول الله -صلى الله عليه وسلم- من بين نسائه بالسرار ثم أنت تبكين فلما قام رسول الله -صلى الله عليه وسلم- سألتها ما قال لك رسول الله -صلى الله عليه وسلم- قالت ما كنت أفشى على رسول الله -صلى الله عليه وسلم- سره. قالت فلما توفى رسول الله -صلى الله عليه وسلم- قلت عزمت عليك بما لى عليك من الحق لما حدثتنى ما قال لك رسول الله -صلى الله عليه وسلم- فقالت أما الآن فنعم أما حين سارنى فى المرة الأولى فأخبرنى « أن جبريل كان يعارضه القرآن فى كل سنة مرة أو مرتين وإنه عارضه الآن مرتين وإنى لا أرى الأجل إلا قد اقترب فاتقى الله واصبرى فإنه نعم السلف أنا لك ». قالت فبكيت بكائى الذى رأيت فلما رأى جزعى سارنى الثانية فقال « يا فاطمة أما ترضى أن تكونى سيدة نساء المؤمنين أو سيدة نساء هذه الأمة ». قالت فضحكت ضحكى الذى رأيت.
“We, the wives of Allah’s Apostle were with him (during his last illness) and none was absent therefrom that Fatimah Radi Allahu Ta'ala Anha, who walked after the style of Allah’s Messenger SallAllahu Alaihi wa Sallam, came there, and when he saw her he welcomed her saying: ‘You are welcome, my daughter’. He then made her sit on his right side or on his left side. Then he said something secretly to her and she swept bitterly and when he found her (plunged) in grief, he said to her something secretly for the second time and she laughed. I (Ayesha Radi Allahu Ta'ala Anha) said to her: ‘Allah’s Messenger SallAllahu Alaihi wa Sallam has singled you amongst the women of the family for talking to you something secretly and you wept’. When Allah’s Messenger SallAllahu Alaihi wa Sallam recovered from illness, I said to her: ‘What did he say to you?’ Thereupon, she said: ‘I am not going to disclose the secret of Allah’s Messenger SallAllahu Alaihi wa Sallam. When the Holy Prophet SallAllahu Alaihi wa Sallam passed away, I said to her: ‘I adjure you by the right that I have upon you that you should narrate to me what Allah’s Messenger SallAllahu Alaihi wa Sallam said to you.’ She said: ‘Yes, now I can do that. When he (Prophet SallAllahu Alaihi wa Sallam) talked to me secretly for the first time he informed me that Jibra’il Alaihis Salam was in the habit of reciting the Qur'an along with him once every year, but this year it had been twice and so he perceived his death quite near, so fear Allah SubHanuhu wa Ta'ala and be patient (and he told me) that he would be a befitting forerunner for me and so I wept as you saw me. And when he saw me in grief he talked to me secretly for the second time and said: ‘Fatimah Radi Allahu Ta'ala Anha, are you not pleased that you should be at the head of the believing women or the head of this Ummah?’  I laughed and it was that laughter which you saw.”
[Sahih Muslim, Hadith 6467]

In another narration, Sayyidah Ayesha Radi Allahu Ta'ala Anha reported that when she asked Sayyidah Fatimah Radi Allahu Ta'ala Anha the reasons of her crying and laughing when her father talked to her secretly, she said:

سارني النبي صلى الله عليه و سلم فأخبرني أنه يقبض في وجعه التي توفي فيه فبكيت ثم سارني فأخبرني أني أول أهل بيته أتبعه فضحكت
“He informed me secretly of his death and so I cried. He then informed me secretly that I would be the first amongst the members of his family to follow him, so I laughed.”
[Sahih al-Bukhari, Hadith 3427 ; Sahih Muslim, Hadith 2450]

This Hadith shows the implicit faith that Sayyidah Fatimah Radi Allahu Ta'ala Anha had in the words of her father. She believed that her father was given the Knowledge of Unseen. She was quite sure that the events would take the same turn as her father had informed her. This Hadith also shows that Sayyidah Fatimah Radi Allahu Ta'ala Anha loved her father more dearly than her husband and children, and her meeting with him in the Hereafter was a source of great comfort and consolation for her.

https://fbcdn-sphotos-a.akamaihd.net/hphotos-ak-snc6/284877_10150252242050334_672380333_8125946_772929_n.jpg

Sunday, 29 July 2012

قوم عاد کے ڈھانچے: قرآن کی سچائی پرموجودہ دور میں ایک اور دلیل

0 comments


قوم عاد ، جہاں حضرت ہود علیہ السلام کو بھیجا گیا۔ جس کا مفصل ذکر قرآن میں ملتا ہے۔ جس کی جسمانی طاقت کی گواہی خالق نے دی۔

ابھی کچھ عرصہ پہلے سعودی عرب میں شمالی مشرقی ریگستانی علاقہ میں گیس کی تلاش میں کی جانے والی کھدائی کے نتیجے میں قوم عاد کے یہ ڈھانچے نمودار ہوئے۔

جو یقیناً ہم سب کے لئے ایک عبرت ہے۔

















امیج کو ری سائز کیا گیا ہے۔ 4% (680x466). فل سائز امیج دیکھنے کے لئے یہاں کلک کریں (707x484). نئی ونڈو میں دیکھنے کے لئے تصویر پر کلک کریں۔



امیج کو ری سائز کیا گیا ہے۔ 7% (680x449). فل سائز امیج دیکھنے کے لئے یہاں کلک کریں (728x480). نئی ونڈو میں دیکھنے کے لئے تصویر پر کلک کریں۔








امیج کو ری سائز کیا گیا ہے۔ 15% (680x510). فل سائز امیج دیکھنے کے لئے یہاں کلک کریں (800x600). نئی ونڈو میں دیکھنے کے لئے تصویر پر کلک کریں۔


{ألم ترَ كيف فَعل ربُّك بعاد. إِرم ذاتِ العمادِ. التي لم يُخلَقْ مثلها في البلاد} (سورة الفجر, الآيات 9,8,7).

{وأمَا عادُ فأُهلكوا بريحٍ صَرصَرٍ عاتية. سخَّرها علَيْهم سبعَ ليالٍ وثمانية أيّامٍ حُسُوماً فَتَرى القَوْمَ فيها صَرعَى كأنَّهمْ أعْجَازُ نَخْلٍ خَاوِيَة. فَهَلْ تَرَى لهُم مِنْ باقِيَة} (الحاقّة/الآيات 7 وما بعدها).
(وَاذْكُرْ أَخَا عَادٍ إِذْ أَنْذَرَ قَوْمَهُ بِالْأَحْقَافِ وَقَدْ خَلَتِ النُّذُرُ مِنْ بَيْنِ يَدَيْهِ وَمِنْ خَلْفِهِ أَلَّا تَعْبُدُوا إِلَّا اللَّهَ إِنِّي أَخَافُ عَلَيْكُمْ عَذَابَ يَوْمٍ عَظِيمٍ) (الاحقاف:21)
(وَإِلَى عَادٍ أَخَاهُمْ هُوداً قَالَ يَا قَوْمِ اعْبُدُوا اللَّهَ مَا لَكُمْ مِنْ إِلَهٍ غَيْرُهُ إِنْ أَنْتُمْ إِلَّا مُفْتَرُونَ)(هود:50) .
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔
سیدنا حضرت ھود علیہ السلام

سوال: بتائیے قرآن مجید میں حضرت ہود علیہ السلام کا ذکر کتنی مرتبہ آیا ہے؟

جواب: سات مرتبہ۔

سوال: بتائیے قرآن مجید میں کون کونسی آیات میں حضرت ہود علیہ السلام کا ذکر آیا ہے؟

جواب: سورۂ اعراف آیت نمبر:۶۵

سورۂ ہود آیت نمبر:۵۰۔۵۲۔۵۸۔۶۰۔۸۹

سورۂ شعراء آیت نمبر: ۱۲۴

سوال: حضرت ہود علیہ السلام کو کس قوم کی طرف بھیجا گیا تھا؟

جواب: قومِ عاد کی طرف۔

سوال: قومِ عاد کا تذکرہ قرآن مجید کی کتنی سورتوں میں آیا ہے؟

جواب: ۱۷ سورتوں میں قوم عاد کا تذکرہ آیا ہے۔

سوال: عاد کون تھے؟

جواب: یہ عرب کی قدیم ترین قوم تھی، جن کی شان و شوکت ضرب المثل تھی، اب دنیا سے ان کا نام و نشان مٹ چکا ہے۔

سوال: قومِ عاد کہاں رہتی تھی؟

جواب: احقاف کے علاقہ میں ، جو حجاز، یمن اور یمامہ کے درمیان واقع ہے۔

سوال: قومِ عادکہاں تک پھیلی ہوئی تھی؟

جواب: یمن کے مغربی سواحل سے لیکر عراق تک اور جنوب مغرب میں حضر موت تک ان کا ڈنکا بجتا تھا۔

سوال: قومِ عاد کا زمانہ بتائیے؟

جواب: تقریباً دو ہزار(۲۰۰۰) سال قبل از مسیح علیہ السلام۔

سوال: قومِ عاد کا مذہب بتائیے؟

جواب: یہ لوگ بت پرست تھے؟

سوال: حضرت ہود علیہ السلام عاد کی کس شاخ سے تعلق رکھتے تھے؟

جواب: خلود سے۔

سوال: حضرت ہود علیہ السلام سلسلۂ نسب کے اعتبار سے حضرت نوح علیہ السلام کی کونسی پشت میں سے تھے؟

جواب: پانچویں پشت میں سے تھے۔

سوال: قوم عاد کی چند بڑی بڑی خصوصیات بتائیے؟

جواب: یہ لوگ دوسروں کے مقابلہ میں زیادہ قد آور اور تن ومن اور توانا تھے، مال و دولت اور علم و کمال میں بھی دوسروں سے ممتاز تھے،فنکاری اور کاریگری میں بھی کمال رکھتے تھے، اپنی توانائی اور شان و شوکت کی وجہ سے انہیں بلند مقامات پر بسنے اور بلند و بالا عمارتیں بنانے کا بڑا شوق تھے۔

سوال: قرآن مجید میں عاد ارم کس کو کہا گیا ہے؟

جواب: ارم حضرت نوح علیہ السلام کے پوتے اور سام کے بیٹے کا نام ہے ، ان کی نسل میں سے عاد تھے، اس لئے انہیں عادِ ارم کہا گیا ہے۔

سوال: بتائیے قرآن مجید میں عاد کے لئے اور کونسا نام استعمال کیا گیا ہے؟

جواب: عاد اولیٰ جو عذاب میں ہلاک ہوگئے۔عادِ اُخریٰ جو عذاب سے بچ گئے۔

سوال: عاد کو ذات العماد کیوں کہا گیا ہے؟

جواب: کیونکہ انہوں نے بلند و بالا عمارتیں بنائی تھیں۔

سوال: بتائیے حضرت ہود علیہ السلام کی قبر کہاں ہے؟

جواب: حضر موت کے علاقہ میں مکلا نامی شہر میں ، یہاں لوگ کثرت سے حاضر ہوتے ہیں۔

سوال: حضرت ہود علیہ السلام نے اپنی قوم سے کیا کہا، سورۂ اعراف کے حوالہ سے بتائیے؟

جواب: اے برادارانِ قوم! اللہ کی بندگی کرو، اس کے سوا تمہارا کوئی خدا نہیں، پھر کیا تم غلط روی سے پرہیز نہ کروگے۔

سوال: حضرت ہود علیہ السلام کی دعوتِ اسلام کے جواب میں ان کی قوم کے بگڑے ہوئے سردارن نے کیا کہا؟

جواب: ہم تو تمہیں بے عقلی میں مبتلا سمجھتے ہیں اور ہمیں یہ گمان ہے کہ تم جھوٹے ہو۔

سوال: جب حضرت ہود علیہ السلام کی قوم نے انہیں جھٹلایا تو آپ نے ان سے کیا فرمایا؟

جواب: اے بردارانِ قوم! میں جنون میں مبتلا نہیں ہوں، بلکہ میں رب العالمین کا رسول ہوں ، تم کو اپنے رب کے پیغامات پہنچاتا ہوں اور تمہارا ایسا خیر خواہ ہوں جس پر بھروسہ کیا جاسکتا ہے، کیا تمہیں اس بات پر تعجب ہوا کہ تمہارے پاس خود تمہاری اپنی قوم کے ایک آدمی کے ذریعہ تمہارے رب کی یاد دہانی آئی تاکہ تمہیں خبردار کرے، بھول نہ جاؤ کہ تمہارے رب نے نوحؑ کی قوم کے بعد تم کو اس کا جانشین بنایا ہے اور تمہیں خوب تن و من کیا، پس اللہ کی قدرت کے کرشموں کو یاد رکھو، امید ہے کہ کامیاب ہوجاؤ گے۔

سوال: حضرت ہود علیہ السلام کی دعوتِ اسلام کے جواب میں آپ کی قوم نے توحید کے خلاف کیا کہا؟

جواب: کیا تم ہمارے پاس اس لئے آئے ہو کہ ہم اکیلے اللہ کی عبادت کریں اور انہیں چھوڑدیں جن کی عبادت ہمارے باپ دادا کرتے آئے ہیں، اچھا تو لاؤ وہ عذاب جس کی تم ہمیں دھمکی دیتے ہو، اگر تم سچے ہو۔

سوال: توحید کے خلاف اپنی قوم کی باتیں سن کر حضرت ہود علیہ السلام نے انہیں کیا جواب دیا؟

جواب: تمہارے رب کی پھٹکار تم پر پڑگئی اور اس کا غضب ٹوٹ پڑا، کیا تم مجھ سے ان ناموں پر جھگڑتے ہو جو تم نے اور تمہارے باپ داداؤں نے رکھ لئے ہیں اور جن کے لئے اللہ نے کوئی سند نازل نہیں کی، اچھا تو تم بھی انتظار کرو اور میں بھی تمہارے ساتھ انتظار کرتا ہوں۔

سوال: اللہ تعالیٰ نے حضرت ہود علیہ السلام اور ان کی قوم کے اس پورے مکالمے(گفتگو) کے بعد کیا ارشاد فرمایا؟

جواب: آخر کار ہم نے اپنی مہربانی سے ہود اور ان کے ساتھیوں کو بچالیا اور ان لوگوں کی جڑیں کاٹ دیں جو ہماری آیات کو جھٹلا چکے تھے اور ایمان لانے والے نہ تھے۔

سوال: سورۂ ہود کے حوالہ سے حضرت ہود علیہ السلام اور ان کی قوم کے درمیان مختلف اوقات میں کی گئی تبلیغ اور اس کے جواب میں قوم کی گفتگو کیا ہوئی بتائیے؟

جواب: حضرت ہود علیہ السلام نے فرمایا:اے برادرانِ قوم ! اللہ کی بندگی کرو، اس کے سواء تمہارا کوئی معبود نہیں اور تم نے محض جھوٹ گھڑ رکھا ہے، اے قوم کے لوگو!اس کام پر میں تم سےکوئی اجرت نہیں چاہتا، میرا بدلہ تو اس کے ذمہ ہے جس نے مجھے پیدا کیا ، تم ذرا عقل سے کام نہیں لیتے اور اے میری قوم! اپنے رب سے معافی مانگو، پھر اس کی طرف لوٹو، وہ تم پر آسمان کے دہانے کھول دے گا اور تمہاری قوت میں مزید اضافہ کرےگا، مجرموں کی طرح منہ نہ پھیرو۔

انہوں نے جواب دیا: اے ہود! تم ہمارے پاس کوئی صریح شہادت لیکر نہیں آئے اور تمہارے کہنے سے ہم اپنے معبودوں کو نہیں چھوڑسکتے اور تم پر ہم ایمان لانے والے نہیں ہیں، ہم تو یہ سمجھتے ہیں کہ تمہارے اوپر ہمارے معبودوں میں سے کسی کی مار پڑگئی ہے۔

سوال: اپنی قوم کا جھوٹے خداؤں کی پرستش پر جمے رہنے کا جواب سن کر حضرت ہود علیہ السلام نے سمجھاتے ہوئے کیاکہا؟

جواب: میں اللہ کی شہادت پیش کرتا ہوں اور تم گواہ رہو کہ یہ جو اللہ کے سوا دوسروں کو تم نے خدائی شریک بنا رکھا ہے اس سے میں بیزار ہوں، تم سب مل کر میرے خلاف کوئی کسر اٹھا نہ رکھو اور مجھے ذرا بھی مہلت نہ دو، میرا بھروسہ اللہ پر ہے جو میرا رب ہے اور تمہارا بھی رب ہے، کوئی جاندار ایسا نہیں جس کی چوٹی اس کے ہاتھ میں نہ ہو، بیشک میرا رب درست ہے، اگر تم منہ پھیرتے ہو تو پھیرلو جو پیغام دے کرمیں بھیجا گیا ہوں وہ میں پہنچا چکا ہوں، اب میرا رب تمہاری جگہ دوسری قوم کو کھڑا کرے گا اور تم اس کا کچھ نہ بگاڑ سکوگے، یقیناً میرا رب ہر چیز پر نگران ہے۔

سوال: اللہ تعالیٰ نے قوم عاد کے انجام کے متعلق کیا ارشاد فرمایا، سورۂ ہود کے حوالہ سے بتائیے؟

جواب: پھر جب ہمارا حکم آگیا تو ہم نے اپنی رحمت سے ہود اور ان کے ساتھ ایمان لانے والوں کو نجات دے دی اور ایک سخت عذاب سے انہیں بچالیا۔

یہ ہیں عاد، اپنے رب کی آیات کا انہوں نے انکار کیا اور اللہ کے رسولوں کی بات نہ مانی اور ہر دشمنِ حق ظالم کی اتباع کرتے رہے، آخرکار اس دنیا میں بھی ان پر لعنت ہے اور قیامت کے دن بھی، آگاہ رہو کہ قومِ عاد نے اپنے رب کی نافرمانی کی۔

سوال: قوم عاد کی خصوصیات میں سب سے نمایاں بات کیا تھی؟

جواب: قوم عاداونچے مقام پر یادگار عمارتیں بنانے کے جنون میں مبتلا تھے، حالانکہ ان کی تعمیر لاحاصل اور بے فائدہ تھی، وہ بڑے بڑے محلات بنانے کے دلدادہ تھے اور غریبوں ، مسکینوں پر رحم کرنے کے بجائے ان پر سختی کرتے تھے۔

سوال: قوم عاد پر نافرمانی کی وجہ سے جو عذابِ الٰہی آیا اس کی مختصر روداد بتائیے؟

جواب: جب قومِ عاد حضرت ہود علیہ السلام کی بارہا تبلیغ اور تنبیہ کے باوجود اپنی سرکشی سے باز نہ آئی تو اللہ تعالیٰ نے ان پر سخت ہوا کا عذاب نازل فرمایا، پہلے بادل کی صورت میں عذاب ان کی بستیوں کی طرف بڑھا، تو انہوں نے کہا یہ بادل ہمارے کھیتوں میں برسے گا ؛لیکن اس کے بعد تیز ہوا چلنے لگی اور پھر اس قدر شدید آندھی آئی کہ اس نے ہر چیز کو ریزہ ریزہ کردیا، یہ آندھی ان پر مسلسل سات دن اور آٹھ راتیں چلتی رہی اور ان کی ہر چیز تباہ و برباد کردی، وہ اس طرح مرے ہوئے پڑے تھے کہ جیسے کھجور کے کھوکھلے تنے ہوں۔

سوال: کیا قومِ عاد پر آنے والے عذابِ الٰہی سے کوئی محفوظ بھی رہا؟

جواب: ہاں! حضرت ہود علیہ السلام اور ان کے ساتھ ایمان لانے والے۔

سوال: بتائیے قرآن مجید کے کس پارے میں سورۂ ہود ہے اور اس کے کتنے رکوع اور کتنی آیات ہیں؟

جواب: بارہویں پارہ میں ہے، اس کے دس رکوع اور ایک سو تیئیس (۱۲۳) آیتیں ہیں۔

موجودہ دور کا سب سے بڑا قرآنی نسخہ

0 comments
موجود ہ دور میں قرآن کا  سب سے بڑا نسخہ ہے۔. جس کو یکم جنوری 2012 میں  افغانستان کے دارلحکومت کابل میں میڈیا کے سامنے پیش کیا گیا اگر چہ اس پروجیکٹ کی تکمیل ستمبر 2009 میں ہوچکی تھی اس کی صفحات کی لمبائی 90 انچ۔(2.28 میڑ) اور چوڑائی 61 انچ یعنی 1.55 میٹر ہے اس کا وزن 500 کلو گرام ہے او اس کی جلد کو 21 بکروں کی کھال سے تیا ر کیا گیا ہے کہا جاتا ہے کہ اس پر 5 لاکھ ڈالر  خرچ کئے گئے ہیں ا س پر ہاتھ سے  خطاطی کرنے والوں میں استاد محمد صابر خدری اور اس کے  9 شاگرد شامل ہیں۔








اس کو پانچ سال میں  مکمل کیا گیا اور اس کے 218 صفحات پر خطاطی کے مختلف نمونے پیش کئے گئے ہیں اس کے تیس پاروں میں سے ہر پارہ کو الگ خطاطی سے لکھا گیا ہے ۔
حوالے کے لئے دیکھئے۔۔ دی گارجین۔۔یوکے
اس سے پہلے دنیا کا سب سے بڑا قرآن روس میں موجود تھا جس کی صفحات کی لمبائی 2میٹر اور چوڑائی 1.5 میٹر ہے اس کا وزن 800 کلوگرام ہے جس میں سے صرف اس کے جلد کا وزن 120 کلوگرامہے اور یہ پورے کا پورا جلد سونے اور چاندی سے بنایا گیا ہے۔

اس قرآن کو روس و یورپ کی سب سے بڑی جامع مسجد میں رکھا گیا ہے۔

Thursday, 26 July 2012

Hadrat Sayyiduna Imam Moosa bin Ja'far "al-Kaadhim" Radi Allahu Ta'ala Anhu

0 comments

 
http://a8.sphotos.ak.fbcdn.net/hphotos-ak-snc6/264720_10150211020955334_672380333_7762079_2088987_n.jpg
 
HIS POSITION IN THE SILSILA: Hadrat Sayyiduna Imam Moosa Kaazim Radi Allahu Ta'ala Anhu is the Seventh Imam and Shaykh of the Silsila Aaliyah Qadiriyah Barakatiyah Ridawiyah Nooriyah. He was a great Aalim and is a Wali-e-Kaamil.

BIRTH: He was born in Abwa Sharif (between Makkah Mukarrama and Madinah Munawwarah), on a Sunday, either on the 7th or the 10th of Safar, 128 Hijri. [Masaalik as-Saalikeen, Vol. 1, Page 225]

NAME: His name was Moosa, and he was also known as Saami, Abul Hassan and Abu Ibrahim. His titles were Saabir, Saaleh, Ameen and Kaazim.

HIS PARENTS: His father was Hadrat Imam Jaafar Saadiq and his mother was Umm-e-Wulad Bibi Hameeda Radi Allahu Ta'ala Alaihim Ajma'een .

HIS FEATURES: He was of good height, and very handsome. He was tan in complexion and some have said that he was not very fair in complexion. [Anwaar-e-Sufiyah, Page 92]

SHAYKH-E-TARIQAT: He is the mureed and Khalifa of his father, Hadrat Imam Jaafar as-Saadiq Radi Allahu Ta'ala Anhu.

http://a4.sphotos.ak.fbcdn.net/hphotos-ak-snc6/271068_10150218462195334_672380333_7817359_5555857_n.jpg
 
HIS EXCELLENCE: Hadrat Moosa Kaazim was such a blessed personality, that whomsoever took his name as a wasila, they found that all their duas were accepted. It is for this reason, that the people of Iraq referred to him as Baabul Hawaa'ij (The Door at which all their problems were answered).

Hadrat Imam Shafi'i Radi Allahu Anhu says that

The Mazaar Shareef of Imam Moosa Kaazim is a great means of acceptance.

Hadrat Imam Jaafar as-Saadiq Radi Allahu Anhu says,

"From all of my children, the most exalted is Moosa Kaazim. He is a pearl from amongst the pearls (treasures) of Allah."

He was an Aabid and Zaahid, and spent his days keeping fast, and his nights in the ibaadat of Allah. He was also known as Abdus Saaleh, due to the lengthy nights that he used to spend in the Ibaadat of Almighty Allah. He was known as Kaazim (one who drinks his anger), due to his humility and simplicity. He was also very generous and kind. He would go out in search of the needy in Madinah Munawwarah, and would then send people to distribute money to them in the darkness of night, and none would know from where they had received the money. He never turned any supplicant away at any time. He always fulfilled the needs of those who asked his assistance. Whenever he met any person, he would be first in making Salam. If someone spoke against him or tried to harm him, then he even took care of that person by sending him money and treating him kindly. [Masaalik as-Saalikeen, Vol. 1, Page 226]

Hadrat Shafeeq Balkhi who was a contemporary of Imam Moosa Kaazim says,

"On my way to Hajj in 149 Hijri, I stopped over at a town called Qaadisiya. I was looking at the behaviour and the manner of the people living there, when my sight fell upon a very handsome young man, who was wearing a Suf (blended cotton fabric) cloth over his clothes, and a pair of shoes. He sat away from the rest of the people. I began to think that he was a Sufi kind of person and wanted to be an obstacle in the way of the people. I thus went towards him to give him some advice. When he saw me coming towards him. He called my name and told me exactly what I was thinking. I then thought in my heart, that this is definitely a pious man, as he does not even know me, yet he called me by my name and said what was in my heart. I felt that I should meet with him and ask his forgiveness. I rushed to find him, but he had already gone away. I searched for a very long time, but could not find him. We stopped at a place called Fida during our journey, and again I saw him. He was in namaaz, and he was trembling and weeping. I walked towards him again, with the intention of asking him to forgive me, when he said, "O Shafeeq Read! Verily I am Compassionate towards him who repented and brought faith and did good deeds and then walked the straight path." He read this verse, and then walked away. I then began to think that he was from amongst the Abdaals (a station of Wilaayat), for he has read my heart twice already. Then we went to Mina, and I saw him again. He was standing at a well, with a huge bowl in his hand. He was intending to take some water. Then all of a sudden the bowl fell from his hands into the well. When this happened, he recited the following couplet: 'You are my Sustainer, when I am thirsty for water, and You are my strength when I intend to eat.' He then said, 'O Allah! O my Creator! O my Lord! You know that with the exception of this bowl, I have nothing else. Do not deprive me of this bowl.' By Allah, I saw that the water in the well reached the top of the well and he stretched out his hand and filled his bowl with water. He then performed wudhu and read four rakaats of Namaaz. After Namaaz, he filled sand into his bowl of water and began to stir it. He then began to drink the mixture of sand and water. I went close to him and said salaam. He returned my salaam. I then asked if he would bless me with some of the blessings which he has attained. He said, 'O Shafeeq! My Lord has always bestowed his hidden and apparent bounties upon me, so always intend good from your Lord.' He then handed his bowl over to me. When I drank out of it, By Allah it was a sweet drink, and never have I tasted something so delicious. The barkat of that meal was such, that I did not feel any hunger and thirst for may days. Then I did not see him until we entered Makkah Mukarramah. I again saw him late one night near the well of Zamzam, reading Namaaz, weeping and trembling. After his Namaaz he sat there for a long time and read tasbeeh. He then read his Fajr Salaah and went to the Haram to perform the Tawaaf. As he left the Haram, I followed him, but I was amazed to see him in a completely different situation to which I had seen him during our journey. I saw his friends, disciples and servants all around him. They sealed of the entire area around him as he arrived and they began to make his khidmat. Each one of them were making salaam to him with great love and respect. On seeing this, I asked one person, 'Who is this young man?' He said, 'he is Moosa bin Jaafar bin Muhammad bin Ali bin Hussain bin Ali bin Abi Taalib.' [Jaami' al-Manaaqib, Page 226/230]

http://a3.sphotos.ak.fbcdn.net/hphotos-ak-snc6/270271_10150218462405334_672380333_7817361_1276164_n.jpg
 
KARAAMATS: Imam Moosa Kaazim performed many miracles. A few of his miracles are quoted below for us to attain barakaat.

KNOWLEDGE OF THE UNSEEN: Ishaaq bin Amaar says, that when Imam Moosa Kaazim was imprisoned, then the Saahibain of Imam Abu Hanifa, namely Imam Abu Yusuf and Imam Muhammad bin Hassan (Ridwaanullahi Ta'ala Alaihim Ajma'een) went to meet with him, so that they ask him some important questions. Whilst they were seated with him, a prison guard came to him and said, 'I am now about to complete my duty and I am on my way home. If there is anything you need, please let me know, so that I may arrange it for you tomorrow when I return.' Hadrat Moosa Kaazim looked at him and said, 'There is nothing I need. All is well.' As he left, Imam Moosa Kaazim said, 'I am amazed by him, that he wants to know if there is anything that he can do for me tomorrow, whereas tonight he will pass away.' When Imam Abu Yusuf and Imam Muhammad (Ridwaanullahi Ta'ala Alaihim Ajma'een) heard this, they said, 'We came here to learn about some laws relating to fard and sunnahs and he discusses Ilm-e- Ghaib (Knowledge of the Unseen).' Both of them, then sent a man to follow the prison guard to see the outcome of what Imam Moosa Kaazim said. The man sat outside the house of the prison guard, as he was instructed. When he heard the sounds of weeping and screaming, he enquired as to what had happened. The people of the house informed him that the guard had passed away. When this message reached Imam Abu Yusuf and Imam Muhammad (radi Allahu anhum), they were astonished. [Tashreef al-Bashar, Page 84]

HIS FORESIGHT: Esa Mada'ini says that he worked for a year in Makkah Mukarramah and then decided to spend a year in Madinatul Munawwarah as he felt that this would be a means of achieving many blessings. He arrived in Madinatul Munawwarah and often visited Imam Moosa Kaazim whilst he was there. One day whilst he was seated in the presence of Hadrat Moosa Kaazim, the Imam looked at him and said, "O Esa! Go and see, your house has collapsed over all your belongings." Esa Mada'ini immediately rushed home and found that his house had collapsed over all his belongings. He quickly employed a man that was passing by to remove all his belongings from the house. He then realised that his jug was missing. The following day, he went to meet Hadrat Moosa Kaazim who said, "O Esa! Did you lose anything when your house collapsed. If so, let me know, so that I may make dua and Allah shall bless you with something better in its place." Esa Mada'ini answered that everything was found except a jug. Hadrat then lowered his head for a while and then raised his head and said, “You removed it from the house before it collapsed and you have forgotten about where you left it. Go to the maid of the house and ask her to give the jug to you.” He did this, and found that the maid handed over the lost jug to him. [Masaalik as-Saalikeen, Page 83]
 
http://a6.sphotos.ak.fbcdn.net/hphotos-ak-ash4/260135_10150218462120334_672380333_7817358_6715850_n.jpg

HIS CHILDREN: Almighty Allah had blessed Imam Moosa Kaazim with many children. The names of his children are as follows:

Sons: Hadrat Ali Raza, Zaid, Aqeel, Haaroon, Hassan, Hussain, Abdullah, Abdur Rahmaan, Ismaeel, Ishaaq, Yahya, Ahmad, Abu Bakr, Muhammad, Akbar, Jaafar  Akbar, Jaafar Asghar, Hamza, Abbas, Qaasim

Daughters: Bibi Khadija, Asmaul Akbar, Asmaul Asghar, Faatimatul Kubra, Faatimatus Sughra, Zainab Kubra, Zainab Sughra, Umme Kulthoom Kubra, Umme Fardah, Umme Abdullah, Ummul Qaasim, Aaminah, Hakeema, Mahmooda, Imaama, Maimoona (Ridwaanullahi Ta'ala Alaihim Ajma'een).

HIS KHULAFA: The names of all his Khulafa can not be found, but His two well-known khulafa are being mentioned:

1. Hadrat Shaykh Ali Raza
2. Hadrat Shaykh Matlibi [Anwaar-e-Sufiyah, Page 93]

WISAAL: He commanded one of his servants to be the administrator of his funeral arrangements. Hadrat Sayyiduna Moosa Kaazim was poisoned by his enemies. He passed away on either the 5th or 25th of Rajab, 183 Hijri on a Friday, at the age of 55.

MAZAAR SHAREEF: His Mazaar Shareef is in a place called Kaazmeen (Kadhimiyah) in Iraq.

http://a5.sphotos.ak.fbcdn.net/hphotos-ak-snc6/260169_10150218462015334_672380333_7817357_7783997_n.jpg

— — —
Extracted from
Tadhkira Mashaikh-e-Qadiriyah Barakatiya Ridawiyah
Urdu: Mawlana Abdul Mujtaba Ridawi | English: Mawlana Aftab Qasim

Tuesday, 24 July 2012

♥ سیدہ زاہرہ طیبہ طاہرہ ♥ فاطمۃ الزھرا رضی اللہ تعالی عنہا

0 comments


https://fbcdn-sphotos-a.akamaihd.net/hphotos-ak-ash4/283123_10150252240750334_672380333_8125936_7919143_n.jpg

https://fbcdn-sphotos-a.akamaihd.net/hphotos-ak-snc6/284944_10150251607390334_672380333_8119321_6388091_n.jpg

https://fbcdn-sphotos-a.akamaihd.net/hphotos-ak-snc6/224546_10150252241840334_672380333_8125942_8062107_n.jpg

https://fbcdn-sphotos-a.akamaihd.net/hphotos-ak-ash4/283214_10150251607470334_672380333_8119323_7990478_n.jpg

https://fbcdn-sphotos-a.akamaihd.net/hphotos-ak-ash4/282512_10150252242210334_672380333_8125949_8065365_n.jpg

https://fbcdn-sphotos-a.akamaihd.net/hphotos-ak-snc6/282404_10150251607505334_672380333_8119324_8314687_n.jpg

https://fbcdn-sphotos-a.akamaihd.net/hphotos-ak-ash4/284984_10150252242420334_672380333_8125954_721998_n.jpg

https://fbcdn-sphotos-a.akamaihd.net/hphotos-ak-snc6/281889_10150251607565334_672380333_8119325_7294529_n.jpg

https://fbcdn-sphotos-a.akamaihd.net/hphotos-ak-ash4/284844_10150252240635334_672380333_8125935_1688962_n.jpg

https://fbcdn-sphotos-a.akamaihd.net/hphotos-ak-snc6/184148_10150251607655334_672380333_8119329_8316981_n.jpg

https://fbcdn-sphotos-a.akamaihd.net/hphotos-ak-snc6/215059_10150252242325334_672380333_8125951_6719571_n.jpg

https://fbcdn-sphotos-a.akamaihd.net/hphotos-ak-snc6/285424_10150251607715334_672380333_8119330_7047540_n.jpg
https://fbcdn-sphotos-a.akamaihd.net/hphotos-ak-ash4/189273_10150251607325334_672380333_8119319_3195148_n.jpg
https://fbcdn-sphotos-a.akamaihd.net/hphotos-ak-ash4/185313_10150252241730334_672380333_8125941_7338548_n.jpg
— — —
کتاب: فضائل صحابہ و اہلیبیت رضی اللہ عنہم اجمعین
تحریر: حضرت علامہ سید شاہ تراب الحق قادری مدظلہ عالی

Monday, 23 July 2012

اسلام کا نواں مہینہ رمضان

0 comments



http://sphotos.ak.fbcdn.net/hphotos-ak-ash2/hs084.ash2/37528_416070320333_672380333_5290458_4836088_n.jpg
شَہْرُ رَمَضَانَ الَّذِیْ اُنْزِلَ فِیْہِ الْقُراٰنُ ہُدًی لِّلنَّاسِ وَبَیِّنٰتٍ مِّنَ الْہُدٰی وَالْفُرْقَان ج فَمَنْ شَہِدَ مِنْکُمُ الشَّہْرَ فَلْیَصُمْہُ ط وَمَنْ کَانَ مَرِیْضًا اَوْ عَلـٰی سَفَرٍ فَعِدَّۃٌ مِّنْ اَیَّامٍ اُخَرَط یُرِیْدُاللّٰہُ بِکُمُ الْیُسْرَوَلَا یُرِیْدُ بِکُمُ الْعُسْرَ ز وَ لِتُکْمِلُواالْعِدَّۃَ وَلِتُکَبِّرُوااللّٰہَ عَلـٰی مَا ھَدٰکُمْ وَلَعَلَّکُمْ تَشْکُرُوْنَ (پارہ٢، سورۃ البقرہ ، آیت ١٨٥) رمضان کا مہینہ جس میں قرآن اترا لوگوں کے لئے ہدایت اور راہنمائی اور فیصلہ کی روشن باتیں ، تو تم میں جو کوئی یہ مہینہ پائے ضرور اس کے روزے رکھے اور جو بیمار یا سفر میں ہو تو اتنے روزے اور دنوںمیں اللہ تم پر آسانی چاہتا ہے اور تم پر دشواری نہیں چاہتا اور اسلئے کہ تم گنتی پوری کرو اور اللہ کی بڑائی بولو اس پر اس نے تمہیں ہدایت کی اور کہیں تم حق گزار ہو ۔ (کنزالایمان) یٰاَۤیُّـہَا الَّذِیْنَ اٰمَنُوْاکُتِبَ عَلَیْکُمُ الصِّیَامُ کَمَا کُتِبَ عَلَی الَّذِیْنَ مِنْ قَبْلِکُمْ لَعَلَّکُمْ تَتَّقُوْنَ (پارہ٢، سورۃ البقرۃ ، آیت ١٨٣) اے ایمان والو! تم پر روزے فرض کئے گئے جیسے اگلوں پر فرض ہوئے تھے کہ کہیں تمہیں پرہیزگاری ملے۔ (کنزالایمان) وجہ تسمیہ: رمضان المبارک اسلامی سال کا نواں مہینہ ہے، اس کی وجہ تسمیہ یہ ہے کہ رمضان ''رمض'' سے ماخوذ ہے اور رمض کا معنٰی ''جَلانا ''ہے۔ چونکہ یہ مہینہ مسلمانوں کے گناہوں کو جلا دیتا ہے اس لئے اس کا نام رمضان رکھا گیا ہے۔ یا اس لئے یہ نام رکھا گیا ہے کہ یہ ''رمض'' سے مشتق ہے جس کا معنٰی ''گرم زمین سے پاؤں جلنا'' ہے۔ چونکہ ماہِ صیّام بھی نفس کے جلنے اور تکلیف کا موجب ہوتا ہے لہٰذا اس کا نام رمضان رکھا گیا ہے۔ یا رمضان گرم پتھر کو کہتے ہیں۔ جس سے چلنے والوں کے پاؤں جلتے ہیں۔ جب اس مہینہ کا نام رکھا گیا تھا اس وقت بھی موسم سخت گرم تھا۔ ایک قول یہ بھی ہے کہ رمض کے معنی برساتی بارش ، چونکہ رمضان بدن سے گناہ بالکل دھو ڈالتا ہے اور دلوں کو اس طرح پاک کردیتا ہے جیسے بارش سے چیزیں دھل کر پاک و صاف ہو جاتی ہیں ۔ (غنیۃ الطالبین ، صفحہ ٣٨٣۔٣٨٤)
https://fbcdn-sphotos-a.akamaihd.net/hphotos-ak-snc6/6252_126117725333_3455030_n.jpg

فضائل رمضان المبارک احادیث کی روشنی میں
حدیث ١: اِنَّ الْجَنَّۃَ تَزَ حْرَفُ لِرَمْضَانَ مِنْ رَاسِ الََْحَوْلِ حَوْلٍ قَابِلٍ قَالَ فِاذَا کَانَ اَوَّلُ یَوْمٍ مِنْ رَمَضَانَ ہَبَّتْ رِیْحٌ تَحْتَ الْعَرْشِ مِنْ وَّرَقِ الْجَنَّۃِ عَلَی الْحُوْرِ الْعَیْنِ فَیَقُلْنَ یَا رَبِّ اجْعَلْ لَّنَا مِنْ عِبَادِکَ اَزْوَجًا تَقِرُّبِہِمْ اَعْیُنُنَا وَ تَقِرُّ اَعْیُنُہُمْ بِنَا ( رواہ البیہقی فی شعب الایمان۔مشکــٰوۃ ص ١٧٤) بے شک جنت ابتدائے سال سے آئندہ سال تک رمضان شریف کے لئے آراستہ کی جاتی ہے۔ فرمایا جب پہلا دن آتا ہے تو جنت کے پتوں سے عرش کے نیچے ہوا سفید اور بڑی آنکھوں والی حوروں پر چلتی ہے تو وہ کہتی ہیں کہ اے پروردگار اپنے بندوں سے ہمارے لئے ان کو شوہر بنا جن سے ہماری آنکھیں ٹھنڈی ہوں اور ان کی آنکھیں ہم سے ٹھنڈی ہوں۔ حدیث ٢: نَادٰی مُنَادٍ مِّنَ السَّمَآءِ کُلَّ لَیْلَۃٍ اِلَی انْفِجَارِ الصُّبْحِ یَا بَا غِیَ الْخَیْرِ تَمِّمْ وَ اَبْشِرْ وَیَا باَغِیَ الشَّرِ اَقْصِرْ وَ اَبْصِرْ ہَلْ مَنْ مُّسْتَغْفِرٍ یَّغْفِرُ لَہ، ہَلْ مَنْ تَائِبٍ یُّتَابُ عَلَیْہِ ہَلْ مَنْ دَاعٍ یُّسْتَجَابُ لَہ، ہَلْ مَنْ سَا ئِلٍ یُّعْطٰی سُؤَا لَہ، فِطْرٍمِّنْ کُلِّ شَہْرِ رَمَضَانَ کُلَّ لَیْلَۃٍ عُتَقَاءُ مِنَ النَّارِ سِتُّوْنَ اَلْفًا فَاِذَاکَانَ یَوْمُ الْفِطْرِ اَعْتَقَ فِیْ جَمِیْعِ الشَّہْرِ ثَلَا ثِیْنَ مَرَّۃً سِتِّیْنَ اَلْفًا۔ (زواجر جلد اول) رمضان المبارک کی ہر رات میں ایک منادی آسمان سے طلوعِ صبح تک یہ ندا کرتا رہتا ہے کہ اے خیر کے طلب گار تمام کر اور بشارت حاصل کراوراے بُرائی کے چاہنے والے رک جا اور عبرت حاصل کر۔ کیا کوئی بخشش مانگنے والا ہے کہ اس کی بخشش کی جائے ۔ کیا کوئی توبہ کرنے والا ہے کہ اس کی توبہ قبول کی جائے۔ کیا کوئی دعا مانگنے والا ہے کہ اس کی دعا قبول کی جائے ۔ کیا کوئی سوالی ہے کہ اس کا سوال پورا کیا جائے۔ اللہ بزرگ و برتر رمضان شریف کی ہر رات میں افطاری کے وقت ساٹھ ہزار گناہ گار دوزخ سے آزاد فرماتاہے جب عید کا دن آتا ہے تو اتنے لوگوں کو آزاد فرماتا ہے کہ جتنے تمام مہینہ میں آزاد فرماتا ہے۔ تیس مرتبہ ساٹھ ساٹھ ہزار۔(یعنی اٹھارہ لاکھ) حدیث ٣: یَغْفَرُ لِاُمَّتِہ فِیْ اٰخِرِ لَیْلَۃٍ فِیْ رَمَضَانَ قِیْلَ یَارَسُوْلَ اللّٰہِ اَہِیَ لَیْلَۃُ الْقَدْرِ قَالَ لَا وَلٰکِنَّ الْعَامِلَ اِنَّمَا یُوَفّٰی اَجْرُہ، اِذَا قَضــٰی عَمَلُہ، ۔ رواہ احمد (مشکوٰۃ ص١٧٤) رمضانِ پاک کی آخری رات میں میری امت کی بخشش کی جاتی ہے۔ عرض کی گئی یا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کیا وہ شبِ قدر ہے۔ فرمایا نہیں لیکن کام کرنے والے کا اجر پورا دیا جاتا ہے۔ جب کہ وہ اپنا کام ختم کرتا ہے۔ حدیث ٤: اُحْضِرُوْ الْمِنْبَرَ فَحَضَرْنَا فَلَمَّاارْ تَقـٰی دَرْجَۃً قَالَ اٰمِیْنَ فَلَمَّا ارْتَقـٰی الدَّرْجَۃَ الثّانِیَۃَ قَالَ اٰمِیْنَ فَلَمَّا ارْتَقـٰی الدَّرْجَۃَ الثَالِثَۃَ قَالَ اٰمِیْنَ فَلَمَّا نَزَلَ قُلْنَا یَا رَسُوْلَ اللّٰہِ لَقَدْ سَمِعْنَا مِنْکَ الْیَوْمَ شَیْــئًا مَا کُنَّا نَسْمَعُہ، قَال اِنَّ جِبْرَئِیْلَ عَرَضَ لِیْ فَقَالَ بَعُد مَنْ اَدْرَکَ رَمَضَانَ فَلَمْ یُغْفَرُ لَہ، قُلْتُ اٰمِیْنَ فَلَمَّا رَقِیْتُ الثَّانِیَہَ قَالَ بَعُدَ مَنْ ذُکِرْتَ عِنْدَہ، فَلَمْ یُصَلِّ عَلَیْکَ قُلْتُ اٰمِیْنَ۔ فَلَمَّا رَقِیْتُ الثَّالِثَۃَ قَالَ بَعُدَ مَنْ اَدْرَکَ اَبَوَیْہِ عِنْدَہُ الْکِبَرُ اَوْ اَحَدَہُمَا فَلَمْ یُدْ خِلَا ہُ الْجَنَّۃَ قُلْتُ اٰمِیْنَ (زواجر جلد اول) تم لوگ منبر کے پاس حاضر ہو۔ پس ہم منبرکے پاس حاضر ہوئے ۔ جب حضور اقدس صلی اللہ علیہ وسلم منبر کے پہلے درجہ پر چڑھے تو فرمایا ''آمین''۔ جب دوسرے درجہ پر چڑھے تو فرمایا''آمین''۔ اور جب تیسرے درجہ پر چڑھے تو فرمایا ''آمین''۔ جب منبر شریف سے اترے تو ہم نے عرض کی یا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم آج ہم نے آپ سے ایسی بات سنی کہ کبھی نہ سنتے تھے۔ فرمایا بے شک جبرئیل ں نے آکر عرض کی کہ ــ''بے شک وہ شخص دور ہو (رحمت سے یا ہلاک ہو) جس نے رمضان شریف کو پایا اور اس کی مغفرت نہیں ہوئی'' میں نے کہا ــ''آمین ''۔ جب دوسرے درجہ پر چڑھا تو اس نے کہا: ''وہ شخص دور ہو جس کے پاس آپ کا ذکر ہو اور وہ درود شریف نہ پڑھے ''میں نے کہا ''آمین''جب میں تیسرے درجہ پر چڑھا تو اس نے کہا کہ'' دور ہو وہ شخص جو اپنے بوڑھے والدین کی خدمت کا موقع پائے پھر بھی کوتاہی کے نتیجے میں جنت میں داخل نہ ہوسکے ''میں نے کہا ''آمین'' حدیث ٥: عَنْ اَبِیْ ہُرَیْرَۃَ رَضِیَ اللّٰہُ عنہ، قَالَ قَالَ رَسُوْلُ اللّٰہِ صلی اللہ علیہ وسلم کُلُّ عَمَلِ ابْنِ اٰدَمَ یُضَاعَفُ الْحَسَنَۃُ بِعَشْرِ اَمْثَا لِہَا اِلـٰی سَبْعِ مِائَۃٍ قَالَ اللّٰہُ تَعَالـٰی اِلَّا الصَّوْمِ فَاِنَّہ، لِیْ وَاَنَا اَجْزِیْ بِہٖ یَدْعُ شَہْوَتُہ، وَطَعَا مُہ، مِنْ اَجْلِیْ لِلصَّائِمِ فَرْحَتَانِ فَرْحَۃٌ عِنْدَ فِطْرِہٖ وَفَرْحَۃٌ عِنْدَ لِقَآءِ رَبِّہٖ وَلَخَلُوْفُ فَمِ الصَّائِمِ اَطْیَبُ عِنْدَ اللّٰہِ مِنْ رِیْحِ الْمِسْکِ وَالصِّیَامُ جُنَّــۃٌ ۔ الحدیث رواہ البخاری و مسلم (مشکوٰۃ ١٧٣) سیدنا حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ تعالی عنہ راوی ہیں کہ رسول خُدا صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ ''آدم کے بیٹے کا ہر عمل بڑھایا جاتا ہے ایک نیکی سے دس گنا سے سات سو تک ۔ اللہ تعالیٰ نے فرمایا ''مگر روزہ کہ اس کا ثواب بے شمار ہے ، بے شک وہ میرے لیے ہے اور میں ہی اس کی جزا دوں گا۔'' روزہ دار اپنی خواہش اور طعام میرے لئے چھوڑتا ہے ۔ روزہ دار کے لئے دو خوشیاں ہیں ۔ ایک خوشی افطار کے وقت۔ اور ایک خوشی دیدارِ الٰہی کے وقت ۔ اور روزے دار کے منہ کی بو اللہ تعالیٰ کے نزدیک مُشک کی خوشبو سے زیادہ پسندیدہ ہے۔ اور روزے ڈھال ہیں۔'' حدیث ٦: اِذَا دَخَلَ رَمَضَانَ فُتِحَتْ اَبْوَابُ الْجِنَانِ وَ غُلِّقَتْ اَبْوَابُ الْجَہَنَّمِ وَسُلْسِلَۃِ الشَّیَاطِیْنَ (بخاری) جب رمضان آتا ہے تو جنت کے دروازے کھول دیے جاتے ہیں اور جہنم کے دروازے بند کردیے جاتے ہیں ، اور شیاطین جکڑ دیے جاتے ہیں۔

رمضان کے حروف اور ان کی برکتیں:

رمضان کے پانچ حروف ہیں

''ر'' رضوان اللہ (اللہ کی خوشنودی) ہے۔
''م'' محابۃ اللہ کی ہے (اللہ کی محبت)۔
''ض'' ضمان اللہ کا ہے (یعنی اللہ تعالیٰ کی ذمہ داری)
''الف'' الفت کا ہے اور
''ن'' سے مراد نور اور نوال ہے (مہربانی اور بخشش) (غنیۃ الطالبین ، صفحہ ٣٩٠)

روزہ نہ رکھنا گناہ کبیرہ ہے:

ارکانِ اسلام کا ایک رکن روزہ ہے۔ سردار دوجہاں سید کون و مکاں صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ اسلام کی بنیاد پانچ چیزوں پر ہے۔ سب سے اول توحید و رسالت کا اقرار۔ اس کے بعد اسلام کے چار رکن ہیں۔ ١۔ نماز۔٢: روزہ۔ ٣: زکوٰۃ۔ ٤: حج۔ کتنے مسلمان ہیں جو مردم شماری میں مسلمان شمار ہوتے ہیں۔ لیکن ان چاروں ارکان میں سے ایک کے بھی کرنے والے نہیں ہیں۔ البتہ وہ سرکاری کاغذات میں مسلمان لکھے جاتے ہیں۔ مگر اللہ تعالیٰ کے دفتر میں وہ کامل مسلمان شمار نہیں ہوسکتے۔ اس لئے کہ روزہ نہ رکھنا کبیرہ گناہ ہے یہ بھی اس وقت ہے کہ جب وہ روزے کی فرضیت کا اعتقاد رکھتا ہو۔ اور جو اس کی فرضیت کا انکار کرے تو وہ بلاشبہ کافر ہے۔

سحری کھانے میں برکت ہے:

مسلمانوں کو چاہئے کہ رمضان المبارک میں سحری کے وقت اٹھیں اور حسب ضرورت کھانا تیار کر کے کھائیں۔ اگرچہ ایک دو لقمے ہی ہوں۔ یا کھجور کے چند دانے کھالے۔ کیونکہ یہ کھانا باعث برکت ہے ۔ محبوب رب العالمین صلی اللہ علیہ وسلم ارشاد فرماتے ہیں:

تَسَحَّرُوْا فَاِ نَّ السُّحُوْرَ بَرْکَۃٌ (مشکوٰۃ ص ١٧٥)
سحری کیا کرو کیونکہ سحری کے کھانے میں برکت ہے۔

نیز سحری کے وقت اٹھنا اور کھانا کھانا اسلام کا شعار ہے۔ اہل کتاب اس سعادت سے محروم ہیں۔ سید الانس و الجان شاہ کون و مکان صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:

فَصْلُ مَابَیْنَ صِیَامِنَا وَصِیَامِ اَہْلِ الْکِتَابِ اُکْلَۃُ السَّحَرِ ۔ رواہ البخاری و مسلم (مشکوٰۃ ص ١٧٥)
ہم اہل اسلام اور اہل کتاب کے روزوں میں فرق سحری کا کھانا ہے۔

اہم مسئلہ:

سحری کا وقت صبح صادق سے پہلے ہے اگر صبح صادق ہو جاتی ہے تو پھر سحری سے الگ ہو جائیں ۔کھانا پینا بند کردیں بعض لوگ اذان فجر سن کر یا سائرن سن کر بھی پانی وغیرہ پیتے ہیں یہ درست نہیںفرض کریں کہ سحری کا آخری وقت ٥ بج کر ١١ منٹ ہے تو فجر کی اذان٥ بج کر ١١ منٹ کے بعد ہوگی لہٰذا ٥ـ بج کر ١١منٹ سے قبل ہر حال میں کھانے پینے سے فراغت حاصل کرلینی چاہئے ۔اگر اذان سنتے وقت پانی بھی پیا تو روزہ نہیں ہوگا۔

روزے کی نیت:

جو صبح صادق سے پہلے سحری سے فارغ ہوں انہیں یوں نیت کرنی چاہئے:

وبِصَوْمِ غَدٍ نَوَیْتُ مِنْ شَہْرِ رَمَضَان
(ترجمہ) میں نے رمضان کے کل کے روزے کی نیت کی

اور سائرن یا اذان سن کر کلّی وغیرہ کرکے اس طرح نیت ہوگی ۔

نَوَیْتُ اَنْ اَصَوْمَ ہٰذَالْیَوْمَ لِلّٰہِ تَعَالٰی مِنْ فَرَضِ رَمَضَان
(ترجمہ) میں نے آج کے روزے کی نیت کی اللہ کیلئے ماہِ رمضان کے فرضوں سے

افطار:

جب پوری طرح سورج غروب ہوجائے تو حلال اور طیب چیز سے روزہ افطار کرے اور یہ دعا پڑھے۔

اَللّٰہُمَّ اِنِّیْ لَکَ صُمْتُ وَبِکَ اٰمَنْتُ وَعَلٰی رِزْقِکَ اَفْطَرْتُ۔
ترجمہ: اے اللہ ! میں نے تیرے لئے روزہ رکھا، اور تجھ پر ایمان لایا ، اور تیرے دیے ہوئے رزق سے افطار کیا۔

سیّدنا حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ، سے روایت ہے کہ مالکِ دو جہاں سرکارِ ابد قرار شافع یوم شمار صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:

لَا یَزَالُ الدِّیْنُ ظَاہِرًامَّا عَجَّلَ النَّاسُ الْفِطْرَ لِاَنَّ الْیَہُوْدَ وَالنَّصَاریٰ یُؤَْخِّرُوْنَ ۔ رواہ ابو داؤد و ابنِ ماجہ (مشکوٰۃ ص١٧٥)

دین اسلام ہمیشہ غالب رہے گا جب تک لوگ افطار میں جلدی کرتے رہیں گے ۔ کیونکہ یہودی و نصرانی افطار میں دیر کرتے ہیں۔

نوٹ:

اس جلدی کا یہ مطلب نہیں کہ ابھی سورج پوری طرح غروب نہ ہوا ہو تو روزہ افطار کرلیا جائے۔ ایسا کرنے سے سارے دن کی محنت ضائع ہوجائے گی اور نہ ہی ثواب ملے گا اور اللہ تعالیٰ کی ناراضگی اس پر مزید ہے۔

روزہ کس چیز سے افطار کرنا چاہئے:

یوں تو روزہ ہر حلال چیز سے افطار کرنا جائز ہے مگر طاق کھجوروں سے روزہ افطار کرنا بہت ثواب کا باعث ہے اگر کھجوریں وقت پر نہ مل سکیں تو پانی سے روزہ کھولنا چاہئے۔ سرورِ کائنات فخر موجودات حضرت احمد مجتبیٰ صلی اللہ علیہ وسلم کاارشاد ہے:

اِذَا اَفْطَرَ اَحَدُکُمْ فَلْیُفْطِرُ عَلـٰی تَمْرٍ فَاِنَّہ، بَرْکَۃٌ فَاِنْ لَّمْ یَجِدْفَلْیُفْطِرْ عَلـٰی مَآءٍ فَاِنَّہ، طَہُوْرٌ۔ (رواہ احمد والترمذی و ابو داؤد و ابن ماجہ) (مشکوٰۃ ص١٧٥)
جب تم میں سے کوئی روزہ افطار کرے تو چاہئے کہ کھجوروں سے افطار کرے کیونکہ اس میں برکت ہے ۔ اگر کھجوریں نہ پائے تو پانی سے افطار کرے کیونکہ وہ پاک کرنے والا ہے۔

https://fbcdn-sphotos-a.akamaihd.net/hphotos-ak-snc4/40103_420285545333_672380333_5410466_7215194_n.jpg

 
رمضان المبارک میں وفات پانے والے اولیاء، و بزرگانِ دین رحمہم اللّٰہ

یکم رمضان المبارک :

٭ حضرت شیخ سعید بن عفیر ٢٢٦ھ ٭ حضرت طلحہ بن محمد خراسانی ٣٢٠ھ ٭ حضرت شاہ الہداد عارف ٩١٤ھ ٭ حضرت اخون شہباز قلندر سداسہاگ ١٠٣٣ھ (سومان) ٭ حضرت خواجہ شمس الدین حبیب اللہ ملکی ١١٦٧ھ (سرہند) ٭ حضرت علامہ سید عبداللہ بلگرامی ١٣٠٥ھ ٭ استاذ العلماء علامہ ہدایت اللہ خاں رامپوری(مناظر اہلسنّت، فاتح مناظرہ رُشدآباد بنگال) یکم رمضان١٣٢٦ھ ٭ حضرت سید ظہور الحسنین شاہ قادری علیہ الرحمۃ(اولاد حضرت سخی عبدالوہاب شاہ) ١٤٠١ھ ٭ پیر طریقت حضرت محمد قاسم مشوری ١٤١٠ھ(درگاہ عالیہ مشوری شریف لاڑکانہ، رہنما تحریک پاکستان)

٢ رمضان المبارک :

٭ حضرت خواجہ عبدالحق جامی ١٠٢٩ھ (برہان پور) ٭ حضرت شیخ اسماعیل چشتی اکبر آبادی١٠٦٦ھ ٭ حضرت شاہ دولہ دریائی گجراتی ۔

٣ رمضان المبارک :

٭ سیدۃ النساء فاطمۃ الزہرا رضی اللہ عنہا ١١ھ ٭ ام المومنین ام سلمہ رضی اللہ عنہا ٦٢ھ ٭ حضرت فضیل بن عیاض۔۔۔۔۔۔١٨٧ھ ٭ حضرت شیخ سری سقطی شیخ سلسلہئ قادریت ٢٠٥ھ (بغدادشریف) ٭ حضرت شاہ زین الدین ٣٥٥ھ (دمشق) ٭ حضرت سید قطب الدین محمد چشتی مدنی ثم الکڑوی ٦٦٧ھ ٭ حضرت مظفر بلخی (خلیفہ مخدوم یحییٰ منیری) ٧٨٨ھ ٭ مخدوم راجی سید پور مانکپوری ٩٤٧ھ ٭ حضرت میر عبدالواحدبلگرامی ١٠١٧ھ(گیارہویں صدی میں معاون تجدید دین ، مصنف ''سبع سنابل'') ٭ حضر ت شیخ حاجی رمضان چشتی ١٢٨٢ھ(لاہور) ٭ حضرت سید عقیل ٭ حضرت مفتی احمد یار خان نعیمی ۔۔۔۔۔۔١٣٩١ھ

٤ رمضان المبارک :

٭ حضرت شاہ عبدالہادی صابری ١١٩٠ھ (امروہہ) ٭ حضرت شاہ نبی بخش رامپوری ٭ حضرت علامہ قاضی محمد حسن محدث خانپوری ۔۔۔۔۔۔١٣٠١ھ ٭ حضرت الحاج بخشی مصطفی علی بنگلوری ١٣٩١ھ (مدینہ منورہ)۔

٥ رمضان المبارک:

٭ سید عبد الہادی جمیل شاہ گرناری کاظمی (پیر پٹھہ)۔۔۔۔۔۔٦٤٢ھ ٭ حضرت شیخ صدر الدین عرف شاہ سیدو٩٣٣ھ (جونپور) ٭ حضرت شیخ محمد داؤد گنگوہی ١٠٩٥ھ ٭ حضرت میران بھیکہ سید محمد سعید ١١٣٥(خلیفہ شاہ ابو المعالی لاہوری)ھ ٭ حضرت شاہ عنایت جیو ذوقوۃ المتین ۔۔۔۔۔۔١١٩٥ھ (بہاولپور) ٭ حضرت سید صبغت اللہ شاہ اول ولد پیر سید محمد راشد روضے دھنی المعروف پیر پگارو اول ١٢٤٦ھ/٨فروری ١٨٣١ئ ٭ علامہ شائستہ گل مردانی قادری (خلیفہ مانکی شریف ١٤٠١ھ / ١٩٨١ء ٭ خواجہ محمد عبد الحکیم قادری نقشبندی شہداد کوٹ لاڑکانہ

٦ رمضان المبارک :

٭ حضرت شیخ داؤد گنگوہی رحیم دل ١٠٨٠ھ (گنگوہ) ٭ حضرت سید عبدالباری اویسی ١٣١٨ھ ٭ علامہ عبدالشکور شیوہ مردانی قادری ۔۔۔۔۔۔١٤٠٣ھ/١٧جون ١٩٨٣ء ٭ حضرت عبداللہ سری سقطی ٭ بابا ابولخیر نولکھ ہزاری شاہ کوٹی ٭ حضرت میاں نثار احمد امیری ۔

٧ رمضان المبارک:

٭ حضرت سیدنا داؤد علیہ السلام ٭ حضرت شیخ عبدالقدوس صوفی ٢٩٩ھ (سوس) ٭ حضرت ابو بکر محمد سلمی مدنی ٣٢٧ھ (مدینہ) ٭ حضرت سید عصمت قادری ٩٩٩ھ ٭ مولانا سید محمد ناصر جلالی تلمیذ فرنگی محل لکھنؤ۔۔۔۔۔۔١٣٨٥ھ/٣١دسمبر ١٩٦٥ئ ٭ حضرت مولانا بدرالدین قادری ٭ حضرت سید ہاشم پیر دست گیر بیجا پوری ٭ حضرت شیخ عثمان بن اسحق ۔۔۔۔۔۔٥٤٥ھ(مکہ)۔

٨ رمضان المبارک:

٭ حضرت شیخ عماد الدین رفیقی ١٣٠٠ھ (کشمیر) ٭ حضرت بیدم شاہ وارثی۔

٩ رمضان المبارک:

٭ حضرت شیخ حبیب عجمی ١٥٦ھ (تابعی۔۔بصرہ) ٭ حضرت ابو علی شفیق بلخی١٩٤ھ (ختلان) ٭ حضرت سیدنا داؤد طائی ١٦٥ھ ٭ قطب الاقطاب شیخ عبدالرشید شمس الحق فیاض دیوان (مصنف مناظرہ رشیدیہ) ١٠٨٣ھ ٭ حضرت مولانا شمس الحق عبدالرشید عرف دیوان رشید جونپوری ١٢٨٣ھ ٭ حضرت سید عبدالعزیز چشتی صابری(سادات و پیرزادگان سہارنپور انبیٹھہ) ١٣٤٤ ھ ٭ حضرت شاہ شرف الدین بو علی قلندر پانی پتی۔

١٠ رمضان المبارک:

٭ اُم المومنین سیدتنا خدیجۃ الکبریٰ رضی اللہ عنہا ٭ حضرت خواجہ نصیر الدین محمود روشن چراغ دہلی ٭ حضرت سید جان محمد حضوری قادری لاہوری ۔۔۔۔۔۔١٠٦٤ھ

١١ رمضان المبارک:

٭ حضرت ابو صالح حمدون قصار ٢٧١ھ (ہرات) ٭ حضرت اسحق بن عمر مدنی ٥٣٠ھ ٭ حضرت منصور ابو القاسم کرمانی کشمیری ٥٦٩ھ ٭ حضرت میاں محمد امین ڈار کشمیری ١٠٩٨ھ ٭ حضرت قطب الدین کمال واحدیت ١١٢١ھ(نارنول) ٭ حضرت محمد حنیف ١٢٥٩ھ ٭ حضرت علامہ عبد الغفور ہمایونی شکارپوری (صاحب فتاوی ہمایونی) ١٣٣٦ھ ٭ شاہ مصباح الحسن پھپھوندوی(خلیفہ شاہ امتیاز احمد خیر آبادی) ١٣٨٤ھ ٭ مادھو لال حسین لاہور ٭ قاضی حمید الدین ناگوری ٭ حضرت سید محمد معصوم قادری

١٢ رمضان المبارک:

٭ حضرت ابو عبداللہ مختار ہروی ٢٧٧ھ (ہرات) ٭ حضرت ابو الخیر حمصی ٣١٠ھ ٭ حضرت شاہ ابو العباس ادریس ٣٤٩ھ ٭ حضرت شاہ قدرت اللہ نیشاپوری٤٥٦ھ ٭ حضرت شیخ شریف عبدالسلام بن شیت طرطوسی ٥٧٢ھ ٭ حضرت شیخ ابو الحسن علی ترحم بغدادی ٥٩٨ھ ٭ حضرت ابو الحسن علی بن محمد٦٥٧ھ ٭ حضرت شیخ نظام فرقی ٦٧٧ھ (فیروز پور) ٭ حضرت شاہ شرف الدین بغدادی ٧١٤ھ ٭ حضرت شاہ شرف الدین بو علی قلندری پانی پتی ٧٢٤ھ ٭ حضرت سید حسن شاہ خندہ روح ٩٠٣ھ ٭ حضرت شیخ سید عصمت قادری ٩٩٩ھ(دہلی) ٭ حضرت شاہ زاہد چشتی ١٠٩٥ھ (صفی پوری) ٭ مولانا معشوق علی جونپوری (استاذ شاہ غلام معین الدین جونپوری) ١٢٦٨ھ ٭ حضرت میاں راج شاہ قادری صاحب(سوندھ شریف گوڑ گانواں) ١٣٠٦ھ ٭ حضرت سیدنا سری سقطی ۔

١٣ رمضان البارک:

٭ حضرت شیخ ابو داؤد مدنی ۔۔۔۔۔۔٤٠٠ھ ٭ حضرت سید یحییٰ بن احمد طوری دہلوی ۔۔۔۔۔۔٦٠٣ھ ٭ حضرت سید محمد سعید مصطفائی صفات پشاوری ۔۔۔۔۔۔١٠٨٤ھ ٭ مولانا شاہ محمد نور اللہ فریدی ملقب زبدۃ الموحدین، بہادر مناظر جنگ (مصنف ہدایۃ الوہابین)١٢٦٧ھ ٭ حضرت مولوی محمد جعفر سندیلی ۔۔۔۔۔۔١٢٦١ھ ٭ حضرت محمد فارق چشتی صابری ۔۔۔۔۔۔ ١٣٤٠ھ(رامپور) ٭ حضرت شیخ محمد امیر کوہاٹی ۔۔۔۔۔۔١٣٨٨ھ ٭ حضرت صوفی قمر الدین قادری نوشاہی ۔۔۔۔۔۔١٣٩٩ھ

١٤ رمضان المبارک:

٭ حضرت ابو محمد نافع ۔۔۔۔۔۔١٢١ھ(مکہ) ٭ حضرت شیخ عاصم بن عبدالصمد ۔۔۔۔۔۔٢٤٧ھ (مکہ) ٭ حضرت شیخ القوام ابو الکایک جنیدن حرّازی ۔۔۔۔۔۔ ٢٩٥ھ (کوہ تبت) ٭ حضرت سید تاج الدین بغدادی ۔۔۔۔۔۔٦٩٩ھ ٭ حضرت ابو الحسن علی خیار عراقی ۔۔۔۔۔۔٦٥٦ھ ٭ حضرت شاہ احمد بن شہاب الدین دہلوی ۔۔۔۔۔۔٧٨٤ھ ٭ حضرت خواجہ مخدوم نصیر الدین خاکی ۔۔۔۔۔۔٨١٧ھ(فتح پور سیکری) ٭ حضرت بہاء الدین باغی جونپوری ۔۔۔۔۔۔٨٣٠ھ ٭ حضرت شیخ حسام الحق عرفان الکوثر مانکپوری ۔۔۔۔۔۔٨٥٣ھ ٭ حضرت بہاؤ الدین پیران شاہ ۔۔۔۔۔۔٩٠٣ھ (جدّہ) ٭ حضرت شیخ محمد اسمٰعیل اودہی ۔۔۔۔۔۔١١١٧ھ (فیض آباد) ٭ علامہ الحاج ابو الشاہ محمد عبدالقادر قادری شہید۔۔۔۔۔۔رمضان ١٣٨٣ھ/ ٣٠ جنوری، ١٩٦٤ء ٭ حضرت سیدنا طیفور بایزید بسطامی ٭ حضرت حافظ عبدالوہاب سچّل سرمست فاروقی ۔۔۔۔۔۔١٢٤٢ھ

١٥ رمضان المبارک:

٭ حضرت شاہ ابو العباس ادریس ۔۔۔۔۔۔٣٤٩ھ ٭ حضرت خواجہ ابو علی بن مطرف اندلسی ۔۔۔۔۔۔٧٠٧ھ ٭ حضرت شاہ محمد گوشہ نشین احمد آبادی ۔۔۔۔۔۔٩٠٠ھ ٭ حضرت میر سید علی قوام سوانی الاصل ۔۔۔۔۔۔٩٥٠ھ ٭ حضرت محمد غوث گوالیاری ۔۔۔۔۔۔٩٧٠ھ ٭ صوفی سید اکرم علی شاہ قادری چاٹگامی ابن سید رحمت علی شاہ قادری ١٣٨٨ھ/٧ستمبر ١٩٦٨ء (کراچی)۔

١٦ رمضان المبارک:

٭ حضرت عمرو صدیقی بصری ۔۔۔۔۔۔٦٩٢ھ ٭ حضرت ابو المظفرترک طوسی۔۔۔۔۔۔٧٩٨ھ ٭ حضرت شاہ اسحق بن شمس الدین قریشی خراسانی ۔۔۔۔۔۔ ٨٥٦ھ ٭ حضرت سید عقیل کوکانی ۔۔۔۔۔۔٨٤٢ھ ٭ حضرت شاہ عبداللہ بن احمد ۔۔۔۔۔۔٨٩٧ھ (بخارا) ٭ حضرت شاہ احمد محی الخلیقۃ بغدادی ۔۔۔۔۔۔٩٩٩ھ ٭ حضرت خواجہ شمس الدین محمد رومی ۔۔۔۔۔۔٩٠٤ھ (ہرات) ٭ حضرت سیدشاہ حسین خدانما ۔۔۔۔۔۔٩١٥ھ (برہان پور) ٭ حضرت شیخ ابی الصلاح علی بغدادی ۔۔۔۔۔۔١٠٥٧ھ ٭ حضرت سید آل محمد مارہروی۔۔۔۔۔۔١١٦٤ھ ٭ حضرت حافظ موسیٰ چشتی ۔۔۔۔۔۔١٢٤٧ھ ( مانکپور) ٭ حضرت مناظر اہلسنت شاہ امانت اللہ فصیحی۔۔۔۔۔۔١٣١٥ھ (غازی پور)

١٧ رمضان المبارک:

٭ شہدائے بدر ٭ سیدہ رقیہ بنتِ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ورضی اللہ عنہا ۔۔۔۔۔۔٢ ھ ٭ ام المومنین سیدہ عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہا ۔۔۔۔۔۔٦٢ھ ٭ حضرت شیخ محمدطائی ۔۔۔۔۔۔ ٣٠٠ ھ (حلہ) ٭ حضرت ملا حامد قادری ۔۔۔۔۔۔١٠٤٤ھ (لاہوری) ٭ حضرت سید اخلاص احمد پھپھوندوی بدایونی ۔۔۔۔۔۔١٣٣٨ھ ٭ حضرت خواجہ قمر الدین سیالوی۔۔۔۔۔۔١٤٠١ھ (رہنما تحریک پاکستان)

۱۸ رمضان المبارک:

٭ حضرت عبداللہ محض مدنی بن حسن مثنی بن امام حسن مجتبیٰ ۔۔۔۔۔۔١٣٧ھ ٭ حضرت یحییٰ بن معاذ رازی نیشاپوری ۔۔۔۔۔۔٢٥٨ھ ٭ حضرت خواجہ نصیر الدین محمود اودہی روشن چراغ۔۔۔۔۔۔ ٧٥٧ھ(دہلی) ٭ حضرت شاہ بہاؤالدین (قلعہ تمنی)۔۔۔۔۔۔٨٠٢ھ ٭ حضرت سید عابد سنامی دہلوی ۔۔۔۔۔۔١١٦٠ھ ٭ حضرت مولانا محمد عابد لاہوری ۔۔۔۔۔۔١١٦٠ھ ٭ حضرت شاہ ابو صالح پیر محمد پناہ چشتی نظامی ۔۔۔۔۔۔١١٩٣ھ (سیون) ٭ حضرت حافظ شاہ محمد عبداللہ قدوسی ۔۔۔۔۔۔١٢٥٤ھ (جے پور) ٭ مناظر اسلام قاطع شدھی تحریک حضرت علامہ غلام قطب الدین برہمچاری (ماہر علوم اساطیریات، خلیفہ قطب المشائخ شاہ علی حسین اشرفی میاں ١٣٥٠ھ ٭ حضرت مولانا ریحان رضا خاں رحمانی میاں ٭ حضرت یحییٰ بن معاویہ ٭ پیر نوازش علی چشتی صابری ۔۔۔۔۔۔١٣٦٧ھ

١٩ رمضان المبارک:

٭ حضرت سید عماد الدین ابو الصمصام حسینی ۔۔۔۔۔۔٥٤٣ھ (صمصام) ٭ ابو شامّہ عبدالرحمن بن اسماعیل المقدسی (معروف عرب مؤرخ ) ٦٦٥ھ ٭ حضرت شیخ نجیب الدین متوکل دہلوی ۔۔۔۔۔۔٦٧١ھ ٭ حضرت شاہ قطب المزار بینا دل ۔۔۔۔۔۔ ٦٧٧ھ (مرزاپور) ٭ حضرت شاہ عمر کابلی ۔۔۔۔۔۔١٢٠٣ھ ٭ حضرت میاں غلام حسین ۔۔۔۔۔۔١٢٥٩ ھ(کانپور) ٭ حضرت علامہ شیخ محمد حسن امروہوی ۔۔۔۔۔۔١٣٢٣ھ(مؤلف تفسیر غایت البرہان) ٭ شیخ طریقت سائیں قمر الدین قادری نوشاہی لاہوری ۔۔۔۔۔۔ ١٣٨٩ھ / ٣٠نومبر١٩٤٩ئ۔

٢٠ رمضان المبارک :

٭ حضرت ابو بکر طوسی قلندری ٭ حضرت شیخ قطب الدین چشتی جونپوری ۔۔۔۔۔۔١٠٧٦ھ ٭ حضرت شاہ رکن الدین ابو الحسن اول ۔۔۔۔۔۔١١٨٣ھ ٭ شاہ حبیب الرحمن کانپوری ۔۔۔۔۔۔١٣٢٦ھ۔

٢١ رمضان المبارک:

٭ حضرت امیر المؤمنین سیدنا ابو تراب علی مرتضی کرم اللہ وجہہ الکریم ۔۔۔۔۔۔٤٠ھ (نجف شریف) ٭ حضرت سیدی عبداللہ بن مبارک ۔۔۔۔۔۔١٨١ھ ٭ حضرت شیخ ابو عبداللہ حسین جوہری ۔۔۔۔۔۔٣٢٢ (مکہ) ٭ حضرت شیخ علی بازیاری ۔۔۔۔۔۔٣٨٩ھ ٭ حضرت ابو العباس خراسانی ۔۔۔۔۔۔٤٦٤ھ ٭ حضرت خواجہ عارف پارسائے نجد ۔۔۔۔۔۔٧١٥ھ ٭ حضرت امام الدین ابدال مثالی ۔۔۔۔۔۔٧٥٤ھ(طوسی) ٭ حضرت شاہ داؤد قریشی ۔۔۔۔۔۔٨١٩ھ (کوہ قرشی) ٭ پیر سید علی گوہر شاہ ۔۔۔۔۔۔٨٢٥ھ(خاندان سادات اُچ شریف) ٭ حضرت سید مکارم میرٹھی ۔۔۔۔۔۔٨٨٥ھ ٭ حضرت غیاث الدین گیلانی لاہوری ۔۔۔۔۔۔٩٩٠ھ ٭ حضرت شاہ مرتضیٰ آنند ۔۔۔۔۔۔١٠٣٧ھ ٭ حضرت حجۃ اللہ غیب اللسان دہلوی ۔۔۔۔۔۔١١٧٦ھ ٭ حضرت شاہ عبدالرحیم چشتی صابری ۔۔۔۔۔۔١٢٤٦ھ (ادّہ) ٭ حضرت امام علی موسیٰ رضا ٭ حضرت شاہ علی حسین باقی(پٹنہ) ٭ علامہ پیر محمد ہاشم جان سرہندی (اولاد مجدد الف ثانی ، رہنما تحریک پاکستان)۔۔۔۔۔۔١٣٩٥ھ

٢٢ رمضان المبارک:

٭ امام ابو عبد اللہ محمد ابن ماجہ قزوینی ربعی۔۔۔۔۔۔٢٧٣ھ ٭ حضرت شیخ ابو القاسم محمد سراجی ۔۔۔۔۔۔٣٩٩ھ (حلّہ) ٭ حضرت شیخ ابو الحسن علی بن محمود زوری ۔۔۔۔۔۔٤٥١ھ (کرشک) ٭ حضرت شاہ عبداللہ صفات الاکبر ۔۔۔۔۔۔٩٥٥ھ ٭ حضرت بندگی شیخ فخر الدین فخر عالم سہروردی جونپوری ۔۔۔۔۔۔٩٩٥ھ ٭ حضرت شیخ فصیح الدین لاہوری ۔۔۔۔۔۔١٠١٩ھ ٭ حضرت علامہ شیخ محمد حسین فقیر حنفی شاذلی دہلوی ۔۔۔۔۔۔١٣٢٤ھ ٭ حضرت مولانا حسن رضا بریلوی ۔۔۔۔۔۔١٣٢٦ھ(امام السخن، برادرِ اعلیٰ حضرت علیہ الرحمہ) ٭ حضرت مو لوی پیر محمد ہاشم جان سرہندی ثم ٹھٹھوی۔۔۔۔۔۔١٣٩٥ھ ٭ حضرت ولایت حکیم امر الحسن سہارن پوری

٢٤ رمضان المبارک:

٭ حضرت ابو مصعب احمد زہری ۔۔۔۔۔۔٢٤٢ھ ٭ حضرت سیدی یحییٰ زاہد بغدادی ۔۔۔۔۔۔٤٣٠ھ ۔ ٭ مفتی سعد اللہ رامپوری ۔۔۔۔۔۔١٢٩٤ھ۔

٢٥ رمضان المبارک:

٭ حضرت سیدتنا ام کلثوم بنت رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم وَ رضی اللہ عنہا ۔۔۔۔۔۔٩ھ ٭ حضرت سلطان الدین علاؤ الدولہ سمنانی ۔۔۔۔۔۔٧٦٦ھ ٭ حضرت قاضی سید عبد الملک شاہ اجمل (خلیفہ مخدوم جہانیاں جہاں گشت)۔۔۔۔۔۔٨٦٤ھ ٭ شیر بیشہئ سنّت مولانا ہدایت رسول رامپوری ۔۔۔۔۔۔١٣٣٠ھ (جمعۃ الوداع ) ٭ غزالی دوراں حضرت علامہ سید احمد سعید شاہ کاظمی۔

٢٦ رمضان المبارک:

٭ حضرت خواجہ محمد حسن انداقی ۔۔۔۔۔۔٥٥٢ھ (بخارا) ٭ حضرت شیخ قلندر شاہ قریشی حارثی ہنکاری لاہوری ۔۔۔۔۔۔١٢٤٤ھ ٭ حضرت مولانا آل احمد پھلواری ١٢٩٥ھ (بقیع) ٭ علامہ لمعان الحق انصاری لکھنوی١٣٢٥ھ ٭ حضرت مولانا سید ایوب علی رضوی قادری (تربیت یافتہ بارگاہِ اعلیٰ حضرت)١٣٩٠ھ، جمعۃ الوداع/٦نورمبر، ١٩٧٠ئ۔

٢٧ رمضان المبارک:

٭ حضرت شیخ ابو العطا نفیس عجمی ٢٢٧ھ (کوہِ عطا قیس) ٭ حضرت سیدی ابو عبداللہ محمد ابن ماجہ قزوینی (صاحبِ سنن) ٢٧٣ھ ٭ حضرت شیخ حماد دیاس بن مسلم ٥٢٥ھ (شام) ٭ حضرت خواجہ صدرالدین محمد روز بہاں بصری ٦١١ھ ٭ حضرت شمس الدین محمد حنبلی٧١١ھ (مرشد آباد) ٭ حضرت دیوان محمد نور الدین اجودہنی ٨٢٤ھ ٭ حضرت محمد سلیم چشتی صابری لاہوری ١٠٣٠ھ ٭ حضرت خواجہ ابولعلاسر ہندی ١١٣٩ھ ٭ حضرت ابو الشرف شاہ پیر محمد اشرف سلونی وجدانی ولایت ١١٦٧ھ (سیلون) ٭ حضرت مولانا عبدالغنی بدایونی (خلیفہ شاہ آل احمد اچھے میاں)١٢٠٩ھ ٭ حضرت علامہ شاہ قیام الدین اصدق قادری قمیصی، چشتی، فخری١٣٠١ھ ٭ حضرت مخدوم امین محمد بن مخدوم محمد زماں ثالث ہالائی۔۔۔۔۔۔١٣٠٣ھ ٭ حضرت محمد اسماعیل کرمانوالہ١٣٨٥ھ ٭ حضرت خواجہ عزیز۔

۲۸ رمضان المبارک:

٭ حضرت شیخ محمود کانپوری ۔۔۔۔۔۔٧٠٣ھ ٭ حضرت خواجہ غلام رسول ٭ مفتی زمن علامہ سید ریاض الحسن جیلانی (حیدرآباد، مصنف ریاض الفتاویٰ)۔۔۔۔۔۔١٣٨٨ھ

٢٩ رمضان المبارک:

٭ حضرت شیخ الہند بہاؤالدین سلیم چشتی ۔۔۔۔۔۔٩٧٩ھ (فتح پور سیکری) ٭ حضرت شاہ ہدایت اللہ سرست ۔۔۔۔۔۔٨٨٧ھ (سیتا پور) ٭ خواجہ خدا بخش نقشبندی ۔۔۔۔۔۔١٣٥٩ھ ٭ حضرت علامہ سید قمر الہدٰی مونگیری١٣٨٥ھ ٭ حضرت شیخ جمال الاولیاء

٣٠ رمضان المبارک:

٭ حضرت ابو عثمان سعید بن منصور مروزی ۔۔۔۔۔۔٢٢٩ھ (مکہ) ٭ حضرت شیخ جمال اولیا ۔۔۔۔۔۔١٠٤٧ھ (کوڑہ)

۔۔۔۔۔۔ رضی اللہ تعالیٰ عنہم و رحمۃ اللہ تعالیٰ علیہم اجمعین ۔۔۔۔۔۔

https://fbcdn-sphotos-a.akamaihd.net/hphotos-ak-ash3/6252_126117710333_524555_n.jpg